پی ڈی ایم کاسربراہی اجلاس، مولانا فضل الرحمن پہلے صدر منتخب

اسلام آباد(آئی این پی) پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم)کے سربراہی اجلاس میں مولانا فضل الرحمن کو اتفاق رائے سے پی ڈیم ایم کا پہلا صدر منتخب کر لیا گیا مسلم لیگ( ن) کے قائد میاں نواز شریف نے ان کا نام تجویز کیا اور چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو نے تائید کی روٹیشن کی بنیاد پہ صدر کے عہدہ کی مدت کا تعین، دیگر مرکزی اور صوبائی عہدیداروں کا چنا ﺅپی ڈی ایم ا سٹئیرنگ کمیٹی کرے گی،پاکستان مسلم لیگ(ن) کے سینئر رہنما اور اپوزیشن اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے کنوینر احسن اقبال نے پی ڈی ایم کے ورچوئل اجلاس کے فیصلوں سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ پی ڈی ایم کی جمہوری جدوجہد پاکستان میں آئین کی بالادستی، قانون کی حکمرانی اور عوام کے معاشی حقوق کے تحفظ کے لئے ہے، احسن اقبال نے کہا کہ پی ڈی ایم کی اسٹیئرنگ کمیٹی کا اجلاس پانچ اکتوبر کو طلب کیاگیا ہے ،اسٹیئرنگ کمیٹی پی ڈی ایم کے احتجاجی تحریک کے پروگرام کو حتمی شکل بھی دے گی ،تمام جماعتیں جلسے پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم سے کریں گی، پی ڈی ایم سربراہی ورچوئل اجلاس میں محمدنوازشریف، بلاول بھٹو ، مولانا فضل الرحمن ، ڈاکٹر عبدالمالک ، سردار اختر مینگل، آفتاب احمد خان شیرپاو، امیر حیدر ہوتی، پروفیسر ساجد میر، اویس نورانی، احسن اقبال بھی شریک ہوئے اجلاس میں سابق وزرااعظم یوسف رضاگیلانی، راجہ پرویز اشرف، شاہد خاقان عباسی ،شیری رحمن، مریم اورنگزیب ، محسن داوڑ بھی شریک تھے،اجلاس کے فیصلوں سے آگاہ کرتے ہوئے احسن اقبال نے بتایا کہ مولانا فضل الرحمن کی قیادت اور بصیرت پر پی ڈی ایم کی تمام جماعتوں نے بھرپور اعتماد کا اظہار کیا، ان کا کہنا تھا کہ پی ڈی ایم کی جمہوری جدوجہد پاکستان میں آئین کی بالادستی، قانون کی حکمرانی اور عوام کے معاشی حقوق کے تحفظ کے لئے ہے،سلیکٹڈ مینڈیٹ چور حکومت کا پی ڈی ایم کو بھارت سے جوڑنا اس کے حواس باختہ ہونے کی دلیل ہے، پی ڈی ایم کے اجلاس میں 2 قرار دادیں متفقہ منظور پر منظور کی گئیں،پی ڈی ایم کے اجلاس میں پاس کی گئی قراردادوں میں کہا گیا ہے کہ تین مرتبہ عوام کے منتخب ،جوہری دھماکہ کرنے والے وزیر اعظم پر ملک دشمنی کا الزام قابل مذمت ہے، جبکہ پاس کردہ دوسری قرارداد میں کہا گیا ہے کہ پی ڈی ایم کا ہدف عوام کی حکمرانی کا وہ تصور ہے جس کی نشاندہی قائد اعظم نے کی تھی ، احسن اقبال نے میڈیا گفتگو میں اجلاس کی تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ قائد حزب اختلاف شہبازشریف کی گرفتاری کی شدید مذمت کرتے ہیں، گھریلو خواتین کو کٹہروں میں لانا کم ظرفی کی انتہاہے، پی ڈی ایم کی قرارداد میں اپوزیشن راہنماﺅں کی گرفتاری گلگت بلتستان کے انتخابات چرانے کی سازش قرار دیا گیا، اجلاس کے بعد کہا گیا کہ گرفتاریوں اور بھارت کارڈ استعمال کرکے پی ڈی ایم کی آئینی اور جمہوری تحریک اب نہیں رکے گی، پی ڈی ایم اجلاس میں مہنگائی کیخلاف بھی قرار داد منظور کی گئی جس میں کہا گیا ہے کہ مہنگائی، بے روزگاری اور معاشی تباہی کی ستائی عوام جعلی حکومت سے نجات چاہتے ہیں۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*