تازہ ترین

اپوزیشن کورونا سے متعلق تجاویز دے ہم خوش آمدید کہیں گے،فردوس عاشق

Firdous Ashiq Awan

اسلام آباد(آئی این پی) وفاقی کابینہ نے سکو ک بانڈز اور کورونا وبا کے باعث عوام کیلئے 1200 ارب روپے سے زائد کے ریلیف پیکیج کی باضابطہ منظوری دیدی جبکہ اجلاس میں15بین الاقوامی پروٹوکول کنونشن کی منظوری دی گئی۔ کابینہ میں چاروں صوبوں میں گڈز ٹرانسپورٹ کھولنے کا فیصلہ ہوا،وزیراعظم نے رینجرز کو سندھ میں گڈز ٹرانسپورٹ کے مسائل حل کرنے ،بھٹہ مزدوروں کے بنیادی حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے ، ریلوے ،ایف بی آر اورپی آئی اے میں اصلاحات لانے کی ہدایت کی۔کابینہ اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے معاون خسوصی اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ آٹے اور اشیائے ضروریہ کی ترسیل کیلئے نیشنل کوارڈینیشن کمیٹی کا اجلاس (آج)بدھ کو طلب کیا گیا ہے، وزیراعظم ریلیف فنڈ میں سب سے پہلے اپوزیشن لیڈر حصہ ڈالیں،آپ کا شمار ملک میں زیادہ اثاثے رکھنے والے خاندان میں ہوتا ہے،اپوزیشن لیڈر کورونا زدہ سوچ کو کورنٹائن کریں ،یہ وقت سیاست کرنے کا نہیں ہے،اپوزیشن لیڈر سیاسی مفاد کی عینک اتار کر عوامی مسائل کا حقیقی طور پر جائزہ لیں،اپوزیشن کورونا سے متعلق تجاویز دے ہم خوش آمدید کہیں گے۔منگل کو وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا، جس میں6 نکاتی ایجنڈے پر غور کیا گیا، کابینہ کو کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے کیے گئے اقدامات پر بریفنگ دی گئی۔ اجلاس کے دوران وفاقی وزیر مراد سعید نے کہا کہ وزیراعظم کے بروقت اور درست اقدامات کو نمایاں انداز میں پیش نہیں کیا جاتا۔ کابینہ نے 1200 ارب روپے کے ریلیف پیکیج کی منظوری دے دی جب کہ کابینہ کمیٹی برائے قانون سازی کے فیصلوں کی بھی توثیق کردی۔اجلاس کے دوران ایکسپورٹرز کا مال روکے جانے کے معاملے پر بھی بحث ہوئی، وفاقی وزیر فیصل واوڈا نے کہا کہ وزیراعظم کی ہدایات کے باجود تا حال عمل درآمد نہیں ہوا، وزیراعظم نے ایکسپورٹرز کا مال روکے جانے کی اطلاعات کا نوٹس لیتے ہوئے ہدایت کی کہ گڈز ٹرانسپورٹ سمیت ایکسپورٹرز کا مال نہیں روکا جانا چاہیے، اجلاس کے دوران کابینہ ارکان نے کہا کہ ٹرک اڈوں پر ٹرانسپورٹرز کے ہوٹل کے ہوٹل بند ہیں جس کی وجہ سے ڈرائیورز کچھ کھا پی نہیں سکتے، جس پر اجلاس کے دوران ٹرانسپورٹرز کے لئے مخصوص ڈھابہ ہوٹلز کھولے جانے کی تجویز پر بھی غور کیا گیا۔کابینہ اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے معاون خصوصی اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ کابینہ اجلاس میں 6 نکاتی ایجنڈے پر بات ہوئی،وزیراعظم نے کورونا وباء پر قابو پانے کے حوالے سے کابینہ کو اعتماد میں لیا،پاکستان میں 1865 کورونا وبا کے کیسز رجسٹرہوئے،منگل کے دن تک 25 افراد کی کورونا سے اموات ہو چکی ہے،58افراد کورونا سے صحت یاب ہو چکے ہیں،کورونا وباء پر قابو پانے کیلئے وزیراعظم نے 2 پرانگ سٹریٹجی اپنانے کو کہا،کابینہ اجلاس میں چاروں صوبوں میں گڈز ٹرانسپورٹ کھولنے کا فیصلہ ہوا،سندھ میں لاک ڈاو¿ن کی وجہ سے گڈز ٹرانسپورٹ کو مسائل کا سامنا ہے،وزیراعظم نے رینجرز کو سندھ میں گڈز ٹرانسپورٹ کے مسائل حل کرنے کی ہدایت کی،کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کے ساتھ صوبائی اور ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ کو حسن سلوک کی ہدایت کی گئی۔انہوں نے کہا کہ کابینہ نے باقاعدہ طور پر سکو ک بانڈز کی منظوری دی ہے ،سکوک بانڈز اسلامک بینکنگ کوفروغ دینے کیلئے بہت اہم ہے،سکوک بانڈز 3 سال کی مدت کیلئے جاری کیے جارہے ہیں،سکوک بانڈز کے اجراء سے لکویڈیٹی کی صورتحال میں بہتری آئے گی۔انہوں نے کہا کہ احساس پروگرام کے تحت ایک کروڑ 20 لاکھ افراد کو کیش ٹرانسفر کے بارے میں بریفنگ دی گئی،ڈاکٹر ثانیہ نشتر نےشفاف طریقے سے12 ہزار روپے کیش ٹرانسفر کے بارے بریف کیا۔انہوں نے کہا کہ کابینہ نے ای سی سی کے فیصلوں کی توثیق کر دی ہے،15بین الاقوامی پروٹوکول کنونشن کی منظوری دی گئی،بھٹہ مزدوروں کے بنیادی حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے کی ہدایت کی گئی،وزیراعظم نے ریلوے ،ایف بی آر ، پی آئی اے میں اصلاحات لانے کی ہدایت کی ہے،وزیراعظم نے اداروں میں ای گورننس کے فروغ کی ہدایت کی۔فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ وزیراعظم ریلیف فنڈ میں سب سے پہلے اپوزیشن لیڈر حصہ ڈالیں،آپ کا شمار ملک میں زیادہ اثاثے رکھنے والے خاندان میں ہوتا ہے،اپوزیشن لیڈر کورونا زدہ سوچ کو کورنٹائن کریں ،یہ وقت سیاست کرنے کا نہیں ہے،اپوزیشن لیڈر عوام کی بھلائی چاہتے ہیں تو کورونا ریلیف فنڈ میں اپنے اثاثوں کا کچھ حصہ عطیہ کریں،اپوزیشن لیڈر سیاسی مفاد کی عینک اتار کر عوامی مسائل کا حقیقی طور پر جائزہ لیں،اپوزیشن کورونا سے متعلق تجاویز دے ہم خوش آمدید کہیں گے،یہ وقت عوام کے ساتھ کھڑا ہونے کا ہے نہ کہ تنقید کرنےکا۔آٹے اور اشیائے ضروریہ کی ترسیل کیلئے نیشنل کوارڈینیشن کمیٹی کا اجلاس (آج)بدھ کو طلب کیا گیا ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*