ملک کی مشرقی اور مغربی سرحدوں پر فائرنگ،پاک فوج کے 5جوان اور ایک خاتون شہید،7زخمی

راولپنڈی/نکیال/مظفر آباد/میران شاہ/دیر (اے این این ) ملک کی مشرقی اور مغربی سرحدوں پر فائرنگ،پاک فوج کے 5جوان اور ایک خاتون شہید،دو دہشتگرد بھی مارے گئے،ایک جوان زخمی ۔تفصیلات کے مطابق پاکستان کی مشرقی سرحد پر بھارتی فوج کی جانب سے ایک بار پھر لائن آف کنٹرول(ایل او سی)پر سیز فائر کی خلاف ورزی کی گئی جس میں پاک فوج کا ایک جوان اور 40 سالہ خاتون شہید ہوگئی۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ(آئی ایس پی آر)کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا کہ بھارتی فوج کی فائرنگ سے حولدار ناصر حسین شہید ہوا۔آئی ایس پی آر کے مطابق حوالدار ناصر حسین 16 سال سے پاک فوج میں خدمات سر انجام دے رہے تھے اور شہید کا تعلق نارووال سے تھا۔آئی ایس پی آر نے بتایا کہ لائن آف کنٹرول پر نکیال اور جنڈروٹ سیکٹر میں بھی بھارتی فوج کی جانب سے اشتعال انگیزی کا سلسلہ جاری ہے۔ بھارتی فوج کی شہری آبادی پر بلااشتعال فائرنگ سے 40 سالہ خاتون فاطمہ بی بی شہید اور 6 افراد زخمی ہوگئے۔آئی ایس پی آر کے مطابق بھارتی فوج کی فائرنگ سے زخمی ہونے والے 6 افراد میں 4 خواتین شامل ہیں جبکہ زخمیوں کو طبی امدادی کیلئے قریبی اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ شہید ہونے والی خاتون فاطمہ بی بی کا تعلق گاو¿ں بالاکوٹ سے تھا۔خیال رہے کہ دو روز قبل بھی بھارتی فوج کی ایل او سی پر حاجی پیر سیکٹر میں بلا اشتعال فائرنگ سے پاک فوج کا سپاہی غلام رسول شہید ہو گیا تھا۔باغ میں یونین کونسل بھیڈی سیکٹر درہ حاجی پیر پر بھارت کی درندہ صفت فوج کی جانب سے بلا اشتعال شدید فائرنگ سے خواجہ مشتاق احمد ولد خواجہ غلام محی الدین کے مکان کی چھت پر دو گولے لگنے سے چھت کی تقریباً 50جستی چادریں چھلنی ہو گئیں ۔ 200گیلن کے 2واٹر ٹینکس ، دیواریں بھی چھلنی ، خواجہ بانڈی ، بیاڑاں کی آبادی والے علاقے میں سینکڑون مارٹر گولے مارے گئے ۔ لوگوں کے کچے مکانات کو نقصان ہوا۔ آبادی محصور ہو کر رہ گئی ۔ گھروں کے قریب مورچے نہ ہونے کے باعث عوام ہجرت کرنے پر مجبور ۔ کئی خاندانوں نے مجبوراً ہجرت کر لی ہے ۔دریں اثناءادھر مغربی سرحد پر دہشت گردوں کی جانب سے فائرنگ کے دو واقعات میں پاک فوج کے 4 جوان شہید اور ایک زخمی ہوگیا۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ(آئی ایس پی آر)کے مطابق شمالی وزیرستان میں ابا خیل، اسپن وام کے قریب سیکیورٹی فورسز پر شرپسندوں نے فائرنگ کی جس کے نتیجے میں پاک فوج کا سپاہی اختر حسین شہید ہوگیا جب کہ فورسز کی جوابی کارروائی میں دو شرپسند ہلاک ہوگئے۔آئی ایس پی آر کا بتانا ہےکہ شہید سپاہی اختر حسین کا تعلق ضلع بلتستان سے تھا اور ان کی عمر 23 سال تھی۔آئی ایس پی آر کے مطابق دوسرا واقعہ پاک افغان سرحد پر پیش آیا جہاں خاردار باڑ لگانے میں مصروف فوجیوں پر دہشت گردوں نے فائرنگ کی جس کے نتیجے میں پاک فوج کے تین سپاہی شہید اور ایک زخمی ہوگیا۔شہید ہونے والوں میں 28 سالہ لانس نائیک سید امین آفریدی، 31 سالہ لانس نائیک محمد شعیب اور 22 سال سپاہی کاشف علی شامل ہیں۔آئی ایس پی آر کے مطابق لانس نائیک سید امین آفریدی کا تعلق ضلع خیبر، لانس نائیک محمد شعیب سواتی کا تعلق ضلع مانسہرہ اور سپاہی کاشف علی شہید کا تعلق ضلع نوشہرہ سے تھا۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے جمعے کی شب آخری لمحات میں پاک افغان سرحد پر طورخم بارڈر کا دورہ ملتوی کردیا تھا۔واضح رہے کہ سرحد پر باڑ لگانے کے دوران افغانستان میں موجود دہشت گردوں نے وقفے وقفے سے متعدد مرتبہ پاک فوج پر حملے کیے ہیں، جن میں کئی جوان شہید بھی ہوچکے ہیں۔رواں برس جولائی میں شمالی وزیرِستان میں پاک-افغان سرحد پر اپنے فرائض کی انجام دہی کے دوران سیکیورٹی اہلکاروں پر افغانستان کے سرحدی علاقے سے حملہ کیا گیا تھا، جس کے نتیجے میں 6 جوان شہید ہوگئے تھے۔اس سے قبل جون میں خیبرپختونخوا کے قبائلی علاقے باجوڑ اور بلوچستان کے علاقے قمر دین کاریز میں سرحد پار حملوں کے نتیجے میں 5 سیکیورٹی اہلکار زخمی ہوگئے جبکہ جوابی فائرنگ سے 6 دہشت گرد ہلاک ہوگئے تھے۔اپریل 2018 میں جنوبی پارہ چنار سے 25 کلومیڑ دور لوئر کرم ایجنسی کے علاقے لاقہ تیگا میں سرحد پار افغانستان کے علاقے سے فائرنگ کے نتیجے میں 2 فرنٹیئر کانسٹیبلری(ایف سی)اہلکار شہید اور 5 زخمی ہو گئے تھے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*