میں نہ صرف جھالاوان بلکہ پورے بلوچستان کے شہدا کا وارث ہوں ،نواب زہری

خضدار(این این آئی)مسلم لیگ (ن) کے مرکزی رہنما سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان چیف آف جھالاوان ورکن ِ بلوچستان اسمبلی نواب ثناءاللہ خان زہری خضدار میں شہدائے زہری کی چھٹی برسی جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہاہے کہ میں نہ صرف جھالاوان بلکہ پورے بلوچستان کے شہداءکا وارث ہوں ، جس وقت مشکل اور کٹھن حالات تھے تو ہم نے قربانی بھی دی اور اس سرزمین کو آگ کی تپش سے محفوظ رکھا ، شہدائے زہری نے بہادری کا مظاہرہ کرکے بلوچستان میں پاکستان کا سبز ہِلالی پرچم بلند کیئے رکھا اور ہمیشہ کے لئے امر ہوگئے ، جھالاوان عظیم سپوتوں کی سرزمین ہے یہاں دلیر اورعظیم قربانی دینے والے پیدا ہوئے ہیں ،مجھے فخر حاصل ہے کہ میں سینہ سپر کرنے والے بہادرشہداءکا والی وارث ہوں ، موجودہ صوبائی اور وفاقی حکومتوں نے تو پوری قوم کو شرمادیا ، یہ حکومت کرنے کے ابجد سے بھی واقف نہیں ہیں ،گزشتہ چند ماہ کے دوران عوام کو جیتے جی مارنے کے سواءانہوںنے کچھ بھی نہیں کیا ، وزیراعظم پاکستان کو یہ بات ملحوظِ خاطررکھنا چاہیئے کہ وہ مسلم لیگ (ن) کی قیادت کو دیوار سے لگانے کے جو حربے استعمال کررہے ہیں اس پر انہیں فکر مند رہنا چاہیئے کل کو وہ اپنے کیئے کے انجام کو برداشت کرسکے ، سیاسی لوگوں کے لئے اس طرح کی قیدو بند توانائی کا کام کرتے ہیں ،موجودہ صوبائی حکومت نے بلوچستان کو جام کرکے رکھ دیا ہے ، پی ایس ڈی پی روکے جانے سے عوام کی تعمیر و ترقی نہیں ہورہی ہے بلکہ عوام کی حالت مذید ابترہوتی جارہی ہے ، ان خیالات کا اظہار انہوںنے خلقِ جھالاوان خضدار میں شہدائے زہری میر سکندر زہری ، میر زیب زہری ، میر مہر اللہ زہری کی چھٹی برسی جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ جلسہ عام میں خضدار اور سکند رآباد کے تمام علاقوں سے لوگوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی تھی اور پورا پنڈال عوام سے کچھا کچھ بھر اہوا تھا ۔ تلاوت کی سعادت قاری غلام اللہ اور نعت رسول مقبول کی سعادت محمد ارشد نے حاصل کی جلسہ عام کے دوران شہدائے زہری سمیت بلوچستان و ملک بھر کے شہداءکے لئے دعاءفاتحہ خوانی کی گئی ، مولانا سید شجاع الحق شاہ ہاشمی نے آخری دعاءکرائی ، جلسہ عام سے دیگر مقررین مسلم لیگ(ن) چمن کے رہنماءعبدالمنان اچکزئی ،نیشنل پارٹی کے رہنماءمیر محمد آصف جمالدینی مسلم لیگ (ن) خضدار کے رہنماءمیر عبدالرحمان زہری ، جنر ل سیکریٹری عطاءاللہ موسیانی ، بی اے پی کے رہنماءرئیس جاوید سوز مینگل ، عبداللہ آزادجے یوآئی نظریاتی کے رہنماءمولانا عبدالغفور کرخی ، مولانا عبدالحکیم محمد زئی عطاءاللہ موسیانی ، جمعہ خان شکرانی ، عبداللہ آزاد ، شکیل احمد ، منیراحمد قمبرانی ، عید محمد ایڈوکیٹ سمیت دیگر مقررین نے خطاب کیا ۔