تازہ ترین

غذائی اجزاءجسم کے بنیادی ایندھن کون سے ہیں

ہماری خوراک کئی ایسے غذائی اجزاءپر مشتمل ہوتی ہے،جو ایک صحت مند اور متوازی زندگی کے لئے ناگزیر ہیں اور یہ تمام اجزائے ترکیبی جسم کے اندر اپنے وظائف سر انجام دیتے ہیں اگر ان میں سے کسی ایک جزو کی کمی ہو جائے تو اس کے نتیجے میں کوئی بھی مرض لاحق ہو سکتا ہے۔ جیسے کاربوہائیڈریٹ میں اناج،گندم،چاول،پھل اور دیگر اجناس یعنی مکئی اور جو سے حاصل ہوتا ہے۔
اناج کھانا ضروری ہے اس جزو کو ایندھن کی حیثیت حاصل ہے واضح رہے کہ جب اناج کا کوئی ذرہ جسم میں داخل ہوتا ہے تو وہ گلوکوز میں تبدیل ہوتا ہے،گلوکوز کا سالمہ Molecule ہمارے جسم کے ہر بنیادی خلیے کا ایندھن کہلاتا ہے۔جسم کا حساس ترین عضو دماغ ہوتا ہے جو گلوکوز کے بغیر 20 منٹ سے زائد زندہ نہیں رہ سکتا اور کوما میں چلا جاتا ہے اسی لئے ذیابیطس کے مریضوں کو انسولین کے بعد کاربوہائیڈریٹ کے استعمال کا مشورہ دیا جاتا ہے ورنہ وہ کومے یا بے ہوشی کا شکار ہو سکتے ہیں۔
انسانی غذا کا دوسرا اہم جزو پروٹین ہے یعنی لحمیات جسم کے پٹھوں کی تشکیل ہی میں نہیں بلکہ مائع حالت میں ہارمونز بنانے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔پروٹین کی کمی کے شکار بچوں کے پیٹ فٹ بال کی مانند پھولے ہوتے ہیں لیکن ہاتھ پا¶ں پتلے ہوتے ہیں۔
پروٹین کا حصول کیسے ممکن ہے؟
فطری طور پر پروٹین ہمیں نباتاتی ذرائع یعنی دالوں اور سبزیوں کی شکل میں دستیاب ہوتی ہے اور حیوانی ذرائع یعنی گوشت کی صورت میں بھی حاصل کی جا سکتی ہے،دراصل یہی بہترین پروٹین ہوتی ہے تاہم یہ زائد مقدار میں استعمال نہیں ہونا چاہئے ورنہ چربی کے خلیے امراض قلب،ذیابیطس اور دوسرے امراض کا سبب بنتے ہیں۔
وٹامنز بھی ایندھن ہیں
انسانی خوراک کے لئے وٹامنز ایک ضروری گروپ ہیں جن کے بغیر متوازی غذا کا تصور ادھورا ہوتا ہے۔چار اہم ترین وٹامنز D،C،B،A ہوتے ہیں۔وٹامن A ہمیں حیوانی چربی اور تیل سے ملتا ہے۔موسم سرما کے آغاز ہی سے بچوں کو مچھلی کا تیل یا اس سے تیار شدہ کیپسول دیئے جانے چاہئیں،یہ وٹامن انسانی جسم کی تمام جھلیوں یعنی بیرونی جلد سے اندرونی آنتوں کی بناوٹ اور مرمت کے لئے لازمی ہے۔
آنکھ کی بیرونی پرت Cornea سے لے کر اندرونی پرت Retina کی صحت کے لئے بھی لازمی ہے۔وٹامن A کی کمی کے سبب ہم شب کوری (Night Blindness) کا شکار ہو سکتے ہیں۔اگر بچے رات میں نظر نہ آنے کی شکایت کرتے ہیں تو ان کا فوری طبی معائنہ کروا کے ڈاکٹر کی تجویز کردہ ادویات اور اضافی سپلیمنٹس دیں۔آج کل پولیو ویکسین کے ساتھ وٹامن A کے کیپسول بھی بچوں کو پلائے جا رہے ہیں۔
ڈالڈا کی مصنوعات میں وٹامن A اور D کی مقدار موجود ہے لہٰذا ایسے تیل روزمرہ استعمال کے لئے خریدے جانے چاہئیں۔
وٹامن B اور C
اگر آپ اپنے کنبے کو تازہ سبزیاں اور پھل جیسے کینو اور ٹماٹر کھلاتے ہیں تو پھر ان میں وٹامنز کی کمی نہیں ہونی چاہیے۔تمام سٹرس فروٹس مختلف معدنی اجزاءکے ساتھ ساتھ وٹامن C کا موثر ترین ذریعہ ہیں۔
وٹامن D
حیوانی چربی اور تیل میں بھی پایا جاتا ہے جبکہ اس کا قدرتی ذریعہ سورج کی روشنی ہے۔اس وٹامن کی کمی سے بچوں کی ہڈیاں ملائم اور ٹیڑھی ہو جاتی ہیں اس مرض کو Ricket کہا جاتا ہے۔ہماری جلد سورج کی روشنی میں وٹامن D تیار کرتی ہے اس لئے صبح و شام کے مخصوص اوقات میں جسم کو دھوپ لگانے سے یہ وٹامن با آسانی حاصل کیا جا سکتا ہے۔دیہاتوں میں آج بھی بڑھتے ہوئے بچوں کے جسموں میں بادام یا سرسوں کے تیل کی مالش کرکے انہیں کچھ دیر کے لئے دھوپ میں بیٹھایا جاتا ہے اس طرح بچہ وٹامن D کا شکار نہیں ہوتا تاہم یہ دھوپ قدرے نرم ہونی چاہئے۔اس طرح ہڈیاں مضبوط ہوتی ہیں اور جسمانی قوت بڑھتی ہے۔
٭٭٭٭٭٭

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*