تازہ ترین

مقبوضہ کشمیر، مودی حکومت کے بہیمانہ مظالم کا پردہ چاک

سری نگر(آئی این پی) بھارت کی قابض افواج مقبوضہ وادی کشمیر میں پانچ اگست سے اب تک چار ہزار سے زائد افراد کو حراست میں لے چکی ہے۔ اس بات کا اعتراف خود بھارت نے سرکاری طور پر کیا ہے۔بھارت کی انتہا پسند مودی حکومت نے پانچ اگست 2019 سے مقبوضہ وادی کشمیر میں کرفیو نافذ کررکھا ہے، مواصلاتی نظام معطل ہے، اشیائے خور و نوش کا قحط ہے، ادویات نا پید ہیں اور کاروبار زندگی مکمل طور پر مفلوج ہے۔عالمی خبر رساں ایجنسی نے اس ضمن میں بھارتی حکومت کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار پر مبنی اپنی رپورٹ میں بتایا ہے کہ مقبوضہ وادی چنار سے اب تک تین ہزار 800 افراد کو حراست میں لیا گیا جن میں سے صرف دو ہزار 600 کو تفتیش کے بعد رہا کیا گیا۔مقبوضہ وادی کشمیر کے دو سابق وزرا اعلی سمیت تقریبا 200 سیاستدان اس وقت گرفتار ہیں جن میں سے 100 سے زائد سیاستدانوں کا تعلق بھارت کی حکمراں جماعت کی مخالف سیاسی جماعتوں سے ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*