تازہ ترین

تربوز···سرخ،رسیلا اور توانائی بخش

تربوز کا اصل وطن جنوبی افریقہ ہے۔یہ پھل جنگلوں کی پیداوار ہے۔صحراؤں میں سفر کرنے والوں کے لئے نعمت خداوندی ہے۔اب یہ میدانی علاقوں میں بھی اُگتا ہے۔تربوز پھل دار پودے پر لگتا ہے۔جو بڑا اور وسیع بھی رہتا ہے اور گرمیوں کی خاص نعمت ہے۔پھل کا چھلکا سخت اور کھردرا ہوتا ہے۔چھلکوں پر ہرے اور گاڑھے ہرے رنگ کے پتے ہوتے ہیں۔اندر سے لال پھل خاصا میٹھا ہوتا ہے۔
تربوز کا سائنسی نام Citrullus Lanatus ہے اور انگریزی میں واٹرمیلن سندھی میں نیداڑوں،پنجابی میں ہدوانہ،عربی میں بطیخ،ترکی میں تاجور کے نام سے پکارا جاتا ہے۔تربوز 90 فیصد پانی اور 10 فیصد فولاد،پوٹاشیم،سوڈیم،کیلشیم،فاسفورس،نشاستہ اور روغنی اجزاء پر مشتمل ہوتا ہے۔تربوز جسم میں پانی کی کمی دور کرتا ہے،وزن میں کمی کرتا ہے۔
غذائیت سے بھرپور ہے۔
یہ اینٹی کینسر پھل ہے۔جلد اور دل کے امراض میں مفید ہے۔آنکھوں،نظام ہاضمہ اور پٹھوں کے درد کے لئے اکسیر ہے۔گردوں کے افعال کو بہتر بناتا ہے۔
تربوز کے نقصانات:
ذیابیطس کے مریضوں کو ڈاکٹر کے مشورے سے تربوز کھانا چاہئے۔یہ گریول بڑھا دیتا ہے۔کچھ لوگوں کو ریاح کی تکلیف بھی ہو سکتی ہے۔ پرانے ہوئے مرض کو دوبارہ زندہ کر سکتا ہے۔
نئی تحقیق:
اس وقت دنیا بھر میں 50 لاکھ سے زائد افراد زیر زمین پانی پینے پر مجبور ہیں،اس پانی میں موجود کیمیائی مادہ (سنکھیا) آرگینک کی مقدار پائی جاتی ہے۔جو انسانی جان کے لئے بے حد خطرناک ہے۔WHO کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ آرسینک ملا پانی ہر سال 43 ہزار سے زائد اموات کا سبب بنتا ہے۔پانی کے فلٹر مہنگے ہوتے ہیں اور عام آدمی انہیں خریدنے یا استعمال کرنے کی استطاعت نہیں رکھتا اس لئے فیصل آباد زرعی یونیورسٹی کے ماحولیات اور مٹی کے ماہر سائنسدان ڈاکٹر نبیل نے تربوز کے چھلکوں سے فلٹر بنایا اور دنیا بھر میں نام کمایا۔
اس تحقیق سے متعلق تفصیلات Science For The Total میں شائع ہوئی ہیں۔
ڈاکٹر نبیل نے بتایا کہ یہ ایجاد 2014ء میں کیسٹرا کی جانب سے General پروگرام میں ان کے پروجیکٹ منظور ہونے سے ملنے والی مالی مدد سے ممکن ہو سکی ہے انہوں نے بتایا کہ ان کی ٹیم کی توجہ ایسے غریب علاقوں پر لوگوں پر ہے جہاں اب تک بجلی نہیں اور نہ ہی لوگوں کے پاس مہنگے فلٹرز خریدنے کے لئے وسائل ہوتے ہیں۔
ورزش کرنے کے بعد تربوز کا جوس پینا بے حد مفید ہے۔یہ عضلات کی اکڑن اور تکھاوٹ فوری طور پر زائل کرنے کی خوبی رکھتا ہے۔بڑھتی ہوئی عمر میں جلد کی خشکی دور کرنے کے لئے بھی تربوز کھانا یا جوس پینا مفید ہے۔ اس میں لائیکوپین اور بیٹا کیروٹین موجود ہیں جو جھلسی ہوئی جلد کو نارمل کر سکتے ہیں۔
100 گرام تربوز کے غذائی اجزاء
کیلوریز 30 گرام
چکنائی 0.2 گرام
پولی ان سیچوریٹڈ فیٹ 0.1 گرام
کولیسٹرول 0 ملی گرام
سوڈیم 1 ملی گرام
پوٹاشیم 112 ملی گرام
کاربوہائیڈریٹس 8 گرام
فائبر 0.4 گرام
شکر 6 گرام
پروٹین 0.6 گرام
وٹامن 11A فیصد
وٹامن 13C فیصد
کیلشیم 0 فیصد
فولاد 1 فیصد
میگزیئم 2 فیصد
٭٭٭٭٭
٭٭٭٭٭٭٭٭

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*