ملک میں آئین کی بالادستی کیلئے جد و جہد کر رہے ہیں،پی ڈی ایم

لورالائی(این این ائی) پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ کے سربراہ جمعیت علماءاسلام کے مرکزی امیر مولانا فضل الرحمان، پشتو نخواہ ملی عوامی پارٹی کے چیئر مین و پی دی ایم کے مرکزی نائب صدر محمود خان اچکزئی، جمعیت علماءاسلام کے مرکزی جنرل سیکرٹری سینیٹر مولانا عبد الغفور حیدری، مسلم لیگ ن کے سینئر مرکزی نائب صدر سینیٹر سردار محمد یعقوب خان ناصر ، نیشنل پارٹی کے مرکزی سینئرنائب صدر سینیٹر میر کبیر محمد شہی،عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر و پارلیمانی لیڈر سردار اصغر خان اچکزئی ، بی این پی مینگل کے مرکزی سینئر نائب صدر ملک ولی کاکڑ ، پاکستان پیپلز پارٹی کے صوبائی صدر حاجی علی مدد جتک ،مسلم لیگ (ن) کے صوبائی صدر حاجی جمال شاہ کاکڑ،پشتو نخواہ میپ کے صوبائی سیکڑٹری رحیم زیارتوال مرکزی جمعیت الحدیث بلوچستان کے مولانا عصمت اللہ سالم ،اے این پی کے مرکزی جوائنٹ سیکرٹری رشید خان ناصر، سردار زادہ نعمان خان ناصر و دیگر نے پاکستان دیموکریٹک موومنٹ کی کال پر بدھ کو لورالائی کے سرکاری باغ میں ایک بڑے احتجاجی جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ لورالائی کے عوام نے آج کے جلسے میں شرکت کرکے عمران خان کے جعلی اور ناجائز حکومت کے خلاف فیصلہ سنا دیا ہے انہوں نے کہا کہ عوام کے سمندر نے سلیکٹر اور سلیکٹید دونوں کے فیصلوں کو مسترد کر دیا ہے ملک میں آئین کی بالا دستی کیلئے جدوجہد کر رہے ہیں ہماری جنگ فوج سے نہیں ہے ملک کے تمام اداروں کو آئین کے تحت اپنے فرائض ادا کرنے چاہیے اس سے ملک جمہوری طو پر ر مظبوط ہوگا اور آئین کی پامالی کا سلسلہ بھی رک جائیگا انہوں نے کہا کہ ہم جمہوریت کی بساط لپیٹنے والوں کے خلاف ہیں پی ڈی ایم اسٹیبلشمنٹ پر واضح کرنا چاہتی ہے کہ ٓائین سب سے مقدس ہے ہم آئین پر عمل کرانا چاہتے ہیں آئین کو کاغذ کا ٹکڑا سمجھنے والوں سے پارلیمنٹ سمیت ہر فورم پر لڑائی جاری رہیگی انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ سے مستعفی ہو کر حکومت کیلئے وکٹ خالی نہیں چھوڑینگے ہم ہر محاز پر حکومت کے سامنے ڈٹ کر مقابلہ کرینگے انہوں نے کہا کہ عمران خان جھوٹ بھولنے میں بڑے ماہر ہیں جب وہ اپوزیشن میں تھے تو انہوں نے قوم سے کہا کہ کہ اگر ملک میں مہنگائی ہوتی ہے تو اسکا زمہ دار وزیر اعظم ہوگا لیکن آج ملک میں مہنگائی سے عوام تنگ آکر اپنے بچوں کو دریاوں میں پھینک کر خود کشیاں کرارہے ہیں لیکن وزیر اعظم کو کوئی پرواہ ہی نہیں انہوں نے کہا تھا کہ میرے خلاف عوام نے احتجاج کیا تو میں استعفی دے دونگا اسمیں بھی انہوں نے یو ٹرن لے لیا قوم سے ریاست مدینہ والا نظام لانے کا وعدہ کیا پھر کہا کہ میں چین کے نظام کے متاثر ہوں کھبی کہتا