حکومت سی پیک میں بلوچستان سے متعلق تمام منصوبوں کی تکمیل یقینی بنائیگی، لیاقت شاہوانی

Liaquat Shahwani

کوئٹہ(خ ن)ترجمان حکومت بلوچستان لیاقت شاہوانی نے سابق وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا امیر حیدر ہوتی کے بلوچستان سے متعلق سی پیک کے بیان کو حقائق کے منافی قراردیتے ہوئے کہا ہے کہ موجودہ صوبائی حکومت وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کی قیادت میں سی پیک میں شامل بلوچستان کے ترقیاتی، توانائی انفراسٹرکچر اوشو اکنامک اور دیگر اہم منصوبوں کو عملی جامہ پہنارہی ہے جس کی نظیر گذشتہ دور میں نہیں ملتی، موجودہ حکومت سی پیک میں بلوچستان سے متعلق ان تمام منصوبوں کی تکمیل کو یقینی بنائے گی جس کو ماضی میں نظر انداز کیا گیا، انہوں نے کہا کہ 132کے وی ٹرانسمیشن لائن، مکران کا قومی گرڈ سے منسلک کرنا، ژوب کچلاک N-50 روڈ کی اپ گریڈیشن، خضدار بسیمہ روڈ جس پر گذشتہ دور میں کوئی پیشرفت نہیں ہوئی لیکن موجودہ صوبائی حکومت نے اس منصوبے پر فزیکل ورک کے کام کا آغاز کردیا ہے، انہوں نے کہا کہ بوستان میں سپیشل اکنامک زون جس کی منظوری موجودہ حکومت نے وفاقی سپیشل اکنامک زونز کمیٹی سے لی ہے جس سے گیس اور بجلی کی سپلائی کے مسئلے کو حل کیا جارہا ہے جبکہ بوستان کے منصوبے کا بہت جلد سنگ بنیاد بھی رکھا جائے گا اور نوکنڈی، ماشکیل، پنجگور روڈ جو کہ گذشتہ چار سالوں سے التوا کا شکار تھی جس کی منظوری سی ڈی ڈبلیو پی نے(CDWP)دے دی ہے، اس کے ساتھ ساتھ دس نئے سوشو اکنامک منصوبے بھی شامل ہیں جن میں برن سینٹر کا قیام، واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ کی تنصیب، پاک چائنہ فرینڈ شپ ہسپتال گوادر، ٹیکنیکل اینڈ فزیکل ورک، گوادر سمارٹ پورٹ سٹی ماسٹر پلان پر کام کی تکمیل، گوادر میں بین الاقوامی ایئرپورٹ پر کام کا آغاز، گوادر ایسٹ بے ایکسپریس وے، کوئٹہ کراچی دورویہ شاہراہ، ہوشاب آواران روڈ اور M.کی اپ گریڈیشن سمیت دیگر کئی ایسے اہم منصوبے شامل ہیں جنہیں گذشتہ دور میں نظرانداز کیا گیا ہے، انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کی تحریک پی ڈی ایم کی اہم ترین جماعت کی گذشتہ دورمیں حکومت تھی اور اس جماعت نے سی پیک میں بلو چستان کونظر انداز کیا جبکہ موجودہ صوبائی حکومت نے وفاق کے ساتھ روابط اور تعاون کو فروغ دیا ہے جسکے باعث سی پیک میں ترجیحی بنیادوں پر بلو چستان کے لئے منصوبے شامل کیے گئے ہیں ان منصوبوں کی تکمیل سے بلوچستان میں ترقی کے نئے دور کا آغاز ہوگا اور مجموعی طور پر بلوچستان کے عوام میں پائی جانے والی احساس محرومی کا خاتمہ بھی ہوگا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*