چین نے 4ہزار کرپٹ وزرا ءکو جیل بھیجا کاش میں 500افرادکو بھیج سکتا،عمران خان

BEIJING: Prime Minister Imran Khan addressing

بیجنگ(آئی این پی ) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ چین نے 4ہزار وزرا کو کرپشن کے الزام میں جیل بھیجا، کاش میں 500افراد کو جیل بھیج سکتا،پاکستان میں امن و امان کی صورتحال بہتر ہوئی ہے،موجودہ وقت چین سے سیکھنے کا ہے،ملک میں سرمایہ کاری نہ آنے کی بڑی وجہ کرپشن ہے، چینی صدر نے کرپشن کیلئے جنگ کی،، سی پیک کے تحت گوادر پورٹ کا پہلا مرحلہ مکمل ہوچکا ہے، مسائل کے حل کےلئے سی پیک اتھارٹی قائم کی گئی ہے، چینی وکرز کے تحفظ کےلئے خصوصی فورس بنائی گئی ہے، حکومت اسپیشل اکنامک زونز پر توجہ دے رہی ہے، پاکستان چاہتا ہے کہ چین کوئلے اور سونے کی صنعت میں بھی سرمایہ کاری کرے، پاکستان کو اس وقت ایک کروڑ گھروں کی ضرورت ہے،ہاوسنگ شعبے میں چین کے تعاون کے خواہش مندہیں۔چائنہ کونسل فار پروموشن آف انٹرنیشنل ٹریڈ میں تقریب سے خطاب کے دوران وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ چین کے 70ویں قومی دن پر چینی عوام کو مبارکباد پیش کرتا ہوں، چین دنیا میں تیز ترین ترقی کرنے والا ملک ہے، چین نے 30سال میں70کروڑ افراد کو غربت سے نکالا ہے، پاکستان کو سیکھنے کی ضرورت ہے کہ چین لوگوں کو غربت سے کیسے نکالا ۔ وزیراعظم نے کہا کہ کرپشن ملکوں کی ترقی میں بڑی رکاوٹ بنتی ہے، چین نے کرپشن کے خلاف کامیابی حاصل کی ہے، چین نے کرپشن میں ملوث 400وزراءکو جیلوں میں بھیجا اور کسی بھی ملک میں سرمایہ کاری نہ آنے کی وجہ کرپشن ہے جبکہ پاکستان میں کرپشن پر قابو پانے میں کچھ وقت لگے گا۔ انہوں نے کہا جکہ چین کی کمیونسٹ پارٹی کی کامیابیوں سے سیکھ رہے ہیں جبکہ ترقی کےلئے میرٹ کی پالیسی اپنانا ہو گی، وزیراعظم نے کہا کہ کاروبار آسان بنانے اور سرمایہ کاری کے سازگار ماحول کےلئے اقدامات کئے جا رہے ہیں، اس حوالے سے چائنا پاکستان اکنامک کوریڈور کے مسائل کے حل کےلئے سی پیک اتھارٹی قائم کی گئی ہے جہاں براہ رسات سرمایہ کاروں کو پاکستان میں مواقع کی فراہمی میں وزیراعظم آفس اقدامات کر رہا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ گوادر سمارٹ ماسٹر پلان سٹی کی منظوری دی جا چکی ہے اور گوادر بندرگاہ سی پیک منصوبے کی بنیاد ہے، پاکستان کے اسٹرٹیجک محل وقوع کی وجہ سے سرمایہ کار پاکستان آئیں گے، پاکستان کی آبادی کا 60فیصد نوجوانوں پر مشتمل ہے اور موجودہ حکومت سرمایہ کاری میں اضافے کےلئے معاشی اصلاحات لا رہی ہے اور معاشی اصلاحات کے پیش نظر سرمایہ کار پاکستان میں دلچسپی لے رہے ہیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ چینی سرمایہ کاروں کو ہر قسم کی سہولتیں فراہم کریں گے اور مینو فیکچرنگ ، انفارمیشن ٹیکنالوجی میں سرمایہ کاری کے مواقع ہیں، پاکستان ایک زرعی ملک ہے اور پاکستان میں بہترین کاٹن کی پیداوار کی جاتی ہے، زراعت کے شعبے میں وسیع سرمایہ کاری لانا پاکستان کی موجودہ حکومت کا ٹارگٹ ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان میں سیاحت کے شعبے میں وسیع مواقع موجود ہیں جبکہ ہماری حکومت ملک میں مذہبی سیاحت کے فروغ کےلئے بھی اقدامات کر رہی ہے جبکہ تیل و گیس اور ہاﺅسنگ کے شعبہ میں سرمایہ کاری کو سراہیں گے، وزیراعظم نے کہا کہ سیکیورٹی ایجنسیوں اور پاک فوج کی لازوال قربانیوں سے پاکستان میں سیکیورٹی صورتحال بہتر ہوئی ہے اور اب لوگ آسانی سے اور محفوظ ہو کر اپنا کاروبار کر سکتے ہیں جبکہ خصوصی طور پر سی پیک میں کام کرنے والے چینی شہریوں کےلئے سپیشل فورس قائم کی گئی ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ بیرون ممالک سے سرمایہ کاروں کےلءویزہ جاری کرنے میں بھی سہولتیں پیدا کی گئی ہیں جبکہ چین کے ساتھ اگلے فیز میں فری ٹریڈ کا معاہدہ کر رہے ہیں اور 70ممالک کےلئے ایئرپورٹ پر ویزہ کی سہولیات بھی فراہم کر دی گئی ہیں، عمران خان نے کہا کہ چاہتے ہیں کہ سرمایہ کار پاکستان آکر پیسہ کمائیں جبکہ پاکستان میں لوگوں کو گھروں کی شدید کمی کا سامنا ہے، ہماری حکومت پانچ سال میں پچاس لاکھ گھروں سے منصوبے پر کام کررہی ہے جبکہ پاکستان میں سونے اور تانبے کے وسیع ذخائر موجود ہیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان سرمایہ کاروں کے لئے محفوظ ترین ملک ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*