تازہ ترین

این 25 شا ہر اہ کوڈبل بنا نے کے پر ا جیکٹ کے ٹینڈ ر کا آغاز

اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ سڑ کیں وقت کی اہم ضرورت ہے ان کے بغیر کوئی کام بھی نہیں ہو سکتا یہ زند گی کا ایک بنیا دی جزہے اس لیے ان کا ہونا انتہائی ن ا گزیر ہے لیکن افسوس کی با ت یہ ہے کہ بلوچستان جو ملک کا رقبہ کے لحا ظ سے سب سے بڑ ا صو بہ ہے لیکن اس کی اہم شا ہر اہیں نہ صر ف ٹو ٹ پھو ٹ کا شکا ر ہیں بلکہ یہ مو جو دہ حالات کے پیش نظر انتہائی چھو ٹی ہیں بعض تو یک رویہ ہیں جن میں چمن تا کوئٹہ کی اہم شا ہر اہ این 25 بھی شامل ہے جو یک رویہ ہے اس اہم شا ہر اہ کو دو رویہ نہیں کیا گیا جس کے باعث اس پر آئے رو ز ٹر یفک کے خطر نا ک حادثا ت ہو تے رہتے ہیں جن میں اب تک کئی قیمتی جا نیں ضا ئع اور زخمی ہو چکی ہیں کیونکہ اس اہم شا ہر اہ پر ٹر یفک کا بہت زیا دہ دبا ﺅ ہے یہ وا حد شا ہر اہ ہے جو ایک لمبے رو ٹ پر قا ئم ہے اس لیے اس شا ہر اہ کو دورویہ کر نے لیے عوام ایک عر صے سے مطا لبہ کر تی آرہی ہے لیکن افسو س کی با ت یہ ہے کہ گذشتہ حکومتوں نے اس اہم مسئلے کو نظر اند از کئے رکھا جس کی وجہ سے عو ام کو بہت زیا دہ جانی و ما لی نقصا ن ہو تا رہا ۔
بلوچستا ن کے سا بق وزیر اعلیٰ بلوچستان جا م کمال خان نے اس اہم شا ہر اہ کو دورویہ کرنے کے لیے اس پر ا جیکٹ کو وفا ق پی ایس ڈی پی میں شامل کر وایا اور اس طرح اس کی منظو ری ہو گئی اس سلسلے میں اس اہم پر ا جیکٹ کے ٹینڈ ر کا آغا ز بھی ہو گیا اب ملکی اور بین الا قوامی کنٹر یکٹ فر مز بولی دینے کے لیے کا غذا ت جمع کر یں گے اور اس طرح اس اہم منصو بے پر کام کا آغا ز ہو جا ئے گا جوکہ خو ش آئند با ت ہے پہلے عو ام کو اس شا ہر اہ کو دورویہ کر نے کی منظو ری کی انتظا ر تھا اور اب اس پر کام کے آغا ز کا انتظا ر ہے جسے جلد از جلد شروع ہونا چا ہیئے کیونکہ یہ وقت کی اہم ضرورت ہے۔
ہم سمجھتے ہیں کہ اس بڑ ے پر اجیکٹ کی منظو ری اور اس کے ٹینڈر کے مر حلے کا آغا ز اس سب کا کریڈ ٹ سا بق وزیر اعلیٰ بلوچستان جا م کمال خان کو جا تا ہے انہوں نے صو بے کے لیے یہ بہت بڑ ا کارنامہ سر انجام دیا ہے۔
اس لیے یہاں ضرورت اس امر کی ہے کہ بلوچستان میں آنے والی حکومت کو نہ صر ف اس اہم پر اجیکٹ پر کام جلد سے جلد شرو ع کرنا چا ہیئے بلکہ اس کے سا تھ سا تھ جو دیگر منصو بے التو اءمیں پڑ ے ہیںان پر بھی کام ہو نا چا ہیئے کیونکہ بد قسمتی کی با ت یہ ہے کہ وفا ق میں آنے والی سا بقہ حکومتو ں نے اس اہم صو بے کو مسلسل نظر اند ازکئے رکھا جس میں یہاں کی صو بائی حکومتو ں کا بھی کر دا ر رہاہے کیونکہ انہوں نے صو بے کی تر قی کے لیے وفا ق پر زور نہیں ڈالا اب پاکستان تحریک انصا ف کی وفا ق میں حکومت ہے اوریہ پار ٹی بلوچستان میں بھی قا ئم مخلو ط حکومت کا حصہ رہی اس طرح سا بق وزیر اعلیٰ بلوچستان جا م کمال خان نے وفا قی حکومت سے اس کا اتحا دی ہونے کے نا طے صو بے کے اس اہم پر اجیکٹ کے شر وع کرنے کے لیے کو شش کی اور اس طر ح ان کی کو شش رنگ لائی اور اس منصو بہ پر جلد کام شروع ہونیو الا ہے اس لیے بلوچستان میں آنے والی صو بائی حکومت کو سا بق حکومت کے اہم پر ا جیکٹ کو جا ری رکھتے ہوئے ان پر جلد از جلد کام شر وع کر نے کے اقد اما ت کر نے چاہئیں کیونکہ یہ کسی کا ذا تی نہیں بلکہ صو بے کا معاملہ ہے جو سب کا مشتر کہ معا ملہ ہے اس لیے سب کو مل کر اس پر کام کرنا چا ہیئے اس سلسلے میں اپو ز یشن کو بھی سیا سی مخالفت کو ایک جانب رکھ کر صو بے کی تر قی کے کاموں میں حکومت کا سا تھ دینا چا ہیئے کیونکہ یہ صو بہ سب کا مشتر کہ گھر ہے اس لیے اس کی بقا ءپر سیاست نہیں کرنی چا ہیئے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*