کاروباری برادری کو نئے رجحانات کے مطابق ایڈجسٹ کرنا ہو گا،میاںز اہد

کراچی(کامرس ڈیسک)ایف پی سی سی آئی بزنس مین پینل کے سینئر وائس چےئرمےن ،پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر اور سابق صوبائی وزیر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ پاکستان سمیت دنیا کے تقریباً تمام ممالک میں پہلی بار لاک ڈاﺅن کا تجربہ کیا گیا ہے جس کے بعد صارفین کی عادات اورترجیحات میں تبدیلی آئی ہے اور کاروباری برادری کو نئے رجحانات کے مطابق ایڈجسٹ کرنا ہو گا۔ میاں زاہد حسین نے بزنس کمیونٹی سے گفتگو میں کہا کہ پاکستان میں عوام تقریباً دو ماہ تک لاک ڈاﺅن برداشت کر چکی ہے اور اس میں مزید توسیع کا امکان ہے تا ہم ضرورت اس چیز کی ہے کہ ایس او پیزکی پابندی کے ساتھ تمام ما رکیٹوں ، کاروباروں،دفتروں، بینکو ں اور چھوٹی بڑی صنعتوںکومکمل طور پر24گھنٹے اوقات کا ر کی بنیاد پرکھولا جائے تا کہ عوام کی معاشی مشکلات دور ہوں اور حکومت کو ریونیو کی کمی کا جو سامنا ہے اس کا تدارک ہو سکے۔ پاکستانیوں کو بھوک سے مرنے یا بیماری سے مرنے کی بجائے ایک ذمہ دار قوم کی طرح ایس او پیزکی پابندی کا راستہ اختیار کرنا ہوگا۔ میاں زاہد حسین نے مزید کہا کہ لاک ڈاﺅن کے دوران زیادہ ترکاروبار بند رہے جبکہ عوام کو زبردست مالی مسائل کا سامنا کرنا پڑا جس سے انھیں بچت کی اہمیت کا اندازہ ہوا ہے۔لاک ڈاﺅن کے دوران زیادہ ترافراد نے صرف اہم ضروریات زندگی پر اخراجات کئے اور لاک ڈاﺅن کے مستقل طور پر ختم ہونے کے بعد بھی عوام پہلی جیسی شاپنگ اور فضول خرچی نہیں کرے گی بلکہ برے وقت کے لئے بچت کو ترجیح دیگی جس سے بہت سے کاروبار متاثر ہونگے۔ انھوں نے کہا کہ سرمایہ کار جان لیں کہ اب اشیاءاور خدمات کی وہ مانگ نہیں رہے گی۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*