اسرائیل کا فلسطین کی 30فیصدزرخیز زمین ہڑپ کرنےکا آغاز

phalestine

تل ابیب(م ڈ ) اسرائیل کی جانب سے فلسطین کی 30 فیصد زرخیز زمین ہڑپ کرنے کا آغاز ہونے کا اعلان کیا گیا ہے۔امریکی صدر کی حمایت کے سبب اسرائیل اب تک مغربی کنارے پر قبضے کے منصوبے سے دستبردار نہیں ہوا ہے۔فلسطینی میڈیارپورٹس کے مطابق مغرب کے تعاون سے فلسطینی سرزمین چھینے جانے کو جغرافیے کی نگاہ سے دیکھیں تو 1948 سے 1967 کا قبضہ اور اسکے بعد نہایت ہوشیاری سے جنگ کے بغیر لینڈ مافیا جیسا اسرائیلی کردار آشکار ہوئے۔1967 کے بعد میں اسرائیل خوشنما یہودی آبادکاری کی اصطلاح کی آڑ میں فلسطینی علاقوں پر ہلکے ہلکے قبضے کرتا رہا۔فلسطینیوں کے گھر توڑے جاتے رہے اور دنیا خاموش رہی۔ اب بچے کچے مغربی کنارے کا یہ حال ہوگیا ہے کہ فلسطینی علاقے پیلے رنگ میں دکھائی دے رہے ہیں۔فلسطینیوں کو ایک دوسرے سے جدا علاقوں میں اس قدر محدود کرنے کے بعد اسرائیل 30 فیصد زرخیز خطے پر قبضے کا منصوبہ بنا چکا ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*