تازہ ترین

رمضان المبا رک میں مسا جد بند نہ کرنے کا فیصلہ

ملک بھر میں کو رونا وا ئر س کی تیسر ی لہر آئی ہوئی ہے جس کے باعث ایک جا نب روزانہ کی بنیا د پر کیسز میں اضا فہ ہو رہا ہے جبکہ دوسری جا نب امو ات بھی ہورہی ہیں اس طرح ملک کے مختلف شہر وں کے اکثر علا قوں میں سما ل لا ک ڈاﺅن بھی لگا دیا گیا ہے جو بلا شبہ اس با ت کی نشا ند ہی ہے کہ یہ مو ذی مر ض مز ید بڑھ رہا ہے جو کہ بلا شبہ تشو یشنا ک با ت ہے رمضان المبارک میں مسا جد کے بند کر نے کے حوالے سے وزیر اعظم کے نما ئند ہ خصو صی بر ائے مذہبی ہم آہنگی مو لا ناطا ہر اشر فی نے اپنے ایک وضا حتی بیان میں وا ضح کیا ہے کہ حکومت مسا جد بند نہیں کر رہی اس لیے رمضان المبا رک میںتر ا ویح ہونگی کو رونا ویکسین نہ لگو انے کی باتیں جہا لت ہے جس نے ایک انسا ن کو بچا یا گو یا اس نے پوری انسا نیت کو بچا یا مسا جد اس اوپیز پر چلتے ہوئے کھلی رہیں گے۔
کو رونا وا ئر س کی تیسر ی خطر ناک لہر کا آنا بلا شبہ ایک بڑی تشو یش کی با ت ہے کیو نکہ اس مو ذی مر ض نے پہلے بھی کئی جانیں لیں اور اس سے لا تعد اد افر اد شد ید متا ثر ہوئے اس کے سا تھ ساتھ اس کی وجہ سے حکومت کو پہلے لا ک ڈاﺅن اور پھر سما ل لا ک ڈاﺅن بھی لگانا پڑ ے جس کے باعث غر یب عو ام جو دیہا ڑی دار ہیں اس سے شد ید متاثر ہوئے ان کی معا شی حالت خرا ب ہوئی کیو نکہ یہ طبقہ دن کو کما کر را ت کو کھا تا ہے ان کا اس کے سو ا اور کوئی چا رہ کا ر نہیں ہے گو یا اس سے حکومت سمیت تما م سٹیک ہولڈر کو بڑی شد ید مشکلا ت کا سامنا کرنا پڑ ا پچھلے سا ل رمضان المبا رک کے دور ان بھی مسا جد کو ایس او پیز کے تحت ہی کھو لا گیا تھا۔
اب ایک با ر پھر حکومت نے یہی عمل دہر انے کا فیصلہ کیا ہے جس سے عو ام کے ذہنوں سے ان شکو ک و شہبا ت کا خاتمہ ممکن ہو جا ئے گا کہ رمضان المبا رک کے مقد س ما ہ میںمساجد بند نہیں کی جارہیں وہاں نمازیں اور تر ا ویح ہوگی۔
ہم سمجھتے ہیں کہ کورونا وا ئر س کے پھیلاﺅ کے پیش نظر حکومت کا مذکورہ فیصلہ قا بل تعر یف ہے لیکن یہاں اس با ت کا ذکر کرنا بھی از حد ضروری ہے کہ یہاں پہلے کی طر ح عو ام کا بھی بھر پو ر تعا ون چاہیئے کیو نکہ جب تک عو ام اس سلسلے میں حکومت اور متعلقہ ادا روں سے تعا ون نہیں کریں گے اس مو ذی مر ض سے چھٹکا را حا صل کرنا ممکن نہیں ہے۔
اس لیے یہاں ضرورت اس امر کی ہے کہ عوام اپنا پہلے والا عمل دو با رہ دہر ائیں کیو نکہ اس سے پاکستان میں دنیا کے دیگر مما لک کی نسبت نہ صر ف کورونا وا ئر س کے کیسز کم ہوئے بلکہ امو ات بھی زیا دہ نہیں ہوئیں جس کی اہم وجہ عو ام کی جانب سے ایس او پیز پر عمل در آمد کرنا ہے اس لیے ان کو اب پھر وہی عمل دو با رہ دہرنا چاہیئے جو کہ نا گز یر ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*