جلسہ عام میں قبائلی شخصیت میر ظفراللہ خان ساسولی ،وڈیرہ محمد فاروق جاموٹ ،میر عبدالواحد ہارونی، سید یعقوب شاہ ،میر فیصل زہری ، میر محمد یوسف زہری ،میر محمد اقبال زہری ،چیف حاجی محمد نور زہری ، چیئرمین عبدالحی زہری ، نصراللہ شاہوانی ،عبدالجبار زہری ، میر فدا قلندرانی ، حاجی رحمت اللہ زہری ،ارباب علی زہری ،حاجی عزیز محمد جام زہری ودیگر قبائلی عمائدین و زعماءکی کثیر تعداد موجود تھی ۔ چیف آف جھالاوان نواب ثناءاللہ خان زہری نے خطا ب کرتے ہوئے کہاکہ آج شہدائے زہری کی چھٹی برسی منائی جارہی ہے ، آج ہی کے دن چھ سال قبل میرے فرزند شہید سکندرزہری ، بھائی میر مہراللہ زہری ، بھتیجا میر زیب زہری نے حالات کی پرواہ کیئے بغیرسینہ سپر ہو کر شہادت قبول کی ، اور اپنے آپ کو ڈھال بنا کر اس وطن عزیز کا پرچم بلوچستان میں سرنگونہیں ہونے دیا ،شہید کبھی مرتے نہیں ہیں شہید زندہ ہوتے ہیں اوروہ آج بھی زندہ اور جاوداں ہیں ، ان کی فکر سوچ قربانی اور شہادت آج ایک تحریک بن چکی ہے اور یہ آگے بڑھ رہی ہے ، یہ تحریک سیاسی جدوجہد کی صورت میں عوام کو حوصلہ دے رہی ہے ، میں اس بات پر فخر محسوس کرتا ہوں کہ میں شہداءکا والی وارث ہوں ، اور میں اپنے آپ کو پورے بلوچستان کے شہداءکا وارث کہتا ہوں انہوںنے کہاکہ شہداءکی یہ قربانی ہمیشہ یاد رکھیں جائیں گی ، انہیں پتہ تھا کہ بلوچستان اس وقت مخدوش صورتحال سے دوچار ہے ، اس کے باوجود وہ عوام کے درمیان آئے اور شہادت کو قبول کیا ، سابق وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثناءاللہ خان زہری نے کہاکہ موجودہ حکومتیں جس طرح عوام کا استحصال کرکے عوام کے پیسے کو روکے رکھی ہیں وہ باعث حیرت اور افسوسناک بھی ہے ، صوبائی حکومت عوام کا پیسہ عوام پر خرچ کرنے سے کتراررہی ہے وجہ معلوم نہیں ہے کہ ان کے ہاتھ کیوں بندھے ہوئے ہیں۔یہ صرف عوام کا نہیں بلکہ اپنا بھی نقصان کررہے ہیںان میں قیادت اور اہلیت ہے نہیں ان کی حکومت بھی اسی طرح جام ہو کر رہ گئی ہے ، حکومتیں اس طرح نہیں چلتی ہیں ، حکمران اپنی مرضی کو ترجیح دینے کی بجائے عوام کی مرضی و منشاءکو فوقیت دیں ، انہوں نے کہاکہ ہماری طرزِ حکمرانی اس پورے بلوچستان کے لئے آئیڈیل ہے ہم نے علاقوں کو ترقی کے ذریعے اوپر اٹھادیا ، تمام اضلاع او رہیڈ کوارٹرز میں منصفانہ انداز میں تقسیم کیئے اور خرچ بھی کیئے ، عوام ان سے بھر پور استفادہ بھی حاصل کررہی ہے ، انہوںنے کہاکہ وفاقی حکومت اپنا ساراوقت انتقام اور دوسری جماعتوں کو نیچا دکھانے میں صرف کررہی ہے معاملات اس طرح چلا نہیں کرتی ہیں ، ملکی معیشت اور سرمائیہ کاری سے ان کو کوئی بھی سروکار نہیں ہے ، وفاقی