ہے کہ میں ایران اور ملائیشیا کے نظام سے متاثر ہوں ہمیں ڈر ہے کہ کل وہ کہیں گے کہ میں اسرائیل کے نظام سے بھی متاثر ہوں اور وہی نظام ملک میں اپلائی کرونگا امکے مسلسل جھوٹ سے قوم پوری دنیا کے سامنے شرمندہ ہے انہوں نے کہا کہ ملک میں چینی آٹا بجلی گیس تیل سمیت ہر ضروری اشیاءکو مہنگی کی جارہی ہے جس سے عوام کی زندگی آجیرن اور عذاب بن چکی ہے انہوں نے کہا کہ انیس جنوری کو اسلام آباد میں الیکشن کمیشن کے سامنے ریلی و مطاہرہ کرینگے حکمران اٹھارویں ائینی ترمیم کو ختم کرنے کا خیال دل سے نکال لے صوبوں کو پہلی مرتبہ این ایف سی ایوارڈ میں پورا حصہ اور حق ملا اسے ختم کرنے کی صورت میں حکومت کی اینٹ سے اینٹ بجا دینگے انہوں نے کہا کہ تمام قوموں کو ائین نے جوڑ رکھا ہے اسمیں چھیڑ چھاڑ کے خطرناک نتائج بر آمد ہو سکتے ہیں انہوں نے کہا کہ ملک کی خارجہ پالیسی کا یہ حال ہے کہ ستر سال سے پاکستان کے دوست ممالک سعودی عرب ایران افغانستان عرب امارات اور چین ہم سے ناراض ہیں اور مشکل وقت میں ہمیں قرضے دینے والے اب دوبارہ ہم سے اپنے قرضے واپس مانگ رہے ہیں کیونکہ انکو موجودہ حکمرانوں پر کوئی اعتماد نہیں رہا انہوں نے کہا کہ حکومت نے پچاس لاکھ گھر اور ایک کروڑ افراد کو روزگار دینے کے کسی بھی وعدے کا پاس نہیں کیا بلکہ لاکھوں مزدورں کو بے روزگار کر دیا انہوں نے کہا کہ اکتیس جنوری سے قبل عمران خان مستعفی نہ ہوئے تو پی ڈی ایم کے سربراہی اجلاس میں لانگ مارچ کا رخ اسلام آباد اور پنڈی دونوں کے جانب ہو سکتا ہے انہوں نے کہا کہ ملک معاشی طور پر کمزور ہے اور اس وقت ہم ایک انتہائی نازک صورتحال سے دو چار ہیں ملک میں سیاسی عدم استحکام پیدا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے پی ڈی ایم نے ابتک شرافت کی سیاست اور شائیسگی کا عملی مظاہرہ کیا ہے لیکن اگر وزیر اعظم کا یہی روئیہ برقرار رہا تو پھر ہم سے بھی پر امن رہنے کی کائی توقع نہ رکھی جائے انہوں نے کہا کہ کشمیر کا سودہ حکومت نے کر دیا ہے مودی کے الیکشن کے وقت عمران خان نے کہا تھا کہ مودی کی کامیابی کی صورت میں مسئلہ کشمیر حل کرنے میں بری مدد ملیگی اب مودی کی زبان ہم بول رہے ہیں یہ عمران خان انہوں نے کہا کہ کشمیر کی آزادی کی جنگ ہم ہی لڑینگے انہوں نے کہا کہ قوم لانگ مارچ کیلئے تیاری شروع کردین ہم درست وقت پر اپنے استعفے ضرور دینگے جو کہ تمام ممبران کے استعفے ہماری قیادتوں کے پاس جمع ہو چکی ہیں انہوں نے کہا کہ اسرائیل کو تسلیم کرنے کی تیاری ہو رہی ہے ہم مسئلہ فلسطین کے پائیدار اور دیر پا حل تک اسرائیل کے ساتھ کوئی بات چیت نہیں کرنے دینگے جلسے سے پی پی کے ڈویژنل صدر رحمت کدیزئی اے این پی کے صدر منظور کاکڑ ایڈوکیٹ صفدر میختر وال و دیگر نے بھی مختصر خطاب کیا

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*