بلوچستان کے مفادات ہمیں سب سے بڑھ کر ہیں،جام کمال

Mir Jam Kamal Khan

گوادر(خ ن)وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے کہا ہے کہ بلوچستان محدود وسائل کا حامل صوبہ ہے اور ہماری مالی صورتحال اطمینان بخش نہیں ہے، ہم اپنے وسائل کو ترقی دے کر مالی استحکام حاصل کرنا چاہتے ہیں۔ بلوچستان کے مفادات ہمیں سب سے بڑھ کر ہیں، سرمایہ کار کمپنیوں سے بھرپور تعاون کیا جائے گا تاکہ سرمایہ کاری کے فروغ سے صوبے کو خودانحصاری کے راستے پر لے جایا جاسکے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گوادر پورٹ اتھارٹی اور چائنا اوورسیز پورٹ اینڈ ہولڈنگ کمپنی کے حکام سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ صوبے کے وسیع وعریض اراضی ہمارا بہت بڑا اثاثہ ہے اور ہم اس اثاثے کی ذریعہ اپنے وسائل اور آمدنی کو بڑھانا چاہتے ہیں جس کے لئے پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کی حوصلہ افزائی کی جائے گی، وزیراعلیٰ نے کہا کہ بلوچستان اور خاص طور سے گوادر میں کام کرنے والی کمپنیاں ہماری یوتھ کی ترقی اور مالی صورتحال کی بہتری کے لئے ہم سے معاونت اور ہماری رہنمائی کریں، انہوں نے کہا کہ ماضی میں منصوبہ بندی کے بغیر اراضی کا استعمال ہوا جس سے صوبے کو کوئی فائدہ نہیں پہنچا تاہم موجودہ حکومت اپنے تمام وسائل اور اثاثوں کے بھرپور لیکن محفوظ استعمال کو یقینی بناکر صوبے کی ترقی کے لئے بروئے کار لانا چاہتی ہے، اس موقع پر چیئرمین جی پی اے اور چینی حکام نے وزیراعلیٰ کے موقف سے اتفاق کرتے ہوئے اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلایا دریں اثناءوزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے کہا ہے کہ گوادر پورٹ بلوچستان کا قیمتی اثاثہ ہے ہم اپنے وسائل اور اثاثہ جات کو ملک اور صوبے کی ترقی کے لئے بروئے کار لائیں گے ان خیالات کا اظہار انہوں نے گوادر پورٹ میں واقع فری زون کے ریسکیو سینٹر میں منعقدہ گوادر ماربل اینڈ منرلز سیمینار اور نمائش کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا جس میں چین اور دیگردوست ممالک کے علاوہ بلوچستان اور ملک کے دیگر حصوں کی ماربل اور دیگر مصنوعات کے سٹال لگائے گئے ہیں، وفاقی وزیر محترمہ زبیدہ جلال، صوبائی وزیر میر ظہوربلیدی، سردار عبدالرحمن کھیتران، نصیب اللہ مری، نورمحمد دمڑ، عبدالر¶ف رند، عبدالخالق ہزارہ، اراکین صوبائی اسمبلی اکبر آسکانی اور میر حمل کلمتی بھی اس موقع پر موجود تھے۔ سیمینار کی افتتاحی تقریب سے اپنے خطاب میں وزیر اعلیٰ نے نمائش کے انعقاد کو صوبے کے معدنی وسائل کی اہمیت کو اجاگر کرنے کی جانب اہم پیش رفت قرار دیتے ہوئے کہا کہ بلوچستان ماربل سمیت دیگر قیمتی معدنی وسائل سے مالامال صوبہ ہے لیکن بدقسمتی سے ہم ابھی تک ان وسائل کو ترقی دے کر اپنے لوگوں کی فلاح و بہبود کے لئے استعمال میں نہیں لاسکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ماضی میں صرف کوئلے اور کرومائیٹ نکالے جاتے تھے تاہم جدید ٹیکنالوجی کے استعمال سے اب ماربل بھی نکالی جارہی ہے اور ہم ریکوڈک جیسے قیمتی معدنی ذخائر کے بھی مالک ہیں۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ صوبے کی معدنیات کی تلاش و ترقی کے لئے منرل زونز کا قیام ضروری ہے ، چینی حکام سے منرل زونز کو سی پیک میں شامل کرنے کے حوالے سے بات ہوئی ہے اور ہم وفاقی حکومت سے بھی رابطہ کرینگے۔ انہوں نے کہا کہ معدنی شعبہ میں سرمایہ کاری کے روشن امکانات موجود ہیں اور انہیں امید ہے کہ سیمینار کے شرکاءاس جانب ضروری توجہ دیں گے اور ہماری فعال بزنس کمیونٹی اس شعبہ میں سرمایہ کاری کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہم چینی کمپنیوں کے ساتھ مشترکہ طور پر صوبے کی معدنیات کے بارے میں ڈیٹا مرتب کرنے کا کام شروع کرینگے جسے سرمایہ کار کمپنیوں کے ساتھ شیئر کیا جائے گا، محکمہ معدنیات کو بھرپور طریقے سے فعال کیا جائے گا اور معدنیات کے شعبہ میں جدید ٹیکنالوجی کو متعارف کرایا جائے گا اور ہم اپنے خام معدنی وسائل سے مصنوعات کی تیاری کی صنعت کو بھی فروغ دیں گے، وزیر اعلیٰ نے کہا کہ گوادر پورٹ صوبے کے معدنی ذخائر کی برآمد کا بہترین ذریعہ ثابت ہوگی اور مقامی لوگوں کے معاشی ترقی ممکن ہوسکے گی، وزیراعلیٰ نے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ ہم مختلف شعبوں میں موجودہ ترقی کے امکانات کو دنیا کے سامنے لے کر آئیں اور انہیں سرمایہ کاری کی جانب راغب کریں، وزیراعلیٰ نے کہا کہ اب تک صوبے میں معدنیات کے شعبہ میں خاطر خواہ کام نہیںہوا ہے،اگر معدنی شعبہ صحیح معنوں میںترقی کرے تو بلوچستان میں کوئی بھی بے روزگار نہیں رہے گا، انہوں نے کہا کہ صوبے کے مختلف علاقوں میں کوئلہ اور کرومائٹ کے کاروبار میں معمولی سرمایہ کاری سے 40 سے خاندانوں کو روزگار ملتا ہے اور اگر سرمایہ کاری بڑے پیمانے پر ہو تو ہزاروں خاندانوں کے روزگار مل سکتاہے بلوچستان میں جدید منرل انڈسٹری کے قیام کی وسیع گنجائش موجود ہے وزیراعلیٰ نے کہا کہ ہمارے ملک اور صوبے کی معیشت کی بنیاد زراعت اور لائیواسٹاک ہے تاہم پانی کے مسئلہ کو حل نہ کیا گیا تو 45فیصد سے زائد لوگ بے روزگار ہوجائیں گے۔ ہمیں اس مسئلے کو سنجیدگی سے لینا ہوگا ورنہ بے روزگاری بہت بڑا خطرہ بن سکتی ہے گذشتہ 50سالوں میں ملک میں صرف ٹیکسٹائل کی صنعت کو ترقی ملی ہے لیکن اب دیگر شعبوں کی جانب توجہ دینے کی ضرورت ہے وزیراعلیٰ نے ماہی گیری کے شعبہ میں کیج فش فارمنگ کو متعارف کرانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے سرمایہ کاروں کو اس شعبہ میں سرمایہ کاری کرنے کی دعوت دی اور کہا کہ بلوچستان کے سمندر اس کےلئے انتہائی موزوں ہے انہوں نے کہا کہ ہمیں یقین ہے کہ جس طرح گوادر پورٹ ترقی کررہی ہے اس کا فائدہ مقامی لوگوں اور صوبے کو بھی پہنچے