بلوچستا ن کے حقو ق پر کوئی سمجھو تہ نہیں کرینگے

گذشتہ رو ز ایو ا ن با لا (سینیٹ ) میں بلوچستا ن عوامی پا رٹی کے مر کزی جنر ل سیکر ٹری سینیٹر منظو ر احمد خا ن کا کڑ نے اظہا ر خیا ل کر تے ہوئے وفا ق پر وا ضح کیا کہ ہم بلوچستا ن کے حقو ق پر کسی صو رت سمجھو تہ نہیں کر یں گے لہذ ا وفا ق بلوچستا ن کے مسا ئل کے حل کیلئے اقد اما ت کرے اگر وفا ق نے اپنا مو جو د ہ رو یہ تبد یل کر کے اس سلسلے میںلچک کا مظا ہر ہ نہ کیا تو ملک کے لیے بہت سی مشکلا ت سا منے آئیں گی انہو ں نے اپنے خطا ب میں افسو س کا اظہا ر کر تے ہوئے وفا ق سے پو چھا کہ ملک کے 44 فیصد حصے کو 10 ار ب رو پے سے تر قی دینا ممکن ہے؟ حکومت کی ایک اتحا دی پا رٹی بی این پی چلی گئی ہے اب حکومت دیگر اتحا د یو ں کو سا تھ لے کر چلے ما ضی میں جو کچھ ہو ا سو ہو ا لیکن مو جو دہ حکومت اپنے دو سا ل کی کا ر کر د گی بتا ئے انہو ں نے مز ید بتا یا کہ بجٹ میں غر یب طبقہ نظر اند از کیا گیا ا ن کی تنخو اہیں بڑ ھیں اور نہ ہی پنشن میں اضا فہ کیا گیا جس کے باعث لو گ معا شی طو ر پر پر یشا ن ہیں احسا س پر و گر ام کو اگر بجٹ میں شا مل کیا جا تا تو اس سے بھی لو گو ں کو مد د ملتی۔
یہ با ت حقیقت پر مبنی ہے کہ بلوچستا ن جو ملک کے رقبے کے لحا ظ سے سب سے بڑ ا صو بہ ہے اس کے سا تھ سا تھ یہ معد نیا ت سے بھی ما لا ما ل ہے لیکن ا س کے با وجو د اس کو مسلسل نظر اند از کئے رکھا اور اس میں رہنے والو ں کیخلا ف بہت بڑ ی زیا دتی کے متر ادف اقد ام ہے بی اے پی کے مر کز ی سیکر ٹر ی جنر ل سینیٹر منظو ر احمد خا ن کا کڑ نے سینیٹ میں اس حو الے سے جو تقر یر کی ہے وہ قا بل تعر یف ہے انہو ں نے جو مو قف پیش کیا وہ بلوچستا ن کے عو ام کی آوا ز ہے جس کو ہمیشہ وفا ق دبا تا چلا آر ہا ہے وفا ق نے بلوچستا ن کے مسا ئل کو کبھی سنجیدہ نہیں لیا بلکہ وہ اس کو ہمیشہ نظر اند از کیا گیا بلکہ اس کو مذ اق سمجھ کر اڑ ا تے تھے بلوچستا ن کے نیشنل پا ر ٹی کے سر بر اہ اختر جا ن مینگل نے گذشتہ رو ز قو می اسمبلی میں اپنے خطا ب کے دو را ن وفا ق کے رو ئیے کے با ر ے میںکہا ہے کہ وہ اسمبلی میں طنز اً کہتے ہیں ©”اے بلوچستا ن دا مسئلہ کی ہے“جس سے یہ نتیجہ اخذ کیا جا سکتا ہے کہ وہ بلوچستا ن کو کوئی اہمیت نہیں دیتے جو بلا شبہ قا بل مذمت اقد ام ہے ۔
بلوچستان کے سا تھ وفا ق میں ہر معا ملے میں زیا د تی کی جا تی ہے اس کے لو گو ں کو ا ن کا 6 فیصد مختص کوٹہ نہیں دیا جا رہا اس کی را ٹیلٹی ادا نہیں کی جا رہی اور اس کے سا تھ سا تھ وفا قی بجٹ میں جو فنڈ رکھا جا تا ہے وہ او نٹ کے منہ میں ز یر ہ کے متر ادف ہے ہونا تو یہ چا ہیئے تھا کہ اس کو زیا دہ فنڈز دیئے جائیں لیکن لگتایہ ہے کہ ا ن کو کچھ نظر نہیں نظر آ رہا اسی وجہ سے یہ صو بہ پسما ند گی کا شکا ر ہے اور ملک کے دیگر تر قی یا فتہ صو بو ں سے پیچھے ہے سینیٹر منظو ر احمد خا ن کا کڑ نے اپنے مذ کو رہ بیا ن میں وفا ق پر وا ضح کر دیا ہے کہ ہم بلوچستا ن کے حقو ق پر کسی صو رت سمجھو تہ نہیں کریں گے ۔
اس لیے یہا ں ضرورت اس امر کی ہے کہ وفا ق اس اہم مسئلے کو سنجید ہ لے اور اس پر طنز اور مذ ا ق کرنے کی بجا ئے اس کے حل کرنے کیلئے اقد اما ت کر ے جس کا اس نے با ر ہا مر تبہ وعد ہ بھی کیا ہے اگر وہ اپنا یہ وعد ہ پو ر ا کرنے میںنا کا م ہو تی ہے تو پھر اس میں اور اس سے پہلے کی حکومتوں میں کوئی فر ق نہیں رہ جا تا کیو نکہ وہ بھی صر ف وعد ے اور تسلیا ںہی دیتے تھے ان پر عملی طو ر پر اقد اما ت نہیں کر تے تھے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*