تازہ ترین

کراچی کے تاجروں کا 8بجے دکانیں بند نہ کرنے کا اعلان

کراچی (کامرس ڈیسک) حکومت سندھ کی جانب سے کراچی اور سندھ بھر میں تجارتی مراکز جبری طور پر رات 8 بجے بند کرانے اور کورونا کی تیسری لہر سے پیدا ہونے والی صورتحال پر آل سٹی تاجر اتحاد ایسوسی ایشن رجسٹرڈ کے تحت ٹمبرمارکیٹ میں سندھ تاجر اتحاد کے چیئرمین جمیل احمد پراچہ اور آل سٹی تاجر اتحاد ایسوسی ایشن رجسٹرڈ کے صدر شرجیل گوپلانی اور الیکٹرونکس ڈیلرز ایسوسی ایشن کے صدر رضوان عرفان نے مشترکہ پریس کانفرنس کی۔پریس کانفرنس میں صدر آل سٹی تاجر اتحاد ایسوسی ایشن شرجیل گوپلانی کا کہنا تھا کہ عالمی وبا کورونا وائرس کے باعث لاک ڈاو¿ن کی پابندیوں اور کاروبار کے اوقات کم کیے جانے پر کراچی کے تمام تاجر سراپا احتجاج ہیں۔ ہم حکومتی اقدام کو مسترد کرتے ہوئے لاک ڈاو¿ن کو معاشی قتل قرار دیتے ہیں۔ لاک ڈاو¿ن کے اعلان پر تاجر برادری سراپا احتجاج ہے‘ ہم اب تک پچھلے لاک ڈاو¿ن کے بھیانک اثرات اور نقصان سے نہیں نکلے ایک بار پھر حکومت نے ہمارے خدشات کے مطابق رمضان سے قبل لاک ڈاو¿ن کا کھیل شروع کردیا ہے۔صدر آل سٹی تاجر اتحاد ایسوسی ایشن شرجیل گوپلانی کا کہنا تھا کہ گذشتہ لاک ڈاو¿ن نے معیشت کو تباہ کیا۔ وفاقی اور صوبائی حکومت کے پاس کوئی واضح پالیسی نہیں ہے۔ تقریباً پندرہ فیصد تاجروں نے اپنی جائیدادیں بیچ کر لوگوں کے قرضے ادا کیے اور اپنے ملازمین کی تنخواہیں ادا کیں۔ سب جانتے ہیں کہ رمضان میں رات تک عید کی شاپنگ ہوتی ہے۔ ہمیں ایس او پیز کے ساتھ کاروبار کی اجازت دی جائے۔ حکومت نے تاجروں کو اعتماد میں لئے بغیر لاک ڈاو¿ن کا فیصلہ کیا جسے یکسر مسترد کرتے ہیں۔ قانون کے مطابق کاروبار کرناچاہتے ہیں، ہمیں احتجاج پر مجبور نہ کیا جائے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*