گا۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک ایک کامیاب منصوبہ ثابت ہوگا لیکن بلوچستان کو اس منصوبے کا فائدہ بھی پہنچے گا جب ہماری مقامی معیشت اس منصوبے سے منسلک ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ آج کا دور جدید ٹیکنالوجی اور انسانی وسائل کی ترقی کا ہے ، چینی حکومت اور کمپنیاں بلوچستان کے نوجوانوں کو مختصر مدت تربیتی کورسز کے انعقاد میں تعاون کریں تو نوجوانوں اور عوام کی اعتماد سازی بھی ہوگی اور روزگار کے مواقع بھی بڑھیں گے۔ سیمینار سے چینی کمپنیوں کے اعلیٰ عہدیداران چیئرمین پورٹ اتھارٹی، بلوچستان اکنامک فورم کے چیئرمین سردار شوکت پوپلزئی نے بھی خطاب کیا۔ بعدازاںوزیر اعلیٰ نے نمائش کا افتتاح کیا اور لگائے گئے سٹالوں کا معائنہ کیا۔ بعدازاں وزیر اعلیٰ کو ایک اجلاس کے دوران گوادر پورٹ اتھارٹی کے چیئرمین نے پورٹ سے متعلق بعض امور اور اراضی کے مسائل کے حوالے سے بریفنگ دی۔ وزیر اعلیٰ نے ہدایت کی کہ پورٹ اتھارٹی اور متعلقہ صوبائی حکام اجلاس منعقد کر کے ان امور پر اتفاق رائے پیدا کریں اور حتمی سفارشات حکومت پیش کی جائیں دریںاثناءوزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے پسنی کے غیرفعال ڈی سیلینیشن پلانٹ کے معائنہ کیا اور پلانٹ کی غیرفعال ہونے کی وجوہات کے بارے میںآگاہی حاصل کی، چیئرمین بی ڈی اے اکبر لاشاری نے وزیراعلیٰ کو اس حوالے سے بریفنگ دی۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ ناقص منصوبہ بندی کے باعث خطیر فنڈ سے مکمل ہونے والے پلانٹ سے عوام کو کوئی فائدہ نہیں پہنچ رہا جو عوام کے پیسوں کا ضیاع ہے۔ پلانٹ کی مشینری اور گاڑیاں استعمال نہ ہونے کے باعث زنگ آلود ہورہی ہے، وزیراعلیٰ نے کہا کہ وہ ایسے تمام منصوبوں کا خود معائنہ کریں گے جس پر خطیر رقم خرچ کی گئی لیکن عوام کو ان کا فائدہ نہیں پہنچ رہا ایسے منصوبوں کے ذمہ دار حکام کے خلاف کاروائی عمل میں لائی جائے گی، وزیراعلیٰ نے پلانٹ کی فعالی کے لئے اقدامات کرنے کی ہدایت کی دریں اثناءوزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے جمعہ کے روز گوادر پورٹ کا دورہ کیا، پورٹ پہنچنے پر گوادر پورٹ اتھارٹی کے چیئرمین دوستین جمالدینی، چائنا اوور سیز پورٹ اینڈ ہولڈنگ کمپنی کے چیئرمین با¶ژونگ اور دیگر حکام نے وزیراعلیٰ کا شاندار استقبال کیا۔ اس موقع پر وزیراعلیٰ کو پورٹ پر جاری تجارتی سرگرمیوں اور مجوزہ منصوبوں کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ پورٹ پر پانچ نئی بھاری کرینوں کی تنصیب سے بحری جہازوں پر سامان لادنے اور اتارنے کی استعداد کار میں اضافہ ہوا ہے اور اب گوادر پورٹ سالانہ ایک ملین کنٹینر ز ہینڈل کرسکتی ہے ، وزیراعلیٰ کو پورٹ اور فری زون میں بجلی اور پانی کی سہولتوں میں اضافے کے بارے میں بھی تفصیلات سے آگاہ کیا گیا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*