کوئٹہ میں کینسر ہسپتا ل کا قیام

وزیر اعلیٰ بلوچستان جا م کما ل خان نے گذشتہ رو ز بلوچستان صو بائی اسمبلی میں ارکان اسمبلی کی انڈ وومنٹ فنڈ سے متعلق اعتر ا ضا ت کا جو اب دیتے ہوئے کہا ہے کہ کوئٹہ کے شیخ زید ہسپتا ل میں کینسر کا ہسپتا ل بن رہا ہے جو جلد مکمل ہو جائے گا آئند ہ ما لی سا ل کے بجٹ میں بلوچستان انڈ و ومنٹ پر و گر ام کی رقم کو3 ار ب روپے سے بڑھا کر 5 ار ب روپے کیا جائے گا انہوں نے وا ضح کیا کہ انڈو ومنٹ پرو گر ام کی افا دیت ان 1500 مر یضو ں سے پو چھی جائے جن کی جانیں اس پر و گر ام میں دی گئی خطیر رقم دینے سے بچا ئی گئیں اس پر و گر ام میں کسی قسم کی اقر با ءپر وری نہیں ہے ایک رکن کا یہ کہنا کہ پر و گر ام بند کر دیا جائے یہ نا منا سب ہے۔
صو بائی دا ر الحکومت کوئٹہ میں شیخ زید ہسپتا ل میں کینسر کا ہسپتا ل کا بننا قا بل تعر یف اقد ام ہے کیو نکہ اس وقت کوئٹہ میں کینسر ہسپتا ل نہیں ہے جس کے باعث یہاں کی عو ام کو دوسر و ں شہر و ں میں جا کر اپنا علا ج کر وانا پڑ تا ہے کینسر کی بیما ری کا علا ج بہت ہی مہنگا ہے اس کے سا تھ سا تھ جب عو ام دوسر ے شہر جا تے ہیں تو مز ید سفر ی اخر اجا ت بھی بر داشت کرنے پڑ تے ہیں اس طرح ان پر بڑ امعا شی بو جھ پڑ تا ہے اب کوئٹہ میں کینسر ہسپتا ل کے قیام سے عو ام کی مشکلا ت کم ہو جائیں گی اس لیے حکومت کو اس کی تعمیر کونہ صر ف جلد از جلد مکمل کرنا چا ہیئے بلکہ اس میں عو ام کو علاج کی سہولتیں بھی فر اہم کرنی چاہئیں کیو نکہ جیسا کہ اوپر درج کیا جا چکا ہے کہ کینسر کا علاج بہت ہی مہنگا ہے جو ایک غر یب آدمی کے بس کی با ت نہیں ہے جہاں تک بلوچستان انڈوومنٹ پر و گر ام کا تعلق ہے تو اس سے اگر عوام مستفید ہو رہی ہے تو پھر ا س کو بند کرنے کی با ت کسی بھی طرح صحیح نہیں ہے وزیر اعلیٰ بلوچستان جا م کما ل خان نے اس کا فنڈ 3 ار ب روپے سے بڑھا کر 5 ار ب روپے کرنے کا اعلان خو ش آئند اقد ام ہے اس سے مز ید مریض فا ئدہ حا صل کرسکیں گے یہ با ت حقیقت پر مبنی ہے کہ کسی بھی امد اد کا اند ازہ ایک متا ثر ہ شخص سے ہی لگا یا جا سکتا ہے جو اس سے مستفید ہو ا اگر انڈو و منٹ پر و گر ام کی 1500 مر یضو ں کا علاج ہو اہے تو یہ بہت ہی اچھی با ت ہے اب اس کے فنڈ میں 2 ار ب رو پے کے اضا فے سے اس سے مز ید مر یض استفا دہ حاصل کر سکیں گے اس لیے ان جیسے پر و گر اموں کی حو صلہ شکنی کرنے کی بجائے حو صلہ افزائی کرنی چاہیئے یہ معا ملے پر سیا ست نہیں کرنی چاہیئے کیونکہ ہمار ے ہاں یہ بد قسمتی ہے کہ یہاں ہر معا ملے پر سیا ست کی جا تی ہے جو کہ عو ام کے مفا د میں با لکل نہیں ہے اپو ز یشن جما عتوں کو اس طر یقے کو بد لنا ہو گا ان کو مخا لفت بر ائے مخا لفت نہیں بلکہ مخا لفت بر ائے اصلا ح کرنی چاہیئے۔
یہاں اس با ت کا ذکر کرنا بہت ہی ضروری ہے جس کا اس سے قبل بھی انہی سطو ر میں ذکر کیا جا چکا ہے کہ حکومت خصو صاً وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کما ل خان جن کے پا س محکمہ صحت کا بھی قلمد ان ہے کو عو ام کو سر کاری ہسپتا لوں میں علاج کی زیا دہ سے زیا دہ سہو لتیں فر اہم کرنے کے اقد اما ت کرنے چاہئیں ان کو سر کا ری طو ر پر ادویا ت کی فر اہمی کو یقینی بنا نا چا ہیئے کیونکہ اس وقت ادو یا ت بہت ہی مہنگی ہیں جو ہر غر یب آدمی کی دستر س سے با ہر ہو چکی ہیں۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*