وفاقی کابینہ کا 9گھنٹے طویل اجلاس ،وزیراعظم نے 26وزارتوں کی کارکردگی کا جائزہ لیا

اسلام آباد(نیوز ایجنسی) وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس منعقد ہوا جو تقریبا 9 گھنٹوں تک جاری رہا اور اس دوران وزیراعظم نے وزرا کی کارکردگی کا جائزہ لیا۔ پیرکوترجمان وزیراعظم ہاﺅس کے مطابق وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس 9 گھنٹے جاری رہا، وزیراعظم عمران خان نے وزرا کی کارکردگی کا جائزہ لیا، نو گھنٹے طویل نشست میں 26 وزارتوں کی کارکردگی کا جائزہ لیا گیا۔ترجمان وزیراعظم آفس کے مطابق باقی وزارتوں کا جائزہ لینے کیلئے تاریخ کا اعلان بعد میں کیا جائے گا جبکہ ہر تین ماہ بعد وزارتوں کی کارکردگی کا باقاعدگی سے جائزہ لینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔وزیراعظم عمران خان نے حکومت کے 100 روز مکمل ہونے کے بعد وفاقی وزرا، وزرائے مملکت اور مشیران کی کارکردگی کا جائزہ لینے کے لئے کابینہ کا خصوصی اجلاس طلب کیا تھا جو وزیراعظم ہاﺅس میں 9گھنٹے جاری رہا۔ذرائع کے مطابق اجلاس میں وفاقی وزارتوں اور ڈویژن نے اپنے اداروں کی کارکردگی کی تازہ رپورٹ کا جائزہ پیش کیا جب کہ وزراتوں، ڈویژنز اور مشیروں کے متعلقہ محکموں کی جانب سے تین ماہ کی کارکردگی پر بریفنگ دی گئی۔اس دوران گزشتہ تین ماہ میں کیے گئے سروس ڈیلیوری اور کفایت شعاری اقدامات سمیت وفاقی وزارتوں اور ادارہ جاتی پرفارمنس بہتر بنانےکی مختلف تجاویز کا جائزہ لیا گیا۔ترجمان وزیراعظم ہاﺅس کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نے ہر تین ماہ بعد وفاقی کابینہ اور اداروں کی کارکردگی پر جائزہ اجلاس بلانے کا فیصلہ کیا ہے جب کہ تمام وزارتوں کو عمل درآمد کیلئے مخصوص اسٹریٹیجک پلان سونپنے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے۔ترجمان کے مطابق تمام وزارتوں کی کارکردگی کا جائزہ اجلاس ہر 3 ماہ بعد بلانے سے درست نشاندہی ممکن ہوگی، اس کا مقصد آئندہ 5 برسوں میں وزارتوں کی کارکردگی کو زیادہ سے زیادہ بہتر کرنا اور عوام کا معیار زندگی بہتر بنانا ہے۔اس کے علاوہ اجلاس میں یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ ہر وزارت عملدرآمد کا 5 سالہ مخصوص اسٹریٹجک پلان بنائے گی، تین ماہ کی کارکردگی کا جائزہ لینے کے بعد جہاں ضرورت پیش آئے گی وہاں اصلاح کی جائے گی، اس طرح حکومت کی مجموعی کارکردگی کو بہتر بنایا جائے گا۔ذرائع نے بتایا کہ اجلاس کے دوران 26سے زائد وزارتوں کی جانب سے رپورٹ پیش کی گئی جس پر وزیراعظم نے متعلقہ وزرا اور وزارتوں کے حکام سے 5 سے 7 منٹ تک سوالات بھی کیے۔ذرائع کا بتانا ہے کہ وزرا کی کارکردگی کا جائزہ لیے جانے کے بعد جن وزرا کی کارکردگی تسلی بخش نہ ہوئی وزیراعظم کی جانب سے ان کے قلمدان بھی تبدیل کیے جاسکتے ہیں۔واضح رہے کہ گزشتہ روز وزیر ریلوے شیخ رشید نے دعوی کیا تھا کہ وزیراعظم نے انہیں وزارتِ اطلاعات میں آنے کی پیشکش کی ہے جب کہ شیخ رشید کے بیان پر فواد چوہدری نے ان کے لیے اپنی وزارت چھوڑنے کی بھی پیشکش کی تھی تاہم بعد میں شیخ رشید نے اپنے بیان پر یوٹرن لے لیا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*