بلوچستان سے قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی حلقہ بندیوں پر محفوظ فیصلے سنا دئیے گئے

کوئٹہ (این این آئی)الیکشن کمیشن آف پا کستان نے بلوچستان سے قومی اور صوبائی اسمبلیوں کی حلقہ بندیوں پر محفوظ فےصلے سنا دئےے ،صوبائی اور قومی اسمبلی کے حلقوں میں تبدیلی کے بعد حلقوں کے نمبر اور ناموں کی تبدیلی کردی گئی، تفصےلات کے مطابق جمعرات کو الیکشن کمیشن آف پا کستان نے بلوچستان میںہونے والی نئی حلقہ بندیوں کے خلاف دائر اعتراضات پر فیصلہ سناتے ہوئے ، قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 260میں ضلع نصیر آباد ،کچی ،جھل مگسی کو شامل کردیا جبکہ چاغی، نوشکی ،خاران پر مشتمل حلقے کو الگ کردیا، اسی طرح قومی اسمبلی میں ضلع مستونگ ،قلات ،شہید سکندر آباد پر مشتمل ایک حلقہ بنا دیاگیا، جبکہ کوئٹہ کے پٹوار سرکل درانی iiاور درانی iiiکو این اے 266سے نکال کر این اے 267میں شامل کردیا، صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی بی 1شیرانی اور پی بی 4مو سی خیل جو کہ دو الگ الگ حلقے تھے کو ایک کردیا گیا جبکہ واشک اور خاران پر مشتمل دو الگ الگ حلقے تشکیل دے دئےے گئے ، الیکشن کمیشن نے کھٹان اور سب تحصیل سنی کو جھل مگسی جبکہ مچھ اور ڈھاڈر کو دشت میں ضم کر کے مستونگ کے حلقے میں شامل کردیا ،جبکہ پی بی 28 کوئٹہ 4 میں چارج 7,8کو مکمل طور پر شامل کردیا جبکہ چارج 9کے سرکل 1,2اور 8،اور چارج 2کے سرکل 1 کو بھی پی بی 28میں شامل کردیا،کمیشن نے حلقہ پی بی 29کوئٹہ میں چارج 1کے سرکل 1اور چارج 2کے سرکل 1کے علاوہ سرکل 3,4,5,6,7 اور 9کو حلقے میں شامل کردیا جبکہ پٹوار سرکل درانی iiاور درانی iiiکو حلقے سے نکا ل کر حلقہ پی بی 33میں شامل کردیا، اس کے علاوہ پی بی 30میں سرکل 1کوئٹہ کنٹو نمنٹ کت چارج نمبر 10,11,12کو ضم کردیا،الیکشن کمیشن نے صوبائی اور قومی اسمبلی کے حلقوں میں تبدیلی کے بعد حلقوں کے نمبر اور ناموں کی تبدیلی کردی

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*