ضلع پشین تاریخ سازتر قی کی راہ پر

رپورٹ:۔گل میرخان
َلیویز ڈیپارٹمنٹ جہاں عوام کو تحفظ فراہم کرتی ہے امن عامہ کی بحالی میں اہم کردار ادا کرتی ہے وہاں سماجی خدمت کے حوالے سے بھی لیویز فورس کے کردار کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا اب لوگوں میں بھی شعور پیدا ہوا ہے کہ انکے مسائل کا حل تھانوں اور لیویز سے رابطہ کرنے میں ہی ہے۔ لیویز کا رویہ لوگوں کے ساتھ انتہائی دوستانہ ہے اس کی نیک نامی میں جن افسران کا بہت بڑا کردار ہے ان میں ڈپٹی کمشنر میجر (ر) اورنگزیب بادینی بھی شامل ہیں۔ ان سے مل کر یہ احساس ہوتا ہے کہ وہ اچھے افسر ہی نہیں بلکہ اچھے انسان بھی ہیں ان میں وہ تمام اوصاف اور خوبیاں موجود ہیں جو ایک اچھے آفیسر میں ہوتی ہیں ان کے پاس صرف تجربات ہی نہیں بلکہ خلوص نیتسے کام کرنے کا جذبہ بھی ہے انہوں نے ہمیشہ اس بات کو مد نظر رکھ کر ڈیوٹی انجام دی ہے کہ صرف ڈیوٹی ہی نہ ہو بلکہ خدمت بھی ہو۔ ہم سمجھتے ہیں کہ اگر انتظامیہ اور لیویزمیں ہر فرد اور اہلکار اسی جذبے سے کام کرے تو مثبت نتائج حاصل کئے جاسکتے ہیں۔اورنگزیب بادینی شجاعت کا نمونہ بھی ہیں جرائم پیشہ عناصر کے خلاف کارواہیوں میں انہوں نے بڑی کامیابیاں حاصل کی ہیں۔ وہ لیویز کے محکمے میں مزید اصلاحات کے بھی خواہاں ہیں اور ان خرابیوں کو بھی دور کرنا چاہتے ہیں جن سے ماضی میں محکمے کی ساکھ متاثر ہوئی ہے یہ حقیقت ہے کہ آج لیویز کے محکمے کی عزت و منزلت میں اضافہ ہوا ہے اس کا کریڈیٹ ا ن جیسے افیسران کو جاتا ہے جنہوں نے ذاتی پسند و ناپسند اور مفاد ات سے بالا تر ہو کر محکمے کے مفادات کو ترجیح دی اور ہر معاملےمیں اپنی صلاحیتوں سے یہ ثابت کردیا کہ لیویز فورس کو عوام کی خدمت کی جو ذمہ داریاں سونپی گئی ہیں وہ ان پر پورا اترنے کے اہل ہیں انکے نزدیک صرف ایک ہی مقصددکھائی دیتا ہے کہ لوگوں کے مسائل حل کئے جائیں انہوںنے محکمے کو کام کے حوالے سے ایک نیا اسلوب عطا کیا ہے۔
انہوں نے جب سے چارج سنبھالا ہے جرائم کی وارداتوں میں کافی کمی دیکھنے کو ملی ہے انہوں نے ناصرف شہر بلکہ اطراف میں بھی جرائم پیشہ عناصر کیخلاف گھیرا تنگ کردیا ہے جرائم پیشہ اور مشکوک افراد ملک سلیم لہڑی کی نگاہوں سے بھی پوشیدہ نہیں رہ سکتے۔ ڈپٹی کمشنر پشین اورنگزیب بادینی کو پشین میں بطور ڈپٹی کمشنر کا چارج سنبھالے تقریباً ڈیڈھ سال کا عرصہ ہوچکا ہے لیکن اس کم عرصے میں انہوں نے جو علاقائی اور عوامی مسائل حل کئے ہیں ان میں حال ہی میں کمانڈر سدرن کمانڈ کی طرف سے ڈھائی ارب روپے کے پروجیکٹ پر کام شروع ہے۔ پشین ماڈل سٹی پروجیکٹ کے حوالے سے انہوں نے میڈیا کو بریفنگ بھی دی جس میں بتایا کہ وزیراعلیٰ بلوچستان اور ہیڈ کوارٹر سدرن کمانڈ بلوچستان سمیت ضلعی انتظامیہ کی خصوصی نگرانی سے پشین کے عوام کیلئے پروجیکٹ کی شکل میں ایک بڑا تحفہ دیا گیا ہے ۔
