پاکستان کا افغانستان سے امریکی فوج کے انخلا پر صدر بائیڈن کے فیصلے کا خیر مقدم

اسلام آباد (آئی این پی) افغانستان سے امریکی فوج کے انخلا سے متعلق صدر بائیڈن کے بیان پر دفتر خارجہ نے ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ ضروری ہے افغانستان سے افواج کاانخلاامن عمل پیشرفت سے ہم آہنگ ہو، افغان اسٹیک ہولڈرز سے ہم آہنگی سے فوجی انخلا کی حمایت کرتے ہیں،افغانستان میں امن و استحکام خطے کے مفاد میں ہے اسی لیے پرامن، مستحکم، خود مختار اور خوشحال افغانستان کے لیے پر عزم ہیں۔ان خیالات کا اظہار ترجمان دفتر خارجہ نے امریکی صدر کے افغانستان سے امریکی افواج کے انخلا پر بیان سے متعلق دیا۔ترجمان نے صدر بائیڈن کے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ امریکی صدر نے کہا کہ افغانستان سے یکم مئی سے افواج کی واپسی شروع ہوگی، امریکی صدر کے مطابق 11ستمبر 2021تک افواج کا انخلا مکمل ہوجائے گا، پاکستان افغانستان میں امن اور استحکام کی کوششوں کی مستقل حمایت کرتا رہا ہے۔دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ افغانستان میں تنازعات کا کوئی فوجی حل نہیں ہے، افغانستان میں امن عمل کے ذریعے ہی مذاکرات کا سیاسی حل اہم ہے اور امریکا طالبان معاہدے نے افغانستان میں مستقل جنگ بندی کی بنیاد رکھی۔ترجمان نے کہا کہ ضروری ہے افغانستان سے افواج کا انخلا امن عمل پیشرفت سے ہم آہنگ ہو، اسی لیے افغان اسٹیک ہولڈرز سے ہم آہنگی سے فوجی انخلا کی حمایت کرتے ہیں۔افغانستان میں امن و استحکام خطے کے مفاد میں ہے اسی لیے پرامن، مستحکم، خود مختار اور خوشحال افغانستان کے لیے پر عزم ہیں۔ترجمان دفتر خارجہ کا مزید کہنا تھا کہ امن کوششوں کی ایک اہم خصوصیت افغان مہاجرین کی وطن واپسی ہے لہذا افغان امن کی کوششوں میں پاکستان دنیا کے ساتھ مل کر کام کرتا رہے گا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*