اشتہارات کی منصفانہ اور میرٹ پر تقسیم

گزشتہ روز وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے بلوچستان ڈیلی نیوز پیپر یڈیٹرز کونسل کے ایک وفد سے بات چیت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اشتہارات کی منصفانہ اور میرٹ کے مطابق تقسیم کو یقینی بنایا جائےگااور اخبارات پر لاگو بی آر اے ٹیکس کے استثنیٰ کا معاملہ کابینہ میں پیش کرکے اسے حل کیا جائےگا چیئرمین سینیٹ کی تحریک عدم اعتماد کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ چیئرمین سینیٹ کے خلاف عدم اعتماد ناکام بنا کر درحقیقت بلوچستان کے اندر سازش پیدا کرنے کی کوشش کو ناکام بنایا انہوں نے وضاحت کی کہ سینیٹ کے حوالے سے ہارس ٹریڈنگ کی باتیں فرضی ہیں ۔
وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کا مذکورہ بیان قابل غور ہے انہوں نے اخبارات کو اشتہارات کی منصفانہ اور میرٹ کے مطابق تقسیم کی بات کرکے ایک اہم ایشو کو اجاگر کیا ہے کیونکہ اس وقت صوبے سے نکلنے والے اکثر اخبارات کو اشتہار کی تقسیم منصفانہ نہیں ہورہی ہے جس کی وجہ سے وہ شدید مالی مشکلات کا شکار ہیں ان میں صوبے سے نکلنے والے مقامی اخبارات بھی شامل ہیں جن کے باقاعدہ دفاتر اور سٹاف وغیرہ موجود ہیں اس لئے اس سلسلے میں ان پر خصوصی توجہ دینے کی اشد ضرورت ہے کیونکہ اکثر اشتہارات مقامی اخبارات کو ملنے کی بجائے دیگر صوبوں کے اخبارات کو بھی ملتے ہیں جوکہ یقینا مقامی اخبارات کی حق تلفی کے مترادف اقدام ہے ۔
ہم سمجھتے ہیں کہ وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان صوبے سے نکلنے والے اخبارات خصوصاً قدیم اخبارات سے بخوبی ہم واقف ہیں اس لئے امید کرتے ہیں کہ وہ اس سلسلے میں ایک بہترین فیصلہ کرینگے جوکہ مقامی اخبارات کے بہتر مفاد میں ہوگا۔
جہاں تک اخبارات پر لاگو بی آر آے ٹیکس کا معاملہ ہے تو اس سلسلے میں یہ وضاحت کرنی ضروری ہے کہ یہ ٹیکس صرف بلوچستان میں لاگو ہے جبکہ ملک کے دیگر صوبے اس سے مستثنیٰ ہیں اس لئے یہاں ضرورت اس امر کی ہے کہ اس اہم مسئلے پر بھی خصوصی توجہ دیتے ہوئے اسے حل کیا جائے صوبے کے مقامی اخبارات کو اشتہارات کی منصفانہ اور میرٹ پر تقسیم سے صوبے کی واحد انڈسٹری مالی بحران سے نکل سکے گی چونکہ بلوچستان میں صنعتیں اور دیگر پرائیویٹ سیکٹر نہ ہونے کے برابر ہیں اس لئے اس واحد انڈسٹری کا تمام دارومدار سرکاری اشتہارات پر ہے اگر ان کی منصفانہ تقسیم نہیں ہوگی تو یہ اور ان سے منسلک افراد کاروزگار متاثر ہوگا۔
امید ہے کہ وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان اپنی بھر پور صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے اسے سلسلے میں احسن اقدامات کرینگے صوبے کی اس انڈسٹری کو دوبارہ اپنے پاﺅں پر کھڑا کرنے میں اہم کردار ادا کرکے ان اداروں اور ان سے منسلک لوگوں کے معاشی بحران کا مسئلہ حل کرینگے کیونکہ جیسا کہ اوپر درج کیا جاچکا ہے وہ تمام معاملات سے بخوبی آگاہ نہیں اور ان کو حل کرنے کی بھر پور صلاحیت رکھتے ہیں ۔
جہاں تک چیئرمین سینیٹ کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی کامیابی کی بات ہے تو یہ بلوچستان کی بہت بڑی جیت ہے جو بی اے پی کے سربراہ اور وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کی صلاحیتوں سے بری طرح ناکام ہوئی ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*