تازہ ترین

پاکستان اپنی تمام عالمی ذمہ داریوں پر کاربند ہے ،ترجمان دفتر خارجہ

اسلام آباد (آئی این پی )پاکستان نے بھارتی وزارت امورخارجہ کے بیان پر کہاہے کہ وہ اپنی تمام عالمی ذمہ داریوں پر کاربند ہے اور اس قانون کا بھارتی جاسوس کمانڈر کلبھوشن یادیو کے مقدمے میں عالمی عدالت انصاف کے فیصلے پر اطلاق ہوتا ہے ، یہ امر باعث افسوس ہے کہ بھارتی حکومت نے عالمی عدالت انصاف کے فیصلے کی غلط تشریح قبول کی جو واضح طورپر 147پیراگراف میں قرار دیتا ہے کہ پاکستان کی ذمہ داری ہے کہ اپنی پسند کے طریقہ کار کو اختیار کرتے ہوئے یادیو کی سزا کے حکم اور سزا کا جائزہ اور اس پر دوبارہ غور کرے،عالمی عدالت انصاف کا فیصلہ(پیرا۔118 ) یہ بھی تقاضا کرتا ہے کہ بھارت نیک نیتی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کمانڈر یادیو کی قانونی نمائندگی اور پیروی کا انتظام کرے ، یہ افسوسناک امرہے کہ بھارت جان بوجھ کر کمانڈر یادیو کے لئے وکیل مقرر کرنے کے معاملے میں لیت ولعل کی مہم چلارہا ہے، پاکستان کی جانب سے فراہم کردہ دادرسی کے قانونی مواقع سے بھارتی حکومت کا انکاران کے مذموم ارادوں کو ظاہر کرتا ہے ،اس کا مقصد کمانڈر یادیو کے بارے میں عالمی عدالت انصاف کے فیصلے سے متعلق پاکستان کو بدنام کرنا اوراس کی کوششوں کو زک پہنچانا ہے۔ ہفتہ کو ترجمان وزارت خارجہ زاہد حفیظ چوہدری نے کہا ہے کہ پاکستان کی قومی اسمبلی سے عالمی عدالت انصاف(جائزے اور دوبارہ غور) کے قانون کی منظوری کے بارے میں بھارتی وزارت امور خارجہ کا بیان ہماری نظر سے گزرا ہے۔ پاکستان اپنی تمام عالمی ذمہ داریوں پر کاربند ہے اور اس قانون کا بھارتی جاسوس کمانڈر کلبھوشن یادیو کے مقدمے میں عالمی عدالت انصاف کے فیصلے پر اطلاق ہوتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ یہ امر باعث افسوس ہے کہ بھارتی حکومت نے عالمی عدالت انصاف کے فیصلے کی غلط تشریح قبول کی جو واضح طورپر 147 پیراگراف میں قرار دیتا ہے کہ پاکستان کی ذمہ داری ہے کہ اپنی پسند کے طریقہ کار کو اختیار کرتے ہوئے یادیو کی سزا کے حکم اور سزا کا جائزہ اور اس پر دوبارہ غور کرے۔عالمی عدالت انصاف کے فیصلے کے 146 پیراگراف کے مطابق پاکستان نے عالمی عدالت انصاف (جائزہ و دوبارہ غور)آرڈیننس 2020 کے ذریعے پاکستان کی اعلی عدالتوں میں کمانڈر یادیو کو جائزے اور دوبارہ غور کا حق فراہم کردیا ہے۔ پاکستان کی قومی اسمبلی سے عالمی عدالت انصاف (جائزہ و دوبارہ غور) بل کی منظوری عالمی عدالت انصاف کے فیصلے کی پاسداری کے پاکستان کا عزم کا مظہر ہے۔ ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق عالمی عدالت انصاف کا فیصلہ(پیرا۔118 ) یہ بھی تقاضا کرتا ہے کہ بھارت نیک نیتی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کمانڈر یادیو کی قانونی نمائندگی اور پیروی کا انتظام کرے۔ زاہد حفیظ چوہدری نے کہاکہ یہ افسوسناک امرہے کہ بھارت جان بوجھ کر کمانڈر یادیو کے لئے وکیل مقرر کرنے کے معاملے میں لیت ولعل کی مہم چلارہا ہے جس کے نتیجے میں حکومت کو اسلام آباد ہائیکورٹ کے روبرو کارروائی کا آغاز اور عدالت سے کمانڈر یادیو کے لئے وکیل مقرر کرنے کی درخواست شروع کرنا پڑی ۔ معزز عدالت نے بارہا بھارت کو اپنا موقف واضح کرنے کے لئے دعوت دی لیکن بھارت دانستہ معاملے کو سیاسی رنگ دے رہا ہے۔انہوں نے کہاکہ پاکستان کی جانب سے فراہم کردہ دادرسی کے قانونی مواقع سے بھارتی حکومت کا انکاران کے مذموم ارادوں کو ظاہر کرتا ہے جس کا مقصد کمانڈر یادیو کے بارے میں عالمی عدالت انصاف کے فیصلے سے متعلق پاکستان کو بدنام کرنا اوراس کی کوششوں کو زک پہنچانا ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*