پروجیکٹ میں چار سو سے زائد دکانوں پر مشتمل وسیع مارکیٹ، سکول، مسجد، ہسپتال اور بس اسٹینڈ سمیت ٹیکسی اڈا، لمڑان روڈ کی 60 فٹ چوڑائی، بائی پاس پر دو کلو میٹر تک سولر لائٹس کی تنصیبات،جد ید طرز انتظار گاہ، جوگنگ ٹریک جبکہ صوبائی حکومت کی انتھک کوششوں سے پروچیکٹ میں بیس ایکڑ زمین پر سپورٹس کمپلیکس اور پشین بائی کی دوکلو میٹر چوڑائی کی اسکیم میں شامل کیا گیا ہے جبکہ بلوچستان رورل سپورٹ پروگرام کی جانب سے بھی علیحدہ سپورٹس کمپلیکس پروچیکٹ شامل ہے۔ اسکے علاوہ محکمہ کھیل کی جانب سے پروچیکٹ میں اسٹیڈیم کا قیام بھی شامل ہے۔
اسی طرح ”ماڈل ٹاو¿ن پشین“ پھل اور سبزی منڈی،تمام لائن ڈیپارٹمنٹس مشترکہ کمپلیکس کا قیام،کمشنر آفس/گھر،لیویز لائن، پٹوار سکول،سو فٹ کشادہ سڑک جس پر اپنی مدد آپکے تحت کام جاری ہے مذکورہ سڑک کلی کربلا اور حرمزئی کو ملاتے ہوئے ڈائریکٹ این ایچ اے سے جا ملے گا،جبکہ ساتھ ہی بس ٹرمینل، وغیرہ بھی ماڈل ٹاو¿ن پشین پروجیکٹ کا حصہ ہوں گے۔
اب دیکھا جائے تو پروجیکٹ پر کام تیزی سے جاری ہے جو جلد پایہ تکمیل کو پہنچے گا آئندہ تین ماہ کے اندر اند ر بس ٹرمینل اور دکانیں تعمیر ہونے کے بعد انکے حوالے کئے جائیں گے بہتر پلان کے ذریعے مذکورہ پروجیکٹ کے قریب علاقوں اور رہائشی اطراف سے راستے دیئے جائیں گے مذکورہ پروجیکٹ سے نہ صرف بے روز گار نوجوانوں کو روز گار کے بہترین مواقع بھی فراہم ہوں گے بلکہ ڈسٹرکٹ مزید ترقی کی راہ پر گامزن ہوگا۔پشین ماڈل سٹی پروچیکٹ کے علاوہ سرانان /ہیکلزئی /بٹے زئی روڈ پر بھی بیس ایکڑ کا ترقیاتی پروجیکٹ وزیر اعلیٰ بلوچستان نے منظور کیاہے پروچیکٹ میں فروٹ اینڈ ویجیٹبل مارکیٹ کا قیام شامل ہے اس کے علاوہ 5ایکڑ زمین ٹرک اڈہ کے لئے مختص کی جاچکی ہے جس پر جلد تعمیراتی کام شروع کردیا جائیگا۔ باوثوق ذرائع سے معلوم ہوا ہے ۔
