تازہ ترین

نظام کو جدید خطوط پر استوار کرنے کےلئے وسائل بروئے کار لائے جا ئیں، وزیر اعظم

اسلام آباد (آئی این پی ) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت پوری طرح سے کوشاں ہے کہ اداروں اور نظام کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے لیے تمام وسائل برو¿ے کار لائے جا ئیں اور اس ضمن میں ٹیکنالوجی کا بھرپور استعمال کیا جائے، وزارت قانون کی مشاورت سے کنٹریکٹ انفورسمٹ معاملات اور لینڈ ریونیو ریکارڈ کو مزید منظم کرنے پر خصوصی توجہ دی جائے ، تمام وزارتوں میں کاروبار سے متعلق عوامل کو آسان ترین بنانے اور غیر ضروری اجازت ناموں اور ریگولیشنز کو ختم کرنے پر کام تیز کیا جائے، اس عمل کی ہفتہ وار رپورٹ پیش کی جائے۔ بدھ کو وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت سمال اینڈ میڈیم انٹرپرائزز کے لیے کاروبار میں آسانیاں پیدا کیے جانے کے حوالے سے اٹھائے جانے والے اقدامات پر بریفنگ دی گئی اجلاس میں معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان، چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ زبیر گیلانی و دیگر سینئر افسران شریک تھے وزیر اعظم کو چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ کی جانب سے ایس ایم ایز کے لیے آسانیاں پیدا کرنے کے حوالے سے اب تک اٹھائے جانے والے اقدامات پر تفصیلی بریفنگ دی گئی وزیر اعظم کو بتایا گیا کہ چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروبار شروع کرنے اور اس حوالے سے ضروری اجازت نامہ و رجسٹریشن کے عمل کو کمپیوٹرائزڈ اور خودکار بنانے پر کام جاری ہے تاکہ جہاں پروسیجرز کو آسان بنایا جا سکے وہاں شفافیت کو یقینی اور سرخ فیتے کا خاتمہ کیا جا سکے ، وزیر اعظم کو بتایا گیا کہ سمال اینڈ میڈیم انٹرپرائز پالیسی فریم (2019-2024) تشکیل دیا جا رہا ہے ۔ وزیر اعظم نے کہا موجودہ حکومت پوری طرح سے کوشاں ہے کہ اداروں اور نظام کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے لیے تمام وسائل برو¿ے کار لائے جایئں اور اس ضمن میں ٹیکنالوجی کا بھرپور استعمال کیا جائے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ وزارت قانون کی مشاورت سے کنٹریکٹ انفورسمٹ (معاہدے پر عمل درآمد) کے حوالے سے معاملات اور لینڈ ریونیو ریکارڈ کو مزید منظم کرنے پر خصوصی توجہ دی جائے ، وزیر اعظم نے چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ کو ہدایت کی کہ تمام وزارتوں میں کاروبار سے متعلق عوامل کو آسان ترین بنانے اور غیر ضروری اجازت ناموں اور ریگولیشنز کو ختم کرنے پر کام تیز کیا جائے اور اس عمل کی ہفتہ وار رپورٹ پیش کی جائے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*