صوبائی دا ر الحکومت کوئٹہ میںڈاکٹر ز کا احتجا ج

صوبائی دا ر الحکومت کوئٹہ میں ڈاکٹر ز ایکشن کمیٹی نے بلوچستا ن میں ڈاکٹر و ں پر ہو نے والے حملو ں اور تشد د کے واقعات کیخلاف صوبے بھر میں سرکاری اور پر ائیو یٹ ہسپتا لو ں میں او پی ڈی یز اور آ پر یشن تھیٹرز بند رکھنے کا اعلان کر دیا اس کے سا تھ سا تھ انہو ں نے مطا لبہ کیا ہے کہ ینگ ڈاکٹر ز ہا ﺅ س آ فیسر ز کے وظا ئف تنخو ا ہیں گذشتہ 6 ما ہ سے ادا نہیں کی گئیں فور ی ادا کی جا ئیں اور محکمہ صحت میں پی پی ایچ آئی کے عمل دخل کو ختم کر کے اختیا رات ضلعی منتظم صحت کو منتقل کئے جا ئیں۔
ڈاکٹر ز ایکشن کمیٹی کا بلوچستان بھر میںاو پی ڈ یز اور آپر یشن تھیڑ ز بند کا اعلان قا بل مذمت ہے اس سے بلوچستان کے عوام ایک با ر پھر رل جا ئیں گے ڈاکٹر ز کو ایسے اقدامات کرنے سے گر یز کر نا چا ہیئے جس سے عوام اور خصو صاً غر یب عوام شد ید مشکلا ت سے دو چا ر ہو ں ڈاکٹر ز جو مسیحا کا در جہ رکھتے ہیں اور اعلیٰ تعلیم یا فتہ طبقہ ہیں لیکن وہ اپنے مسا ئل کو ایشو بنا کر ہمیشہ ہڑ تا ل جیسے انتہا ئی حر بے کو استعما ل کر تے ہیں جو کسی بھی طر ح صحیح اقدام نہیں ہے۔
ڈاکٹرو ں پر ہو نے والے تشد د کے کے معاملے ہو ں یا پھر تنخو اہو ں اور اختیا رات کی با ت ہو یہ تو حکومت اور ڈاکٹر و ں کے ما بین معا ملا ت ہیں ان کی سز ا عوام کو دینا کسی بھی طر ح اچھی با ت نہیں ہے کیو نکہ عوام کو صحت کی سہو لیات فراہم کرنا حکومت کی اولین تر جی©حات میں شا مل ہے اس لیے حکومت کو اپنے ان فر ائض کو ہر صورت پورا کر نا چا ہیئے اس کے سا تھ سا تھ ڈاکٹر ز کو ت©حفظ فراہم اور ان کے جا ئز مطا لبا ت کو بھی پورا کرنے کے اقداما ت کرنے چا ہیئے لیکن یہا ں اس با ت کا بھی خیال رکھنا چا ہیئے کہ اگر ڈاکٹر ز کے عوام سے کوئی لڑ ائی جھگڑ ے ہو تے ہیں تو یہ ایسے بلا وجہ نہیں ہو تے ان کی کئی وجو ہات ہو سکتی ہیں جن میں ڈاکٹر ز بھی قصور وار ہو سکتے ہیں کیو نکہ عوام اکثر تنگ آکر ایسا اقدام اٹھا تے ہیں کیو نکہ ہما رے ڈاکٹر ز حضرات ان کے علا ج میں بھا ری فیسو ں اور دیگر چا رجز لیتے ہیں اور اس کے با و جو د اگر کسی کا مر یض ٹھیک نہ ہو تو وہ لڑ ائی جھگڑ ا جیسا اقدام کرنے پر مجبور ہو جا تا ہے اور اکثر اوقات مر یضو ں کے لو ا حقین سے بد تمیزی بھی کر تے ہیں اس لیے ان کو ڈاکٹر کی ڈگر ی کے سا تھ اخلا قیا ت کی کلا سز بھی لینی چا ہئیں اس کے علا وہ ڈاکٹر ز کے وظا ئف اور تنخو اہو ں کے با ر با ر مطا لبے بھی کسی بھی طر ح صحیح نہیں ہیں وہ ان کو جو از بنا کر اکثر ہڑ تا ل کر کے حکومت کو بلیک میل کر تے ہیں ©حا لا نکہ اگر اس کا صحیح معنو ں میں جا ئز ہ لیا جا ئے تو اکثر ڈاکٹر ز کی آمد نی اچھی خا صی ہو تی ہے لیکن اس کے با و جو د ایسے مطا لبے کرنا کسی بھی اچھا اقدام نہیں۔
اس لیے یہا ں ضرورت اس امر کی ہے کہ ڈاکٹر ز اور حکومت کو اپنے معا ملا ت با ہمی طور پر مل کر ©حل کرنے چا ہئیں ان کی سز ا عوام کو نہیں دینی چا ہیئے یہ تو کسی کی جان سے کھیلنے کے متر اد ف اقدام ہے جو کہ بہت ہی افسو سنا ک با ت ہے جس کاڈاکٹر ز کو احساس کر تے ہوئے اپنے آپ کو صحیح معنو ں میں مسیحا ہونے کا کردار ادا کر نا چا ہیئے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*