چند پیسوں کےلئے تعلیمی نظام کا بیڑا غرق کردیا ،چیف جسٹس ثاقب نثار

Chief Justice of Pakistan Mian Saqib Nisar

لاہور(آئی این پی ) چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے یونیورسٹی آف لاہور سمیت دیگر تمام یونیورسٹیوں میں فراہم سہولتوں پر انکوائری کا حکم دیتے ہوئے قانونی ماہر ظفراقبال اور ڈائریکٹر ایف آئی اے وقار عباسی پرمشتمل ٹیم تشکیل دے دی جو ایک ہفتے میں رپورٹ پیش کرے گی،چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ مجاہد کامران صاحب آپ کیس چکر میں پڑگئے ہیں، یہ وقت آپ کے پے بیک کا ہے، آپ کو اس عمر میں کتابیں لکھنی اور لیکچرز دینے چاہیئں، چند پیسوں کے لیے تعلیمی نظام کا بیڑا غرق کردیا، آپ کے کالجزاورایگزیکٹ میں کیا فرق رہ گیا،ہر تعلیمی ادارے کا سربراہ کہتا ہے ہمارا ادارہ بہتر ہے جب سروے کرایا جاتا ہے تو آوے کا آوا بگڑا ہوتا ہے۔ اتوار کو سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے نجی یونیورسٹیوں میں سہولتوں سے متعلق کیس کی سماعت کی۔عدالت نے یونیورسٹی آف لاہور سمیت دیگر تمام یونیورسٹیوں میں فراہم سہولتوں پر انکوائری کا حکم دیتے ہوئے قانونی ماہر ظفراقبال اور ڈائریکٹر ایف آئی اے وقار عباسی پرمشتمل ٹیم تشکیل دے دی جو ایک ہفتے میں رپورٹ پیش کرے گی۔چیف جسٹس نے دوران سماعت ریمارکس دیے کہ مجاہد کامران صاحب آپ کیس چکر میں پڑگئے ہیں، یہ وقت آپ کے پے بیک کا ہے، آپ کو اس عمر میں کتابیں لکھنی اور لیکچرز دینے چاہیئں۔کامران مجاہد نے کہا کہ میں تو ملازمت کررہا ہوں، چیف جسٹس نے کہا کہ چند پیسوں کے لیے تعلیمی نظام کا بیڑا غرق کردیا، آپ کے کالجزاورایگزیکٹ میں کیا فرق رہ گیا۔چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے کہا کہ گورنرپنجاب ، وزیراعلی یونیورسٹیوں کے چارٹرڈ سے متعلق کمیٹی تشکیل دیں۔انہوں نے ریمارکس دیے کہ ہر تعلیمی ادارے کا سربراہ کہتا ہے ہمارا ادارہ بہتر ہے جب سروے کرایا جاتا ہے تو آوے کا آوا بگڑا ہوتا ہے۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*