حکومت مکمل طور پر ناکامی سے دوچار ہے ، عوام ان حکمرانوں کے خلاف بیزار ہوچکی ہے اور عوام اس انتظار میں ہیں کہ موجودہ حکمرانوں کے خلاف کوئی کال آئے تو وہ احتجاج کے لئے نکل جائیں ، وزیراعظم عمران خان دوسری جماعتوں کو اس حد تک دیوار سے لگادیں کہ پھر وہ اتنی سختی برداشت کرسکے ، مسلم لیگ (ن) ایک سیاسی جماعت ہے اور ہماری جماعت کے قائدین کے لئے قید وبند کی صعوبتیں کوئی معنی نہیں رکھتی ہیں بلکہ یہ سب ہمارے لے زینے کا کام کرتی ہیں تاہم عمران خان ایک غیر سیاسی شخص ہیں وہ کس طرح اپنے کیئے کے انجام کو برداشت کرسکے گا ۔مسلم لیگ (ن) کے قائدین و رہنماﺅں کی خاندانوں کے خلاف جو کیسز بنائے گئے ہیں ان کی ہم اس اجتماع کی توسط سے مذمت کرتے ہیں ۔شہدائے زہری کی چھٹی برسی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے عبدالمنان اچکزئی ، میر عبدالرحمن زہری ، آزاد ودیگر نے کہاکہ نواب ثناءاللہ خان زہری نہ صرف چیف آف جھالاوان ہیں بلکہ وہ پورے بلوچستان کے چیف ہیں ہم انہیں سلام پیش کرتے ہیں کہ انہوںنے اپنے خاندان کے افرادکی قربانی دی پھر بھی ان کی ہمت اور حوصلوں میں تزلزل نہیں آیا اور آج بھی وہ عوام کے درمیان کھڑی ہے ، انہوں نے کہاکہ سابق وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثناءاللہ خان زہری میں قیادت کرنے کی صلاحیت موجود ہے ، انہوںنے بلوچستان کے طرزِ حکمرانی کا جو فارمولا دیا اور جو منصوبے بنائے لوگ ان سے برسوں تک مستفید ہوسکیں گے ، عوام کی زندگی کے تمام شعبوں میں ترقی لانے کی کوشش کی گئی ، پسماندگی میں کمی لانے کے لئے اقدامات کیئے گئے ہیں ۔ آج بھی ایک حکومت قائم ہے اوریوں محسوس ہورہاہے کہ بلوچستان کے لوگ بغیر حکومت کے وقت گزار رہے ہیں ، ان میں نہ پیسے خرچ کرنے کی صلاحیت ہے اور نہ ہی یہ فارمولا بنا سکتے ہیں ، واٹس ایپ کے ذریعے حکومتی نہیں چل سکتی ہے اور جام حکومت واٹس ایپ کے ذریعے حکومت چلانے کی کوشش کررہی ہے ۔ نیشنل پارٹی کے سینئر رہنماءوضلع خضدار کے آرگنائزر میر محمد آصف جمالدینی نے کہاکہ موجودہ حکومت عوام کا استحصال کررہی ہے ان میں حکمرانی کرنے کا ڈھنگ ہے نہیں ، نہ یہ پلان مرتب کرسکتے ہیں اور نہ عوام کو سہولت دے سکتے ہیں ، گزشتہ دورِ حکومت کے دوران بلوچستان کے عوام کو سکون ملا جب یہاں امن قائم کیا گیا اور صوبے کو بدامنی سے نکالا گیا ، اور پھر ایک سازش کے تحت صوبائی حکومت کو ختم کردیا گیا ،ا نہوںنے کہاکہ نواب ثناءاللہ خان زہری چیف آف جھالاوان ہیں اور ان کی بے مثل قربانیاں یہاں کے عوام کے لئے ہیں ان کا بیٹا بھائی اور بھتیجا شہید ہوئے اور انہوںنے قربانی دی ۔جلسہ عام کے اختتام پر مولانا سید شجاع الحق شاہ ہاشمی نے دعاءکرائی ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*