تازہ ترین

شہریوں کے حقوق کا تحفظ حکومت کا اولین فرض ہے،عمران خان

Prime-Minister-Imran-Khan-PM

اسلام آباد (نیوز ایجنسیاں +م ڈ) وزیر اعظم عمران خان نے ایک بار پھر ہدایت کی ہے کہ منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزوں کے ساتھ کوئی نرمی نہ کی جائے،کھاد کی مناسب فراہمی کے لیے انتظامی اقدامات کو یقینی بنایا جائے،ملک میں اشیائے ضروریہ کی کوئی کمی نہیں۔ بدھ کو وزیر اعظم کی زیرصدارت ملک میں کھاد کی طلب اور رسد کا جائزہ اجلاس ہوا جس میں گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہاکہ کھاد کی ذخیرہ اندوزی ربیع سیزن کے لیے فصل کی پیداوار کو بری طرح متاثر کر سکتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ کسانوں کے لیے کھاد کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔وزیر اعظم نے کہاکہ پی ٹی آئی کی حکومت نے ملکی تاریخ میں پہلی بار کسان دوست پالیسیاں متعارف کرائی ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ کسان پاکستان کی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں۔وزیراعظم نے کہاکہ یوریا کی قلت سے متعلق افواہوں کو دور کرنے کے لیے موثر عوامی آگاہی مہم چلائی جائے۔بتایاگیاکہ گزشتہ ہفتے اوسطاً 19000 میٹرک ٹن فی دن کھاد کی فراہمی کو یقینی بنایا گیا، انسداد اسمگلنگ میں پنجاب، خیبرپختونخوا اور بلوچستان کی صوبائی حکومتوں نے یوریا کے 92845 تھیلے ضبط کیے ہیں۔دریں اثناء وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی امور ڈاکٹر شہباز گل نے کہا ہے کہ ریاست ہر صورت ہراسانی مقدمات کی پیروی کر کے ملزمان کو سخت سزائیں دلوائے گی، وزیر اعظم عمران خان کا ای الیون اسلام آباد ہراسگی کیس اور موٹروے ریپ کیس کی پیروی پر متعلقہ اداروں سے رپورٹ طلب کی ہے اور وزارت قانون و انصاف کوہدایات کی ہیں کہ روزانہ کی بنیاد پر فالو اپ کر کے ان کیسز کو منطقی انجام تک پہنچایا جائے۔بدھ کو وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی امور ڈاکٹر شہباز گل نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کا اسلام آباد ہراسگی کیس اور موٹروے ریپ کیس کی پیروی پر متعلقہ اداروں سے رپورٹ طلب کی ہے اور وزارت قانون و انصاف کوہدایات کی ہیں کہ روزانہ کی بنیاد پر فالو اپ کر کے ان کیسز کو منطقی انجام تک پہنچایا جائے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ شہریوں کے حقوق کا تحفظ حکومت کا اولین فرض ہے،ریاست ہر صورت اہراسانی مقدمات کی پیروی کر کے ملزمان کو سخت سزائیں دلوائے گی۔انھوں نے کہا کہ موٹر وے ریپ کیس میں انسداد دہشت گردی عدالت میں سزائے موت کی سزا سنائی جا چکی اب اس کے خلاف اپیل 14 فروری کو عدالت میں سنی جا رہی ہے۔ شہباز گل نے کہا کہ زیادتی جیسے بھیانک جرائم میں ملوث عناصر اعتدال پسند معاشرے اور انصاف کے نظام کے لیے چیلنج ہیں۔ واضح رہے کہ اسلام آبا دای الیون میں جوڑے پر تشدد اور نازیبا حرکات کے کیس میں منگل کے روزاسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت میں سماعت میں متاثرہ لڑکی نے عدالت میں بیان دیا تھا کہ پولیس والے مختلف اوقات میں سادہ کاغذوں پرمجھ سے دستخط اور انگوٹھے لگواتے رہے، میں کسی بھی ملزم کو نہیں جانتی اور نہ کیس کی پیروی کرنا چاہتی ہوں،پولیس نے یہ سارا معاملہ خود بنایا ہے، میں نے بیان حلفی کسی کے دبا میں آکرنہیں دیا، میں نے کسی بھی ملزم کو نہ شناخت کیا نہ ہی کسی پیپر پردستخط کیے۔اس دوران متاثرہ لڑکی کی جانب سے عدالت میں اسٹامپ پیپر جمع کرایا گیا۔ متاثرہ لڑکی کے مطابق میں نے کسی کو بھی تاوان کی رقم ادا نہیں کی۔متاثرہ لڑکی کا کہنا تھاکہ ملزم ریحان سمیت دیگر ملزمان کو مجھے تھانے میں دکھایا گیا تھا، ریحان سمیت کسی بھی ملزم نے میرے ساتھ زیادتی کی کوشش نہیں کی، میں ریحان کو نہیں جانتی اور نہ ہی وہ ویڈیو بنارہا تھا۔خیال رہے کہ گزشتہ سال جولائی میں سوشل میڈیا پر لڑکی اور لڑکے پر تشدد کی ویڈیو وائرل ہوئی تھی جس کے بعد اسلام آباد پولیس نے ایکشن لیتے ہوئے تشدد کرنے والے بااثر ملزم عثمان مرزا سمیت کئی افراد کو گرفتار کیا تھا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*