کہ پشین میں ضلعی انتظامیہ کی پلان کردہ جاری مختلف ترقیاتی اسکیموںکا افتتاح وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کریں گے۔پشین میں جاری ترقیاتی کاموں سے نہ صرف پشین کی رونقیں بڑھیں گی بلکہ ڈسٹرکٹ کے نوجوانوں کو روزگار کے مواقع بھی فراہم ہوں گے۔ علاقے کے عوام کو پبلک لائبریری کی شکل میں بڑا تحفہ دیاگیا ہے۔ پانچ کمروں اور ہزار سے زائد کتابوں پر مشتمل پبلک لائبریری کا افتتاح کرکے ڈسٹرکٹ کے عوام کا دیرینہ مسئلہ حل کیا انہوں نے افتتاحی تقریب کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ”پبلک لائبریری کے قیام کا مقصد محققین،مورخین دانشوروں اور عوام الناس کی پشتو اور اردو زبان میں مطلوبہ تحقیقی مواد تک رسائی کو سہل بنانا ہے۔
کتاب انتہا پسندی سے لڑنے کا بہترین ہتھیار ہے ہمیں کتاب سے دوستی اپنانی ہوگی جدید دور میں بھی کتابوں کی اہمیت کبھی کم نہیں ہوسکتی ا±نکا مزید کہنا تھا کہ پبلک لائبریری کے قیام پر تقریباً پچیس لاکھ روپے لاگت آئی ہے کتاب کی اہمیت کو اجاگر کرنے اور مطالعے کی عادت کو اپنانے کیلئے طلبا ءآفیسران، ملازمین،نوجوان اور تعلیم یافتہ طبقہ کو مطالعے کے لئے لائبریری میں بہتر ین ماحول فراہم کررہے ہیں ڈسٹرکٹ کے طالبعلموں کیلئے ڈی سی پبلک لائبریری میں سی ایس ایس اور پی سی ایس کے سمینار ز بھی منعقد کرائے جائیں گے لائبریری کیلئے مزید اسلامک اور ادب سمیت کتابیں فراہم کریں گے“۔پشین میں عرصہ قدیم سے قائم ڈاگ بنگلہ کو آفیسرز کلب میں تبدیل کرکے آفیسرز میں پھیلی ہوئی بے چینی کا خاتمہ بھی کیاگیا ہے۔پشین چونکہ ایک وسیع اور گنجان آبادی پر مشتمل ضلع ہے ۔
جس کے پیش نظر یہاں آفیسرز کلب کا قیام وقت کی ضرورت تھی۔سال1908سے پشین میں قائم قدیم ڈاگ بنگلہ کو آفیسرز کلب میں تبدیل کرنا عوام اورآفیسرز کی ایک دیرینہ خواہش تھی جس کے تزہن و آراہش اور ٹیوب ویل سمیت تعمیرومرمت پر مجموعی طور پراپنی مدد آپ کے تحت26لاکھ روپے خرچ کردئیے گئے ہیں مزکورہ آفیسر ز کلب میں سنوکر، جیمزکلب،شطرنچ اور پلینگ کارڈز سمیت کئی گیمز کے سامان اور سہولیات مہیاءکردئیے ہیں جس سے آفیسروں کا ایک حد تک ٹائم پاس اوراچھی گیدرنگ ہوگی آفیسروں کو اب دور جانے کی ضرورت نہیں پڑے گی آفیسرز کلب تمام آفیسروں کا گھر ہوگا جہاں سب ایک فیملی کی طرح رہیں گے موسمیاتی تبدیلی سے پیدا ہونیوالے ممکنہ خطرات کے پیش پیش نظر شجر کاری مہم میں بھر پور حصہ لیا جا رہا ہے پلانٹ فارپاکستان ڈے کے موقع پر آفیسر ز کلب میں پودے لگاکر شجرکاری مہم کا افتتاح بھی کیا گیااسی طرح ضلع پشین میں مجموعی طور پر پچیس سو پودے لگا دئیے گئے جبکہ مہم کے اختتام تک ضلع پشین کو پینتیس ہزار پودے لگانے کا ہدف پورا کیا گیا۔ڈپٹی کمشنرکی سربراہی میں تمام لائن ڈیپارٹمنٹس کی ماہانہ جائزہ میٹنگ کا انعقادکیا گیا جس میں تمام محکموں کے آفیسران اور نمائندگان نے شرکت کی۔
