فر انس میں گستا خا نہ خا کو ں کی اشا عت

گذ شتہ رو ز فر انس میں ایک با ر پھر حضر ت محمد کی شا ن میں گستا خانہ خا کو ں کی اشا عت کی گئی جس کا دنیا بھر کے مسلما نو ں کو شد ید رنج ہے ان میں شد ید غم و غصہ پا یا جا رہا ہے کیو نکہ فر انس کا یہ نا رو ااقد ام قا بل مذمت ہے اور یہ بر اہ را ست اسلا م پر حملہ کرنے کے متر ادف ہے اس پر پو ری دنیا کے مسلما ن خا مو ش نہیں رہ سکتے کیو نکہ مسلما نوں کا عقید ہ ہے کہ نبی آخر زما ن حضر ت محمد پر ان کا جان و ما ل سب کچھ قر با ن ہے وہ ان کی شا ن میں کی گئی کسی بھی قسم کی گستا خی کو بر دا شت نہیں کر یں گے کیو نکہ حضر ت محمد اللہ کے آخر ی نبی ہیں اور مسلما نو ں کو فخر ہے کہ وہ حضر ت محمد کے امتی ہیں۔
فر انس میں گستا خانہ خا کو ں کی اشا عت کیخلا ف جہا ں دنیا بھر کے مسلما ن شد ید غم و غصہ کا شکا ر ہیںوہ وہا ں فر انس کی اس حر کت پر سر ا پا احتجا ج بھی ہیں۔
یہ پہلا مو قع نہیں ہے اس سے پہلے بھی حضر ت محمد کی شا ن میں گستا خا نہ خا کو ں کی اشا عت ہوئی ہے جس پر مسلما نو ں نے شد ید رد عمل کر تے ہوئے ان اسلام دشمنو ں پر وا ضح کر دیا ہے کہ وہ حضر ت محمد کی شا ن میں کسی قسم کی گستا خی بر دا شت نہیں کر یں گے اور اگر ان کی اپنی جا نیں بھی قر با ن کرنی پڑ یں کریں گے مسلما نو ں کے اس شد ید رد عمل نے د شمنو ں پر یہ وا ضح کر دیا ہے کہ مسلما نو ں کے لیے حضر ت محمد بہت بڑی ہستی کامقام رکھتے ہیں۔
فرانس میں گستا خا نہ خاکو ں کی اشا عت کیخلا ف پا کستان کی صوبائی اسمبلیوں اور سینٹ میں مذمتی قر ار دا د یں منظو ر کی گئیں جس میں فر انس کے اس نا رو ا عمل کی شد ید مخا لفت کر تے ہوئے مطا لبہ کیا ہے کہ فر انس کے سفیر کو اس وقت تک ملک سے نکا ل دیا جائے جب تک وہ امت مسلمہ سے معا فی نہیں مانگ لیتے اس کے سا تھ سا تھ گستا خانہ خاکو ں کی اشا عت سے مسلما نوں کی دل آز ا ری ہو ئی ہے پیغمبر اسلا م حضر ت محمد اور مذ ہب کی شا ن میں گستا خا نہ عمل عا لمی سطح پر تعصب اور نسل پر ستی کو ہو ا دینے کی سا ز ش ہے۔
ہم سمجھتے ہیں کہ اس سلسلے میں او آئی سی کی خا مو شی ایک لمحہ فکر یہ ہے اس کو ایسے اقد اما ت پر خا مو ش تما شا ئی نہیں بننا چا ہیئے بلکہ اپنے پلیٹ فا رم سے ان مما لک کیخلا ف کا رو ائی کر نی چا ہیئے تا کہ وہ آئند ہ ایسے اقد ا ما ت کرنے سے گریز کر ے اس کے سا تھ سا تھ اقو ام متحد ہ اور دیگر عا لمی ادا رے بھی اس اہم مسئلے پر خا مو ش ہیں انہو ں نے اس سلسلے میں ایک مذمتی بیان تک جا ری نہیں کیا ہونا تو یہ چا ہیئے تھا کہ وہ اس کی شد ید مخا لفت کر تے ہوئے اس کے مر تکب مما لک چا ہے وہ فر انس ہو یا کوئی اور کیخلا ف سخت اقد اما ت کرنے چاہئیں جو کہ وہ نہیں کر رہا اس کے اس اقد ام سے یہ نتیجہ اخذ کیا جا سکتا ہے کہ اقو ام متحدہ اور دیگر عا لمی ادا رے جا بند ا ری کا مظا ہر ہ کر رہے ہیں اگر یہا ں کوئی غیر مسلم ملک کوئی ایسا اقد ام کرتا تو یہ ادا رے اس کے خلا ف فو ری طو ر پر ایکشن لیتے لیکن جب مسلما نو ں کے خلا ف کوئی غیر مسلم کوئی بھی ایسی نا رو ا حر کت کر تا ہے تو اس پر یہ ادا رے خا مو ش تما شائی بن جا تے ہیں ۔
یہا ں پر او آ ئی سی کو اس سلسلے میں سخت ایکشن لیتے ہوئے ایسے مما لک جو گستا خا نہ خاکے بنا کر مسلما نو ں کی دل آ زا ر ی کریں کیخلا ف سخت کا رو ائی کر نی چا ہیئے اسے اقو ام متحدہ اور دیگر ادا رو ں کی جا نب نہیں دیکھنا چا ہیئے بلکہ تما م مسلما ن مما لک کو متحد کرنا چا ہیئے اور دنیا میں ایک مسلم طا قت بنا ئے جو کسی کی محتا ج نہ ہو جو کہ وقت کی اہم ضرورت ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*