ٹڈی دل نے باغات اور چرا گاہوں کو شدید نقصان پہنچایا ہے،جام کمال

Chief Minister Balochistan, Mir Jam Kamal

کوئٹہ(خ ن) وزیراعظم پاکستان عمران خان کی زیر صدارت منعقدہ نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی NCOC) کے اجلاس میں وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے بذریعہ ویڈیو لنک شرکت کی، اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے کہا کہ صوبائی حکومت کورونا وائرس کے پھیلاو¿ کو روکنے کے ساتھ ساتھ صحت کے نظام کی بہتری اور معاشی و کاروباری سرگرمیوں کو برقرار رکھنے کے لئے بھی اقدامات کر رہی ہے، اور آئندہ مالی سال کے بجٹ میں ان شعبوں کو اولین ترجیح حاصل رہے گی، وزیراعلیٰ نے کہا کہ بلوچستان میں نجی شعبہ میں سپیشلائیزڈ ہسپتال نہ ہونے کے باعث عوام کا انحصار سرکاری ہسپتالوں پر ہے اور کورونا وائرس کی ٹیسنگ بھی صرف سرکاری لیبارٹریوں میں ہو رہی ہے، اس امر کے پیش نظر ٹیسٹنگ صلاحیت میں اضافہ کیا گیا ہے اس وقت صوبے میں 5 لیبارٹریاں ہیں جہاں روزانہ 1400 سے1500 ٹیسٹ کئے جا رہے ہیں اور خضدار میں بھی ٹیسٹنگ کا آغاز کیا گیا ہے، وزیراعلیٰ نے کہا کہ اب تک صوبے میں 40000ٹیسٹ کئے گئے، بلوچستان میں ایکٹیو کیسز کی تعداد 5600 ہے جن میں 80 فیصد تعداد کوئٹہ میں ہے جبکہ اموات کی تعداد 93 ہے، وزیراعلیٰ نے ایران اور افغانستان سے منسلک سرحدی علاقوں میں کورنا وائرس مینجمنٹ اور مزید وینٹیلیٹرز اور آئی سی یو بیڈز کے لئے وفاقی حکومت کے تعاون میں وسعت کی ضرورت پر زور دیا، ٹڈی دل کے مسئلے کے حوالے سے وزیراعلیٰ نے کہا کہ بلوچستان میں زراعت بہت زیادہ وسیع اراضی پر نہیں تاہم مالداری اور زراعت کے شعبوں سے بڑی آبادی کا روزگار منسلک ہے، ٹڈی دل نے باغات اور چراہ گاہوں کو شدید نقصان پہنچایا ہے، وزیراعلیٰ نے ٹڈی دل کے خاتمے کے لئے بھی این ڈی ایم اے کی معاونت کی ضرورت پر زور دیا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*