منعقدہ لائن ڈیپارٹمنٹس کی ماہانہ جائزہ میٹنگ میں شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے انہوںنے کہا کہ میٹنگ کا بنیادی مقصد علاقے کے عام شہریوں کی فلاح و بہبود، سرکاری امور کی انجام دہی میں شفافیت اور خود احتسابی کو مزید بہتر بنانا ہے فرائض میں غفلت کسی صورت برداشت نہیں کی جائیگی سرکاری ملازمین اپنی حاضریوں کو یقینی بنا یں ورنہ سخت کارروائی کرنے پر مجبور ہوں گے محکمہ ایجوکیشن میں اس وقت غیر حاضر اساتذہ سے تقریباً ایک کروڑ ساٹھ لاکھ روپے کٹوتی کی گئی ہے ۔
منعقدہ اجلاس میں اب تک کئے گئے ڈسٹرکٹ میں ترقیاتی کاموں اور انسداد پولیو مہم کے حوالے سے تفصیلی بحث بھی کی گئی ڈپٹی کمشنر کا کہنا تھا کہ اب عملی طور پر کام کرنا ہوں گے جو کام نہیں کریں گے انہیں فارغ کردیا جائیگا پولیو کے خاتمے کیلئے سب نے ملکر کام کرنا ہے پولیو کے قطرے نہ دینا کارسرکار میں مداخلت ہے جو تمام سرکاری ملازم اپنے بچوں کو پولیو سے بچاو¿ کے قطرے ضرور پلائیں ۔ گزشتہ دنوں منفی پروپیگنڈہ ہوا کہ خسرہ کے انجکشن سے بچوں کی ہلاکت ہوئی ہے انکا مقصد مستقل میں پولیو مہم کو کا ناکام بنانا تھی امن وامان کی صورتحال کو مزید بہتر بنانے کیلئے اس وقت ڈسٹرکٹ میں لیویزاور ایف سی سرگرم عمل ہیں۔
انہوں نے بتایا کہ”ماڈل ٹاو¿ن پشین“ کے پروجیکٹ میں ڈسٹرکٹ کے تمام لائن ڈیپارٹمنٹس کیلئے بٹے زئی میں زمین مختص کی گئی ہے جس میں ہر ڈیپارٹمنٹ کو دس دس ہزار فٹ زمین دی جائے گی۔بڑھتی آبادی اور بے لگام ٹریفک کے پیش نظر پشین سٹی بائی پاس کی نئی تعمیر اور مزید وسیع کرنے سے متعلق ٹینڈر ہو چکے ہیںجس پر جلد باقاعدہ کام شروع کردیا ۔
پشین میں منشیات کے عادی افراد کو منشیات جیسی ناسور سے دور رکھنے کیلئے منشیات سینٹر کا قیام بھی زیر غور ہے گزشتہ دنوں سب جیل پشین کا دورہ کیاقیدیوں کے کئی مسائلموقع پرحل کرکے سردی سے بچاو کیلئے گرم کمبل اور پانی کے کولرز سمیت کئی ضروریات کے سامان قیدیوں میں تقسیم کئے۔قیدیوں کو اس مو قع پر انہوں نے کہا کہ انہیں کرائم اور ہر سماج دشمن اقدام سے دور رہنا ہوگا کیونکہ دور جدید میں ہم سب کو ترقی کی طرف جانے کی اشد ضرورت ہے۔
گزشتہ دنوں انہوں نے ڈی سی کمپلیکس میں معذور افراد میں تقسیم ویل چیئرز کی ایک تقریب میں معذور افراد میں ویل چیئرز وغیرہ تقسیم کئے معذور افراد سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ انسان بہت قیمتی ہے ہمیں بلاتعصب انسانیت کی خدمت کو ترجیح دینی ہوگی۔اسی طرح پشین کی تاریخ میں پہلی بار ڈپٹی کمشنر کی جانب سے براہ راست میچ دیکھنے کیلئے بڑی اسکرین کا اہتمام کیا گیا۔
وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کی خصوصی ہدایت پرانہوں نے ڈسٹرکٹ میں کرکٹ کے شائقین اور کھلاڑیوں کیلئے تاج لالا فٹ بال اسٹیڈیم میں پی ایس ایل کی براہ راست میچ کیلئے بڑی سکرین نصب کیا اس سے قبل پشین کے باچا خان چوک پر بھی سکرین نصب کیا گیا۔ انکی اولین ترجیحات میں قبضہ مافیا اور غیر قانونی تجاوزات کیخلاف جاری آپریشن کا کامیابی سے سامنا کرنا ہے۔ ڈسٹرکٹ پشین ایک دیہات نہیں بلکہ بلوچستان کا تیسرا بڑا شہر ہے 38برسوں سے شہر میں جتنے بھی الاٹمنٹ ہوئے ہیں وہ غیر قانونی ہیں۔ میونسپل کمیٹی کو نہ صرف اپنے حدود میں بلکہ ریونیو کی زمینوں کو بھی پٹے پر دینے کے اختیارات نہیں ریونیو کی زمینوں پر قبضہ جما کر دکانیں اور بلڈنگ تعمیر کرکے دکاندار جو کچھ کمارہے ہیں انکے لئے وہ سب حرام ہیں۔
انہوں نے گزشتہ روز کلی ملک یار میں واقع ندی نالوں میں طغیانی اور پانی کے بہاو¿ زیادہ ہونے کی وجہ سیلابی پانی سے متاثرہ علاقے کا دورہ کرکے صورتحال کا تفصیلی جائزہ لیا جہاں انہوں نے موقع پر محکمہ ایریگیشن اور میونسپل کمیٹی کے عملے کو مشینری سمیت طلب کرلیا اور صورتحال سے فوری نمٹنے کی ہدایت کی ۔اس کے علاوہ ڈپٹی کمشنر آزادی صحافت پر بھی مکمل رکھتے ہیں ”پشین میڈیا ہاو¿س“ کے قیام پر انکا کہنا تھا کہ حق بات کو حق طریقے سے پہنچانا صحافی کی اہم ذمہ داری ہے کسی بھی ملک کا میڈیا ا±س ملک کے معاشرے کی اصلاح کرتا ہے صحافی کا کردار معاشرے اور اس میں ہونیوالے واقعات پر گہری نظر رکھنا اور ان کی خبریں عوام تک پہنچانا ہے میڈیا کے ذریعے ہم کسی بھی ملک کے معاشی حالات کو یکسر تبدیل کرسکتے ہیں اور اس کے صحیح استعمال سے ہم معاشرے میں تبدیلی لاسکتے ہیں۔
پاکستان میں الیکٹرونک اور پرنٹ میڈیا صحیح معنوں میں ریڈھ کی ہڈی جیسی حیثیت رکھتی ہیں سوشل میڈیا ایک ایسا آلہ ہے جو لوگوں کو اظہارِ ر ائے،تبادلہ خیال، تصویر اور ویڈیوز شیئر کرنیکی اجازت دیتی ہے جسکی مقبولیت میں تیزی سے اضافہ ہوتا جارہا ہے سوشل میڈیا سے اچھے مقاصد بھی سرانجام دیئے جاسکتے ہیں۔ان ترقیاتی منصوبوں کی تکمیل اور انتظامیہ کی مخلصانہ کوششوں سے ضلع پشین،گرد و نواح کے علاقے بہت جلد جدید شہروں کی بازی لے جاہیںگے۔یہ تمام کام تاریخی و مثالی اہمیت کے حامل ہیں۔
٭٭٭٭٭٭٭

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*