بلوچستان میں پائے جانے والا احساس محرومی ترجیحی بنیادوں پر ختم کیا جائیگا،شہر یار آفریدی

minister of state for interior

کوئٹہ (ہ ا) چیئرمین کشمیر کمیٹی شہریار آفریدی نے کہا کہ بلوچستان میں پائے جانے والا احساس محرومی ترجیحی بنیادوں پر ختم کی جائیگی اور صوبے کے عوام کو بنیادی حقوق کی فراہمی یقینی بنائی جائیگی یہ بات انھوں نے پارلیمنٹرین کے مشاورتی ورکشاپ بعنوان پیغام پاکستان سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔ورکشاپ کا انعقاد غیر سرکاری تنظیموں کے زیر اہتمام کیا گیا تھا ۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پیغام پاکستان کا مقصد پارلیمنٹرین کی استعداد کار میں اضافہ اور انھیں ملکی و بین الاقوامی معاملات سے متعلق مکمل آگاہی فراہم کرنا ہے انھوں نے کہا کہ ترقیاتی منصوبوں میں اپنے حلقوں کے مسائل اجاگر کرنا عوامی نمائندوں کا اولین فرض ہے۔ انھوں نے کہا کہ اپنے مفادات کی بجائے ملکی مفادات کو ترجیح دینا چاہئے سب سے پہلے ملکی مفادات کو ترجیحات میں شامل کرنے سے علاقائی سطح پر سامنے آنے والے مسائل پر جلد قابو پالیا جا سکتا ہے۔ انھوں نے کہا کہ یہ دنیا کی تاریخ ہے کہ ملکوں اور قوموں پر امتحانات اور مسائل آتے رہتے ہیں اس طرح کے مسائل پر قابو پانے کے لئے اتفاق و اتحاد کی ضرورت ہے۔ انھوں نے کہا کہ کہ ملک میں تمام ادارے اپنے آئینی حدود میں رہتے ہوئے کام کر رہے ہیں۔ شہریار آفریدی نے کہا کہ ملک کے کم ترقی یافتہ علاقوں کی ترقی پر خصوصی توجہ دیتے ہوئے وہاں زندگی کے بنیادی ضروریات فراہم کرنے کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں چیئرمین کشمیر کمیٹی نے کہا کہ میں آج کے اس پلیٹ فارم سے بلوچستان کے مسلح تنظیموں اور پی ٹی ایم کے نمائندوں کو دعوت دیتا ہوںکہ وہ آئیں اور ملکی ترقی اور خوشحالی کے لئے جاری عمل میں اپنا حصہ ڈالیں۔در یں اثنا ءچیئرمین پارلیمنٹری کمیٹی برائے کشمیر شہریار آفریدی نے سردار بہادر خان وومن یونیورسٹی کے شہیدطالبات کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ دختران ملت نے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرتے ہوئے بلوچستان میں علم کے چراغ کو بجھنے نہیں دیا۔ دشمنان پاکستان نہیں چاہتے کہ یہاں پر امن و امان ہو ۔ شہریارآفریدی نے ایس بی کے اساتذہ اور طلباءکے والدین کو سلام پیش کیا اور امید ظاہر کی کہ وہ اسی محنت اور لگن سے بلوچستان میں خواتین کو علم کی زیور سے آراستہ کرنے کے لئے اپنی ذمہ داریاں جاری رکھےں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایس بی کے، اسلامک یونیورسٹی اور سینٹر فار پیس کے تعاون سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ کشمیریوں کو اس بات پر نشانہ بنایا جارہا ہے کہ وہ پاکستان کی حمایت کرتے ہیں اور اپنے شہداءکو پاکستانی پرچم میں سپردخاک کرتے ہیں۔ انہوں نے آسیہ اندرانی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ وہ ایک غیر مند خاتون ہے اور ان کا شوہر گزشتہ 28 سال سے سلاخوں کے پیچھے ہیں اور ان کو صرف پاکستان سے محبت کی سزا دی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسلام نے خواتین کو جو عزت دی اس کی مثال دنیا میں نہیں ملتی۔ شہر یار آفریدی نے طالبات کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ قوموں پر آزمائش آتی ہے اور ہمیں ان آزمائشوں سے نبردآزما ہونے کے لئے اتحاد اور اتفاق سے اس کا مقابلہ کرنا ہوگا۔ تقریب سے انٹرنیشنل اسلامک یونیورسٹی کے سربراہ پروفیسر ڈاکٹرمعصوم یاسین زئی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی یونیورسٹیاں عالمی سطح پر کسی بھی یونیورسٹی سے پیچھے نہیں اور طلباءو طالبات اس جدید دور کے چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کے لئے کمربستہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ایک خوبصورت ملک ہے اور اللہ تعالیٰ نے ہم پر مہربانی کی ہے اور اس میں بہترین تعلیمی ادارے ہیں جس سے طلباءو طالبات مستفید ہورہے ہیں۔ انہوں نے طالبات کے والدین اور اساتذہ سے کہا کہ ہماری بقاءہم آہنگی اور ایک دوسرے کی عزت میں ہے۔ تقریب سے وائس چانسلرSBK ڈاکٹر ساجدہ نورین اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔ اس موقع پر گورنر بلوچستان امان اللہ خان یاسین زئی کی اہلیہ بھی موجود تھیں۔ تقریب میں SBK کے شہید طالبات کے لئے دعا بھی کی گئیں۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*