تازہ ترین

نئی حکومت تما م افغان نمائند وں پر مشتمل ہو گی

افغان طا لبا ن کے دو حہ میں سیا سی دفتر کے ترجما ن سہیل شا ہین نے مو قف اختیا ر کیا ہے کہ نئی حکومت تما م افغان نما ئند وں پر مشتمل ہو گی انہوں نے وا ضح کیاکہ پاکستان کا طا لبا ن پر کوئی اثر و رسو خ نہیں اپنے فیصلے قومی مفا دا ت اور اقد ار کی روشنی میں کر تے ہیں کسی کو بھی افغا نستان سے کسی دوسر ے ملک میں کا روائی کی اجا ز ت نہیں دیں گے اگر کوئی کا رو ائی کرتا ہے تویہ ہما ری پا لیسی کیخلا ف ہو گا ہما ری حکومت میں خواتین چہر ہ چھپا ئیں یا نہ چھپا ئیں یہ ان کی مر ضی ہو گی امر یکہ کی جا نب سے دو با رہ خلا ف ور زی قا بل قبول نہیں ہو گی۔
افغان طا لبا ن کے تر جما ن سہیل شا ہین کا مذکورہ بیان بلا شبہ اچھا ہے جس سے افغا نستان میں امن قا ئم ہو سکتا ہے انہوں نے جو پا لیسی بیا ن کی ہے وہ افغانستان میں امن و اما ن کے قیام میں مد د گا ر ثا بت ہوگی انہوں نے پاکستان کے حوالے سے طا لبان پر اثرو رسو خ کے حوالے سے کئے جا نے والے پر و پیگنڈو ں کا وا ضح جو اب دیا ہے جس سے اب اس سلسلے میں پر وپیگنڈ ے کر نے سے گر یز کرناچا ہیئے کیونکہ یہ بات با لکل وا ضح ہے کہ پاکستان نے کبھی افغانستان میں کسی بھی قسم کی کوئی مد ا خلت نہیں کی ہے لیکن اس کے با وجو د اس پر الز ام تر ا شیا ں کرنا غلط ہے۔
جہاں تک افغانستا ن کی سر زمین کو دوسر ے ممالک کیخلا ف استعما ل کرنے کی با ت ہے تو اس سلسلے میں یہاں اس با ت کا ذکر کرنا از حد ضروری ہے کہ اس سے قبل افغانستان کی سر زمین پاکستا ن کیخلا ف استعمال ہو تی رہی ہے افغانستان کی سا بقہ حکومتو ں نے ہندوستان جو پاکستان کا ازلی دشمن ہے سے گٹھ جو ڑ کر کے پاکستان میں تخر یب کا ریا ں کر وا ئیں جن کے ثبوت پاکستان کو وقتاً فو قتاً ملتے رہے ہیں اس کا سب سے بڑ ا ثبو ت ہندوستانی جا سو س کلبھو شن یا دیو ہے جس نے با قا عد ہ اس کا اعتر اف کیا ہے اس کے علا وہ پاکستان میں ہونے والی اکثر تخر یب کا ریوں کے تا نے با نے کا بل سے ملنے کے شوا ہد بھی ملے ہیں جو کہ یقینا قا بل مذمت اقد اما ت ہیں ایسا کرنا افغانستان کو بالکل زیب نہیں دیتا کیونکہ وہ پاکستان کا ہمسایہ مسلما ن ملک ہے لیکن وہ پاکستان کے ازلی دشمن ملک ہندوستا ن کے اکسا نے پر یہ سب کچھ کر تا رہا حالا نکہ پاکستان افغانستان کا محسن ملک ہے اس نے لا کھوں افغان مہا جرین کو کئی سا لو ں تک پنا ہ اور ان کا ہر طر ح سے خیا ل رکھا اس کے علا وہ افغانستا ن نے اپنی سر زمین سے پاکستانی علا قو ں خصوصاً پاک افغان با رڈر پر با ڑ لگا نے والے سیکیو رٹی اہلکا رو ں کو کئی با ر نشانہ بنا یا جس میں کئی قیمتیں جا نیں ضا ئع اور زخمی بھی ہوئیں۔
اس لیے یہاں ضرورت اس امر کی ہے کہ طالبا ن کو اپنے مذکو رہ بیان کو عملی جامہ پہنا نے کے لیے احسن اقد اما ت کرنے چاہئیں تا کہ افغانستان کے ہمسایہ ممالک خصو صاً پاکستان سے تعلقا ت میں بہتر ی آئے کیونکہ ایسا ہونا دونوں ممالک سمیت خطے میں استحکام لانے کے لیے نا گز یر ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*