تازہ ترین

حکومت کاآٹا، گھی، چینی اور دالوں پر کیش سبسڈی دینے کا اعلان

اسلام آباد (این این آئی)وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے آٹا، گھی، چینی اور دالوں پر کیش سبسڈی دینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ گندم کی ریلیز پرائز 19 سو روپے کردی ہے جس کے بعد آئندہ چند دنوں میں آٹے کی قیمت میں غیر معمولی کمی ہوجائےگی،کورونا اور طلب و رسد میں تعطل کی وجہ سے بین الاقوامی سطح پر روز مرہ استعمال کی چیزوں کی قیمتوں میں اضافہ ہوا،قیمتوں کے استحکام کے لیے پیداوار بڑھانا ہوگی ،سبزیوں کی قیمت میں اضافے پر تشویش ہے ،آلو، پیاز، ٹماٹر سمیت روز مرہ کی چیزوں کی قیمتوں میں مقامی سطح پر اضافے کے بعد جائزہ لینا ہوگا کہ آیا منڈی میں مہنگے دام فروخت ہونے والی سبزیوں کو برآمد کرنا چاہیے یا نہیں،کسان کو اتنا منافع نہیں ملتا جتنا خوردہ فروش کماتا ہے، عمل کو شفاف بنانے کےلئے سائنٹیفک پروسیز ری انجینئرنگ‘ کر رہے ہیں،نقصان میں چلنے والے دس بڑے اداروں پی آئی اے ، اسٹیل مل اور ڈسکوز کو منافع بخش بنانے کیلئے نیا بورڈ قائم کیا جارہا ہے۔ منگل کو یہاں وزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات فرخ حبیب اور معاون خصوصی جمشید چیمہ کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شوکت ترین نے کہاکہ رواں سال مہنگائی کی شرح آٹھ فیصد رہی ہے ،پوری دنیا میں قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے۔ وفاقی زیرنے کہاکہ چینی ، گندم اور پام آئل کی قیمت میں عالمی مارکیٹ میں اضافہ ہوا ہے،کورونا کے باعث سپلائی چین میں رکاوٹ آئی جس سے قیمتوں میں اضافہ ہوا۔ انہوںنے کہاکہ آئی ایم ایف کے باعث روپے کی قدر میں کمی ہوئی ،ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قیمت 104 سے بڑھ کر 168 روپے ہو گئی ۔ شوکت ترین نے کہاکہ عالمی مارکیٹ میں قیمت بڑھے گی تو مقامی مارکیٹ میں اثر آئے گا ۔ انہوںنے کہاکہ گزشتہ 20 سال میں زراعت پر توجہ نہیں دی گئی ،ہم زراعت کی پیداوار بڑھائیں گے ۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ گندم ، چینی ، ڈالیں ، خوردنی تیل درآمد ہو رہا ہے ،پاکستان کی زرعی مارکیٹ اس وقت عالمی مارکیٹ سے منسلک ہو گئی ہے ،ہم پاکستان کی زرعی مارکیٹ کی سائنسی بنیاد پر اسٹڈی کروا رہے ہیں ،اہم اجناس کی قیمتوں کو کنٹرول کریں گے ،اس ماہ سے ٹارگٹڈ سبسڈی دیں گے ،غریب لوگوں کو آٹے چینی اور گھی کیلئے کیش سبسڈی دیں گے ،اجناس کے سٹوریج بنائیں گے ،آڑھتی کو درمیان سے نکال دیں گے ،حکومت نے کوشش کی ہے کہ لوگوں کو مہنگائی سے بچائیں ۔ انہوںنے کہاکہ مہنگائی میں کمی کیلئے پٹرولیم لیوی کو ختم کر دیا ،رواں سال کے بجٹ میں پٹرولیم لیوی وصولی کیلئے 600 ارب روپے کا ہدف رکھا تھا ۔ انہوںنے کہاکہ پاکستان میں گزشتہ چند سالوں میں لوگوں کی آمدن نہیں بڑھی ،لوگوں کی آمدن بڑھے تو مہنگائی کا اثر کم ہوتا ہے ،ہم لوگوں کی آمدن بڑھائیں گے ،کامیاب پاکستان پروگرام کو اس ماہ سے شروع کر دیں گے ،احساس پروگرام کے تحت قرض دیں گے ،بلوچستان اور پنجاب میں صحت انصاف کارڈ شروع کیا جا رہا ہے ۔شوکت ترین نے کہاکہ حکومت مجبوری میں آئی ایم ایف پروگرام میں گئی ،شرح سود میں اضافے کی وجہ سے قرض بڑھا ،قرض کی جی ڈی پی شرح 81 فیصد ہو گیا ہے،ہم نے زرمبادلہ کے ذخائر میں پانچ ارب ڈالر کا اضافہ کیا ،جب معیشت بڑھتی ہے تو قرض بھی بڑھتا ہے ،آئی ایم ایف پروگرام اور کوویڈ سے بھی قرض بڑھا ۔ وفاقیو زیر نے کہاکہ سرکاری اداروں کے نقصانات کو کم کیا گیا ،زیادہ نقصانات پی آئی اے، پاکستان اسٹیل ملز ، اور ڈسکوز ہیں ،بڑی دس کمپنیوں کو بحال کریں گے ،نجکاری کمیشن میں بورڈ قائم کریں گے ،جو ان کمپنیوں کو منافع بخش بنا کر فروخت کر دیں گے ۔ انہوںنے کہاکہ گزشتہ حکومت نے گندم کی امدادی قیمت نہیں بڑھائی ،جس کے باعث گندم کی پیداوار نہیں بڑھی ،گندم کی امدادی قیمت بڑھانے سے امداد بڑھی ،درآمدی گندم پر 600 روپے فی من سبسڈی دی ،مقامی گندم کی قیمت اب بھی درآمدی گندم کی قیمت سے 200 روپے فی من کم ہے ۔ انہوںنے کہاکہ یوٹیلیٹی اسٹورز کی کمپوٹرائزیشن کرنے سے سبسڈی ٹارگٹ کرنے میں مدد ملے گی ۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ مہنگائی میں کمی کیلئے وزیر اعظم نے صوبوں سے خود بات کی ،صوبوں کو بتایا کہ اقدامات کریں،پرائس مجسٹریٹ نظام دوبارہ لانے پر غور کر رہے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ پاکستان افغانستان کی مدد کرے گا ،افغانستان کے ساتھ روپے میں تجارت کریں گے ۔ انہوںنے کہاکہ تجارتی خسارہ بڑھا ہے اسکو کنٹرول کر لیں گے ۔ انہوںنے کہاکہ بجلی کی قیمت اکتوبر میں بڑھے گی یا نہیں اس کا مجھے معلوم نہیں ۔معاون خصوصی غذائی تحفظ جمشید اقبال چیمہ نے کہاکہ 34فیصد لوگوں کو پچھلے سال کی قیمت پر آٹا دینگے،چینی آٹا دالوں کی قیمتیں دسمبر تک ہم کم کرینگے۔انہوںنے کہاکہ کھانے کی اشیاء34فیصد سے 129فیصد تک دنیا میں مہنگی ہوئی ہیں،ہر ہفتے معیشت کی صورتحال سے عوام کو آگاہ کرینگے۔ وزیر مملکت فرخ حبیب نے کہاکہ عالمی سطح پر قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے،ستر فیصد دالیں ہم امپورٹ کرتے خوردنی تیل ہم امپورٹ کرتے،ہم زرعی اصلاحات کررہے ہیں تاکہ اجناس اپنی پیداوار ہوسکے،۔ انہوںنے کہاکہ پی ڈی ایم ،پی پی ،ن لیگ نے ملک کو تباہ کرنے کے علاوہ کیا کیا؟پی ڈی ایم کے اپنے ہی بے تحاشا مسائل ہیں۔ انہوںن ےکہاکہ سکلڈ مزدور کی دیہاڑی ایک ہزار سے 1200روپے ہوچکی،کاریگر ،کسان کی مزدوری میں اضافہ ہوا ہے۔ انہوںنے کہاکہ ہمیں مریم ،بلاول کہہ رہے تھے لاک ڈاﺅن کردیں،ہمیں کہا جارہا تھا لاک ڈاﺅن نہ لگایا تو ایف آئی آر عمران خان پر کٹے گی۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*