تازہ ترین

اسرائیل کو تسلیم کرنے کی کوئی تجویز زیرغور نہیں،ترجمان دفتر خارجہ

اسلام آباد(آئی این پی)ترجمان دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ مسئلہ فلسطین پر پاکستان کے موقف میں کوئی تبدیلی نہیں آئی اور اسرائیل کو تسلیم کرنے کی کوئی تجویز زیرغور ہے ،پاکستان اور سعودی عرب کے تعلقات میں کوئی کشیدگی نہیں آئی ، او آئی سی نے کشمیر میں بھارتی مظالم پر کئی قراردادیں منظور کیں۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کو ایک سال ہوچکا ہے، کشمیریوں کی قربانیاں جدوجہد آزادی کو مزید مستحکم کررہی ہیں، بھارت مقبوضہ کشمیر میں جبروتشدد سے کشمیریوں کا جذبہ آزادی نہیں دباسکتا، پاکستان مقبوضہ میں جعلی مقابلوں میں کشمیریوں کی ماورائے عدالت قتل کی مذمت کرتا ہے۔دفتر خارجہ میں ہفتہ وار بریفنگ کے دوران ترجمان نے کہا کہ مقبوضہ وادی میں کشمیری نوجوانوں کو ریاستی دہشتگردی کا نشانہ بنایا جارہا ہے، رواں سال قابض بھارتی افواج نے جعلی مقابلوں اور سرچ آپریشنز میں 200کشمیریوں کو شہید کیا، بھارت نے ایک سال سے کشمیریوں کو تمام بنیادی انسانی سہولیات سے محروم کر رکھا ہے۔زاہد حفیظ کا کہنا تھا کہ بھارت میں اقلیتوں پر مظالم کسی سے ڈھکے چھپے نہیں، بھارتی حکومت ہندوتوا پالیسی پر گامزن ہے، بھارتی حکومت اقلیتوں کے تحفظ کو یقینی بنائے۔ترجمان نے کہا کہ بھارت نہیں چاہتا کہ کلبھوشن کے معاملے پرپاکستان بہتر انداز میں آئی سی جے کے فیصلے پر عملدرآمد کرسکے، کلبھوشن پر بھارت 2 قونصلر رسائیاں حاصل کرچکا ہے اور ہم نے تیسری قونصلر رسائی کی پیشکش بھی کر رکھی ہے، ہم بھارت پر زور دیتے ہیں کہ وہ بیان بازی کے بجائے عدالتوں سے تعاون کرے۔یک سوال کے جواب میں ترجمان کا کہنا تھا کہ اسرائیل کو تسلیم کرنے کی کوئی تجویز زیرغور نہیں اور پاکستان کا اسرائیل کو تسلیم کرنے کا کوئی ارادہ نہیں، مسئلہ فلسطین پر پاکستان کے موقف میں کوئی تبدیلی نہیں آئی، پاکستان فلسطینیوں کے دو ریاستی حل کا حامی ہے، پاکستان القدس دارالحکومت کے ساتھ آزاد فلسطینی ریاست کا حامی ہے۔انہوں نے کہا کہ پاک سعودی تعلقات تاریخی، مضبوط اور دیرپا ہیں، وزیرخارجہ کے دورہ چین کا سعودی عرب سے کوئی تعلق نہیں۔ترجمان نے بتایا کہ وزیرخارجہ چین کے دورے پر گئے ہیں جس میں کورونا، باہمی تعلقات، علاقائی اور عالمی امور پر بات ہوگی، وزیرخارجہ کا دورہ آزمودہ تعلقات کو مزید مضبوط کرے گا۔ترجمان دفتر خارجہ زاہد حفیظ نے ہفتہ وار میڈیا بریفنگ میں کہا کہ مسئلہ فلسطین پر پاکستان کے موقف میں کوئی تبدیلی نہیں آئی، پاکستان ایسے دو ریاستی حل کا حمایتی ہے جس میں القدس الشریف فلسطین کا دارالحکومت ہو۔ انہوں نے کہا کہ سعودی عرب اور پاکستان کے مابین مضبوط تعلقات ہیں، جنرل (ر)راحیل شریف کے سعودی عرب میں سٹیٹس میں کوئی تبدیلی نہیں آئی، پاکستان حرمین شریفین کے تحفظ کیلئے پر عزم ہے۔ترجمان نے مزید کہا کہ بھارت نے مقبوضہ کشمیر کو دنیا کی سب سے بڑی جیل بنا دیا ہے، پاکستان کشمیریوں کے حق خود ارادیت کیلئے انکی حمایت جاری رکھے گا، بھارت میں نفرت انگیزجرائم بی جے پی کی ہندتوا پالیسیوں اورسوچ کا نتیجہ ہیں۔ کلبھوشن سے متعلق عالمی عدالت انصاف کے فیصلے میں 4 نکات شامل تھے، بھارتی جاسوس کو اس کے حقوق بارے بتانا تھا، کلبھوشن کی سزا پرعملدرآمد کیلئے نظرثانی کے فیصلے تک حکم امتناع دیا گیا، کلبھوشن یادیو کو قونصلر رسائی دینا بھی اس میں شامل تھا۔ امید ہے بھارت پاکستانی عدالتوں سے تعاون کرے گا، بھارتی حکومت الزم تراشیوں کی بجائے عدالتی فیصلے پرعملدرآمد کرنے میں تعاون کرے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*