تازہ ترین

تربت ائیر پورٹ کو جلد مکمل کیا جائے،عمران خان

Prime Minister of Pakistan Imran Khan

اسلام آباد /کوئٹہ ( آئی این پی ) وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت جنوبی بلوچستان ترقیاتی پیکج پر پیش رفت سے متعلق اعلی سطحی جائزہ اجلاس ہوا جس میں وزیراعظم نے ترقیاتی منصوبوں کی سست رفتاری اور وزیراعلی بلوچستان کی سربراہی میں ایپکس کمیٹی کا اجلاس نہ ہونے پر تشویش کا اظہار کیا۔وزیراعظم کو اجلاس میں بتایا گیا کہ ایک سال میں ایپکس کمیٹی کا صرف ایک اجلاس ہوا۔وزیر اعظم نے655ارب روپے کے 200ترقیاتی منصوبوں کو تیز کرنے کے لیے ہر ماہ ایپکس کمیٹی اور ہر 15 دن میں ایگزیکیوشن کمیٹی کے اجلاس منعقد کرنے پر زور دیا۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ تربت ایئرپورٹ کو جلد از جلد مکمل کیا جائے اور گوادر اور تربت میں 02نرسنگ کالجز جلد از جلد تعمیر کیے جائیں۔انہوںنے کہا کہ ترقیاتی منصوبوں کی تکمیل میں حائل رکاوٹوں کو دور کرنے کے لیے وہ ذاتی طور پر ہر ماہ جائزہ کمیٹی کے اجلاس منعقد کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ بلوچستان کے مسائل ملک کے دیگر حصوں سے مختلف ہیں کیونکہ اس کی آبادی پھیلی ہوئی ہے اور طویل فاصلوں کی وجہ سے ہمیں بلوچستان کے لوگوں کی زندگیوں کو بہتر بنانے کے لیے آٹ آف دی باکس حل تلاش کرنا ہوں گے۔وزارت منصوبہ بندی، ترقی اور خصوصی اقدامات، وزارت توانائی، وزارت سمندری امور اور حکومت بلوچستان کو پیکج کے تحت ٹرانسپورٹ، توانائی اور انفراسٹرکچر کے منصوبوں پر کام کو تیز کرنے کے لیے رابطہ کاری سے کام کریں۔ قبل ازیں وزیراعظم کو بریفنگ میں بتایا گیا کہ بلوچستان وسائل سے مالا مال صوبہ ہے کیونکہ یہ ملک میں مقامی طور پر پیدا ہونے والی گیس کا 40فیصد پیدا کرتا ہے۔ وزیراعظم نے بلوچستان حکومت کو ہدایت کی کہ وہ اپنے گورننس ڈھانچے کو نچلی سطح پر از سر نو تشکیل دے تاکہ نہ صرف ترقیاتی منصوبوں پر کام کی رفتار کو تیز کیا جائے بلکہ عام آدمی تک خدمات کی فراہمی کو بھی بہتر بنایا جائے۔ انہوں نے متعلقہ حکام کو بلوچستان کے عوام کی فلاح و بہبود کے لیے حکومتی اقدامات کے بارے میں زیادہ سے زیادہ عوامی آگاہی کو یقینی بنانے کے لیے ایک موثر میڈیا مہم چلانے کی بھی ہدایت کی۔ اجلاس میں وزیراعلی بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو، وزیر توانائی محمد حماد اظہر، وزیر صنعت مخدوم خسرو بختیار، وزیر اطلاعات چوہدری فواد حسین، وزیر بحری امور سید علی حیدر زیدی، وزیر منصوبہ بندی اسد عمر، مشیر خزانہ شوکت فیاض ترین، اور دیگر متعلقہ سینئر افسران نے شرکت کی۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*