کو رونا وا ئر س کے پھیلا ﺅ پر اظہا ر تشویش

صو بے میں کو رونا وا ئر س اور ٹڈی دل کی رو ک
تھا م سے متعلق امو ر کا اعلیٰ سطح پر جا ئز ہ لینے کے لیے گذ شتہ
رو ز وز یر اعلیٰ بلوچستا ن کی زیر صد ارت اجلا س ہو ا جس میں سما رٹ لا ک ڈاﺅن ،عوام کے عد م تعا و ن اور احتیا طی تد ابیر پر عمل در آمد نہ کر نے کے با عث کو رونا وا ئر س کے پھیلا ﺅ پر اظہا ر تشو یش کیا گیا اجلا س میں سر کا ری ہسپتا لو ں میں
سما رٹ او پی ڈی کے آغا ز کا فیصلہ کیا گیا اجلا س کو بتا یا گیا کہ نجی ہسپتا لوں اور رجسٹر ڈ کلینکس میں او پی ڈی اور علا ج معا لجہ پر پا بند ی نہیں تا ہم حفا ظتی تد ابیر کی ایس او پی پر عمل در آمد
لا زم ہو گا وزیر اعلیٰ بلوچستا ن جا م کما ل خا ن کا اجلا س سے خطاب کے دو را ن کہنا تھا کہ کو رونا وا ئر س رو ز مر ہ کی زند گی کا حصہ بنتا جا رہا ہے احتیا طی تدا بیر پر عمل در آمد ہی وا ئر س سے بچنے کا وا حد طر یقہ ہے۔
وزیر اعلیٰ بلوچستا ن جا م کما ل خان کی زیر صد ارت ہونے والے مذکو رہ اجلا س میں کو رونا وا ئر س کے پھیلا ﺅ پر اظہا ر تشو یش کیا گیا جو یقینا پر یشا ن کن با ت ہے کیونکہ اس کے ذمہ دا ر عوام خو د ہیں حکومت نے عوام کو ان کی معا شی
حا لت کے پیش نظر لا ک ڈاﺅن کو سما رٹ لا ک ڈاﺅن میں
تبد یل کیا تھا تا کہ غر یب لو گ رو ز گا ر کر سکیں کیو نکہ مکمل لا ک ڈاﺅن کے دوران ا ن کی معا شی حا لت بہت ہی خر اب ہو گئی تھی حکومت نے مکمل لا ک ڈا ﺅ ن کو سما رٹ لا ک ڈاﺅن میں تبد یل کیا لیکن افسو س کی با ت یہ ہے کہ عوام نے حکومت کی جا نب سے جا ری کر دہ ایس او پیز کی خلا ف ور زیا ں شر وع کر دیں اور خصو صا ً عید الفطر کے مو قع پر تو اس سلسلے میں عوا م نے تما م حد یں پا ر کر لیں انہو ں نے احتیا طی تد ابیر کو با لکل نظر اند از کر دیا جس کے نتیجے میں صو بے میں کو رونا وا ئر س کے کیسز کی تعدا د میں رو ز بر و ز اضا فہ ہو تا گیا اور اس دوران کئی قیمتی جا نیں ضا ئع بھی ہو ئیں اس لیے مذکو رہ اجلا س میں اس صو رتحال پر تشو یش کا اظہا ر کیا گیا۔
مذکو رہ اجلا س میں سرکا ری ہسپتا لو ں میں جو سما رٹ او پی ڈیز کے آغا ز کا جو فیصلہ کیا گیا ہے وہ قا بل تعر یف ہے کیو نکہ اس او پی ڈیز کی بند ش سے غر یب عوا م کو بہت مشکلا ت کا سا منا کر نا پڑ رہا تھا جو پر ا ئیو یٹ ہسپتا لو ں اور کلینکس میں
علا ج کر انے کی سکت نہیں رکھتے ہیں ا ن کا یہ مطا لبہ حکومت نے منظو ر کر کے احسن اقد ام کیا ہے۔
اس میں کوئی شک نہیں کہ اب کو رونا وا ئر س رو ز مر ہ زند گی کا حصہ بنتا جا رہا ہے اس لیے اس کے سا تھ احتیا طی تدا بیر کو بھی مستقل بنیا دو ں پر کر نا ہو گا اگر ایسا نہ کیا گیا تو اس سے مز ید نقصا ن ہو نے کا خد شہ ہے جو جا ن لیو ا بھی ہو سکتا ہے۔
اس لیے یہا ں ضرورت اس امر کی ہے کہ عوا م کو وزیر اعلیٰ بلوچستان جا م کما ل خان کے مذکو رہ بیان جس میں انہو ں نے کہا ہے کہ اب کو رونا وا ئر س رو ز مر ہ زند گی کا حصہ بنتا جا رہا ہے پر عمل در آمد کر تے ہو ئے احتیا طی تد ایبر کو بھی زند گی کا حصہ بنا نا چا ہیئے کیو نکہ ایسا کر نا بے حد ضروری ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*