ترقیاتی عمل کو کسی صورت متاثر نہیں ہونے دیا جائیگا ،وزیر اعلیٰ بلوچستان

Chief Minister Balochistan, Mir Jam Kamal

کوئٹہ(خ ن)وزےر اعلی بلوچستان جام کمال خان نے کہا ہے کہ مالیاتی وسائل کے مناسب استعمال اور نظم وضبط کو ہر صورت یقینی بنایا جائے گا اور اس حوالے سے کسی تساہل اور غفلت کو برداشت نہیں کیا جائے گا۔ صوبے میں ترقیاتی اسکیموں پر عملدرآمد کا جائزہ لینے کے موقع پر وزیراعلیٰ نے اس امر پر سخت ناپسندیدگی کا اظہار کیا کہ بعض افسران جاری ترقیاتی اسکیموں کے لئے جاری شدہ فنڈز کو اب تک استعمال نہیں کرسکے ہیں، انہوں نے ہدایت کی کہ ذمہ دار افسران کے خلاف سخت کاروائی عمل میں لائی جائے۔ وزیراعلیٰ نے پی ایس ڈی پی میں شامل ترقیاتی اسکیمات کی باقاعدہ مانیٹرنگ کے نظام کو م¶ثر بنانے اور پی ایس ڈی پر عملدرآمد کے عمل کو تیز کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ منصوبوں کی تکمیل میں تاخیر ، فنڈز کے ضیاع اور لیپس پر متعلقہ ذمہ داروں کے خلاف قانون کے مطابق سخت ایکشن لیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ صوبے کی تاریخ میں پہلی مرتبہ موجودہ صوبائی حکومت نے نئے مالی سال کے آغاز سے ہی ترقیاتی منصوبوں پر عملدرآمد شروع کرنے کی روایت ڈال دی ہے اور ترقیاتی عمل کے ثمرات بروقت عوام تک پہنچنے چاہئیں، وزیراعلیٰ نے ترقیاتی اسکیموں پر عملدرآمد کو یقینی بنانے سے متعلق محکمہ منصوبہ بندی وترقیات کو مانیٹرنگ کانظام بہتر بنانے کی تاکید کی۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ بعض اضلاع میں جاری ترقیاتی اسکیمات کے لئے ایکسیئنز کو فنڈز تو جاری کردیئے جاتے ہیں لیکن وہ یہ فنڈز استعمال کرنے سے اب تک قاصر ہیں جن کے خلاف فوری طور پر قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ ترقیاتی عمل کو کسی صورت میں متاثر نہیں ہونے دیا جائے گا۔ اس سے قبل اجلاس کو چیف سیکریٹری بلوچستان نے 77ترجیحی منصوبہ جات، کیپ اسکیمات اور انتظامی محکموں کی کارکردگی سے متعلق امور پر بریفنگ دی جبکہ ایڈیشنل چیف سیکریٹری ترقیات نے اجلاس کو آگاہ کیا کہ 2020-21ءکے ترقیاتی پروگرام میں 1597منصوبے شامل ہیں جن میں سے 1200 منصوبوں کی پی ڈی ڈبلیو پی اور ڈی ایس سی سے منظوری ہوچکی ہے جبکہ 397اسکیمات کی منظوری لینی ہے۔ انہوں نے اجلاس کو صوبائی پی ایس ڈی پی اسٹریٹیجی 2020-21ءسے متعلق آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ پبلک فنانس مینجمنٹ ایکٹ 2020ءنافذالعمل ہوگیا ہے جس کے تحت صرف منظور شدہ منصوبوں کو آئندہ پی ایس ڈی پی میں شامل کیا جائے گا۔ ترقیاتی منصوبوں کے لئے فنڈز کی اتھرائزیشن اور اجراءکے حوالے سے اجلاس کو آگاہ کیا گیا کہ اب تک 30بلین روپے سے زائد جاری اور نئی اسکیمات کے لئے اتھرائزڈ کئے گئے ہیں جبکہ 27اب روپے سے زائدفنڈز کا اجراءکیا گیا ہے، اجلاس کو فیڈرل پی ایس ڈی پی کے تحت نئی اور جاری اسکیمات سے متعلق بھی بریفنگ دی گئی۔ اجلاس کو ڈویژنل کمشنروں نے بذریعہ وڈیو لنک اہم نوعیت کے ترقیاتی منصوبوں اور اسپورٹس کمپلیکس کی تعمیر کے منصوبوں کے حوالے سے بھی بریف کیا۔ وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ منصوبوں کی بروقت اور معیاری تکمیل ہر صورت یقینی بنائی جائے۔ اجلاس میں صوبائی وزیر مواصلات وتعمیرات میر عارف جان محمد حسنی، صوبائی وزیر پی ایچ ای نورمحمد دمڑ، صوبائی مشیر کھیل وثقافت عبدالخالق ہزارہ، پارلیمانی سیکریٹری اطلاعات محترمہ بشریٰ رند، چیف سیکریٹری بلوچستان کیپٹن ریٹائرڈ فضیل اصغر، ایڈیشنل چیف سیکریٹری منصوبہ بندی وترقیات عبدالرحمن بزدار، سیکریٹری اطلاعات شاہ عرفان غرشین، متعلقہ محکموں کے سیکریٹریز، کمشنر کوئٹہ اور ڈویژنل کمشنروں نے بذریعہ وڈیو لنک شرکت کی۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*