کلاسیکل گائیک اسد امانت علی کوبچھڑے 12برس بیت گئے

Ustad Amanat Ali

کراچی (شوبز نیوز)پٹیالہ گھرانے سے تعلق رکھنے والے کلاسیکل گائیک اسد امانت علی خان کو مداحوں سے بچھڑے بارہ برس بیت گئے۔موسیقی کا ہنستا بستا پٹیالہ گھرانہ آج بھی اپنے ہونہار اور سجیلے سپوت کے ذکر پر آبدیدہ ہو جاتا ہے اوراس گھرانے کے افراد یادوں میں اس کی شخصیت کے لمس کو محسوس کرتے ہیں۔نیم کلاسیکل گائیکی کے نمائندہ گلوکار اسد امانت علی خان 25 ستمبر 1955 کو لاہور میں پیدا ہوئے۔اسد امانت علی خان، استاد امانت علی خان کے صاحبزادے، استاد فتح علی، استاد حامد علی خان کے بھتیجے اورشفقت امانت علی خان کے بڑے بھائی تھے۔انہیں موسیقی کا فن اپنے والد امانت علی خان سے ورثے میں ملا لیکن انھوں نے اپنی شناخت علیحدہ سے منوائی۔اسد امانت علی خان نے اپنی گائیگی کا آغاز 10 سال کی عمر سے کیا اور ایف اے کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد موسیقی کو ہی پیشہ بنایا۔اسد امانت علی خان نے کلاسیکل موسیقی سے تعلق رکھنے والے خاندان میں چار چاند لگائے۔ اپنے والد استاد امانت علی کی وفات کے بعد انشا جی کی لکھی اور استاد امانت علی کی گائی غزل انشا جی اٹھو اب کوچ کرو گانے کے بعد اسد علی خان کو اولین شناخت اور مقبولیت حاصل ہوئی تاہم انہیں اصل شہرت عمراں لنگھیاں پباں بھار سے ملی ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*