صوبا ئی حکومت عو ام کی تر قی و خو شحالی کیلئے کو شا ں

صو بائی وز یر دا خلہ میر ضیا ءاللہ لا نگو کا کہنا ہے کہ صو بائی حکومت عو ام کی تر قی و خو شحالی کیلئے کو شا ں ہے اس طرح بے رو ز گا ری کے خا تمے کیلئے رو ز گا ر کے نئے مو اقعے پید ا کئے جا رہے ہیں ہز ا رو ں نو جو انو ں کو پہلے ہی رو ز گا ر فر اہم کیا جا چکا ہے جبکہ وز یر اعلیٰ بلوچستان جا م کما ل خان عا لیا نی بلوچستا ن بھر میں مو ثر ترقیا تی منصو بہ بند ی کو یقینی بنا تے ہوئے یکسا ں تر قی کو یقینی بنا رہے ہیں بلوچستان کی با شعو ر عو ام جا ن چکی ہے کہ حکومت عو ام کا حق اداکر تے ہوئے احسن اقد اما ت اٹھا رہی ہے بلوچستان میں آز ما ئے ہوئے سیا سی جا دو گر پھر سے اکٹھے ہو گئے ہیں اور عو ام کو گمر اہ اور غلط فہمی پید ا کر نے کی نا کا م کو شش کر رہے ہیں۔
صو بائی حکومت کا عو ام کی تر قی و خو شحالی کیلئے کو شا ں ہونا بلا شبہ قا بل تعر یف عمل ہے کیو نکہ بلوچستان کے عو ام کو وزیر اعلیٰ بلوچستان جا م کما ل خان عا لیا نی کی قیا دت میں قا ئم صو بائی حکومت سے کا فی امید یں وا بستہ ہیں جنہو ں نے بلوچستان میں تر قی منصو بے شر وع کر رکھے ہیں خصو صاً صو بائی دا ر الحکومت کوئٹہ میں نو اں کلی با ئی پا س سمیت دیگر اہم منصو بو ں پر کا م تیز ی سے جا ری ہے اس سے پہلے شہر کی اہم شا ہر اہ جو ائنٹ رو ڈ کو ڈبل کیا گیا اور اس کے سا تھ کوئلہ پھا ٹک رو ڈ کی تو سیع بھی شا مل ہے ایسے اقد امات تو بلا شبہ اچھے اقد اما ت ہیں ان کا تسلسل ہونا چا ہیئے اس کے سا تھ سا تھ صو بائی دا ر الحکومت کوئٹہ میں ٹر یفک جا م ،پینے کے پا نی کی قلت ،گیس پر یشر میں کمی،بجلی کی لو ڈ شیڈ نگ ،اند رو ن شہر سٹر کو ں کا تنگ ہونا ،لو کل بسو ں کا مستقل اڈہ نہ ہونے کی سہو لتو ں کے فقد ان جیسے دیگر اہم مسائل ہیں جن کا حل کرنا بہت ہی ضروری ہے۔
جہا ں تک بیر وز گا ری کے خا تمے کیلئے رو ز گا ر کے نئے مو اقع پید ا کرنے کی با ت ہے تو اس سلسلے میں اس با ت کا ذکر کرنا از حد ضروری ہے کہ اس وقت صو بے میں بیر و ز گا ری بہت ہی زیا دہ ہے حا لا نکہ صوبائی محکمو ں میں بڑی تعد اد میں آسا میاں ایک عر صے سے خا لی پڑ ی ہو ئی ہیں لیکن ان پر تقر ریا ں نہیں ہو رہیں اس کی وجو ہا ت جو بھی ہیں مو جو دہ حکومت کو اس پر ضرور کا م کر نا چا ہیئے کیو نکہ ایسا کرنے سے ہی رو ز گا ر کے نئے مو اقع پید ا ہو نگے اس کے سا تھ سا تھ صو بے میں پر ا ئیو یٹ شعبو ں کو سر ما یہ کا ری کرنے کی تر غیب دینی چا ہیئے تا کہ وہ یہا ں سر ما یہ کا ری کریں تا کہ اس سے رو ز گا ر کے مز ید مو اقع پید ا ہو سکیں کیو نکہ ہما ری بد قسمتی یہ ہے کہ ہما رے صو بے میں پر ا ئیو یٹ سیکٹر نہیں ہیں اس لیے زیا دہ تر ملا ز متو ں کا انحصا ر حکومت پر ہے لیکن وہاں بھر تیا ں نہیں ہو رہیں ۔
امید ہے کہ وزیر اعلیٰ بلوچستان جا م کما ل خان عا لیا نی جوایک سینئر پا ر لیمنٹیئر اور عو ام کے مسائل سے بخو بی آگا ہ اور ان کا حل کرنے کی بھر پو ر صلا حیت رکھتے ہیں عوام کے مذکو رہ مسائل حل کر انے کے لیے متعلقہ حکام کو ہد ا یا ت جا ری کریں گے اگر وہ عو ام کے یہ دیر ینہ مسائل حل کر وانے میں کا میا ب ہوگئے تو یہ ان کا تا ریخی اقد ام ہو گا جو صوبے کی تا ریخ میں سنہر ے حر و ف سے لکھا جا ئے گا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*