کوئٹہ ہزار گنجی دھماکہ خود کش تھا جس میں 20افراد شہید اور 48زخمی ہوئے،میرضیاءاللہ لانگو

کوئٹہ (این این آئی)صوبائی وزیرداخلہ میر ضیاءاللہ لانگو نے کہا ہے کہ کوئٹہ ہزار گنجی دھماکہ خود کش تھا جس میں 20افراد شہید اور 48زخمی ہوئے ، دشمن مسلسل امن و امان کو خراب کرنا چاہتا ہے جسے ہم سکیورٹی اداروں کے ساتھ ملکر شکست دیں گے ، سیف سٹی منصوبے پر برق رفتاری کے ساتھ کام جاری ہے اسے جلد مکمل کریںگے ،امن و امان کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے اعلیٰ سطح اجلاس میں حکمت عملی طے کی جائےگی ، یہ بات انہوں نے جمعہ کو آفیسرز کلب کوئٹہ میں ہنگائی پریس کانفر نس کرتے ہوئے کہی ، اس موقع پر صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ مری ، ڈی آئی جی پولیس کوئٹہ عبدالرزاق چےمہ بھی انکے ہمراہ تھے، وزیرداخلہ میر ضیا ءاللہ لانگو نے کہا کہ جمعہ کی صبح ساڑھے سات بجے کے قریب ہزار گنجی کی فروٹ منڈی میں دھماکہ ہوا جس میں ایف سی اہلکار اورعام شہری زخمی اور شہید ہوئے ،اب تک دھماکے میں 20افراد شہید اور 48زخمی ہیں شہر کے سرکاری ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے،صوبائی وزراءکے ہمراہ مریضوں کی عیادت کے لئے گیا ہوں اب بھی کچھ زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے انہوں نے کہا کہ ہمارا چھپا ہوا دشمن ہمےشہ چھپ کروار کرتا ہے لیکن ہماری سکیورٹی فورسز نے ہمےشہ دہشتگروں کا مقابلہ کیا ہے اور انہیں شکست دی ہے ،ہم اپنے شہداءکے قاتلوں تک پہنچ کر انہیں کےفر کردار تک پہنچا ئےں گے،انہوں نے کہا کہ اندازہ ہے کہ دھماکے کا ہدف خاص کمیونٹی نہیں تھی اس میں دےگر لوگ بھی شہید ہوئے لیکن زیادہ تر ہزارہ برادری کے شہدا شامل ہیں پاکستان خطے کا اہم ملک بننے جا رہا ہے اسکے بہت سے دشمن ہیں جو بد امنی پھیلانا چاہتے ہیں انہوں نے کہا دہشتگردوں نے عوام اور فورسز کو نقصان پہنچایا ہے لیکن ہم نے کسی حد تک امن قائم کیا ہے اور اس حوالے سے آئندہ بھی کوششیں جاری رہیں گی ،انہوں نے کہا کہ ملک کسی حد تک پر امن ہے لیکن دشمن مسلسل کوشش کر رہا ہے کہ بدامنی پھیلائے لیکن ہم انکے عزائم کو ناکام بنائےں گے،ایک سوال کے جواب میں میر ضیاءلانگو نے کہا کہ وزیراعلیٰ کی ہدایت پر سیف سٹی منصوبے پر دےگر منصوبوں کی نسبت سب سے برق رفتاری سے کام جاری ہے یہ منصوبہ جلدمکمل ہوگا ، انہوں نے کہا کہ اعلیٰ سطح اجلاس بلا کر سکیورٹی کے حوالے سے حکمت عملی طے کریں گے،ایک سوال کے جواب میں انہوںنے کہا کہ بد امنی اور دہشتگردی کے واقعات کی پہلے سے پیش گوئی کرنا ممکن نہیں کبھی بھی کچھ بھی ہوسکتا ہے اس بات کی کوئی گرنٹی نہیں ہے کہ کب اور کہاں واقعہ رونما ہوگا لیکن ہمارے ادارے اپنا کام کر رہے ہیں آئندہ بھی اگر تھرٹ ہو ا تو عوام کو آگاہ کریں گے،انہوں نے کہا کہ واقعہ کے خلاف احتجاج کر نے والے بھی ہمارے بھائی ہیں ہم انکے غم میں شریک ہیں جس نے بھی معصوم لوگوں کو شہید کیا وہ ہمارا مشترکہ دشمن ہے ہم مظاہرین سے بات کر کے مسائلے کا حل نکالیں گے ،اس موقع پر بات چیت کرتے ہوئے ڈی آئی جی پولیس کوئٹہ عبدالرزاق چےمہ نے کہا کہ کوئٹہ میں سکیورٹی کی جنر ل تھرٹ ایشو ہوئی تھی ،لیکن اس مقام کے حوالے سے کوئی پیشگی اطلاع نہیں تھی پولیس نے ہزارہ برداری کے سبزی فروشوں کو مکمل سکیورٹی دی تھی لیکن یہ دھماکہ کھلے مقام پر ہوا جس کی وجہ سے بہت سے لوگ اسکا نشانہ بنے انہوں نے کہا کہ مارکیٹ کے عہداروں پر مارکیٹ کی صفائی اور کےمر ے لگانے پر زور دیں گے

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*