تازہ ترین

کرونا کے مریض اور انیستھزیا

ڈاکٹر محمد بابر رفیق
تا دمِ تحریر دنیا کورونا کی عفریت پر قابو پانے سے قاصر ہے- اس وبائ نے جہاں دیگر کاروبارِ زندگی کو م±عطل کردیا ہے وہیں پر صحت کے شعبے پر دوہرا اثر ڈالا ہے ایک تو یہ کہ اچانک ڈاکٹروں اور دیگر طبی عملہ کو ایک ایسی بیماری سے واسطہ پڑ گیا ہے کہ جس کا علاج دستیاب نہ ہونے کے ساتھ یہ خطرناک اور جان لیواءبیماری مریضوں سے معالجین میں بہت آسانی سےم±نتقل ہونے کا خطرہ ہے – حفاظتی لباس اور سامان جو اس سلسلے میں تحفظ فراہم کر سکتا ہے اس وقت تمام د±نیا اور خاص طور پر کم آمدنی والے م±مالک میں کمیاب ہے اور اس سلسلے میں عالمی ادارہ صحت بھی بے بس نظر آتا ہے- دوسری طرف کسی بھی مرض میں م±بتلا مریض جن کو طبی امداد کی اشد ضرورت ہو وہ اس وباء کے باعث ہسپتالوں تک پہنچنے سے قاصر ہیں اور اگر وہ کسی طرح سے ہسپتال پہنچ ہی جائیں تو بھی طبی عملہ شدید مصروفیت کے باعث ا±ن کو م±ناسب توجہ اور ضروری طبی امداد نہیں دے سکتا-
یہ وائرس م±نہ اور سانس کے ذریعے جسم سے خارج ہونے والے مرئی اور غیر مرئی قطروں کے ذریعے آسانی سے پھیلتا ہے- یوں تو تمام طبی عملہ ان قطروں/چھینٹوں کے باعث اس بیماری میں م±بتلا ہو سکتا ہے لیکن اینستھیزیا کا عملہ اور ڈاکٹر سب سے زیادہ اس خطرے کی زد میں ہیں- کیونکہ ان کے فرائض میں مصنوعی تنفس کے لیے سانس کی نالی ڈالنا اور وینٹی لیٹر کے ذریعے سانس کی ترسیل ہے- اس سارے عمل میں سانس اور م±نہ سے نکلنے والے چھینٹے بہت آسانی سے طبی امداد فراہم کرنے والے تک پہنچ سکتے ہیں-اور م±ناسب حفاظتی لباس اور آلات کی غیر موجودگی میں اینستھیزیا کے ڈاکٹر اس وائرس کا شکار ہو سکتے ہیں- اس کے علاوہ اگر وینٹی لیٹر پر ضروری حفاظتی آلات نصب نہ ہوں تو یہ وائرس اس کے اندر زندہ رہ کر بعد میں آنے والے مریضوں تک پہنچ سکتا ہے- اس سلسلے میں ضروری اور مکمل معلومات ہنگامی ب±نیادوں پر اینستھیزیا کے تمام ڈاکٹروں اور دیگرعملہ تک م±لک بھر میں پہنچانا بہت اہم ہے-
ماہرین کے م±طابق اس تربیت کو دو حصوں میں تقسیم کیا جا سکتا ہے:
1- حفاظتی لباس اور آلات
2- آپریشن تھیٹر اور وینٹی لیٹر کی حفاظت
حفاظتی لباس اور آلات:
1- وہ تمام عملہ جو کسی بھی لحاظ سے مریض کو طبی امداد فراہم کر رہا ہو ا±ن کے لیے ضروری حفاظتی لباس میں سب سے اہم م±نہ اور ناک پر پہنا جانے والا خاص ماسک “این ۹۵” کہلاتا ہے- اس ماسک کی خاص بات اس کے اندر موجود بہت ہی نفیس فلٹر ہے جو تمام وائرل پارٹیکلز کو سانس کے ذریعے جسم میں داخلے سے روکتا ہے- یہ ماسک مختلف سائز اور اشکال میں آتا ہے اور چہرے کی ساخت کے لحاظ سے اس کا انتخاب کیا جاتا ہے- چہرے پر داڑھی کے بال اس کی فٹننگ اور کارکردگی پر اثر انداز ہو سکتے ہیں- اس لیے اپنی جان کی حفاظت کے لیے وقتی طور پر داڑھی کو کاٹ لینے کی ضرورت پڑ سکتی ہے- اگر کسی بھی صورت میں این ۹۵ چہرے کی ساخت کے باعث استعمال نہ ہوسکتا ہو تو ا±س صورت میں “پی اے پی آر” نامی آلے کی ضرورت ہو گی- یہ آلہ مہنگا اور اور استعمال میں م±شکل ہے اور پاکستان میں اس کی دستیابی بھی یقینی نہیں ہے-
2- آنکھوں اور چہرے کو م±کمل طور پر ڈھانکنے والی شیلڈ کئی قسم کے ڈیزائن میں دستیاب ہے اور جو بھی ڈیزائین تمام عملہ کے لیے فراہم ہو سکے استعمال کی جا سکتی ہے-
3- گاو¿ن اور ہاتھوں کے دستانے حفاظتی لباس کا لازمی ج±رو ہیں اور بہتر ہے کہ دستانوں کی دو تہیں پہنی جائیں- اس تمام تیاری کو “ڈاننگ اور ڈوفنگ (Donning & Doffing)” کہا جاتا ہے- اس عمل کے لیے آپریشن تھیٹر میں ایک جگہ مخصوص کی جانی چاہیے- اور یو ٹیوب پر اس کی ہدایات فلم کی صورت میں موجود ہیں اور تمام عملہ کو لازماً ان کو مکمل توجہ سے ایک سے دو مرتبہ ضرور دیکھنا چاہیے- ذیل میں دستیاب سینکڑوں میں سے ایک ویڈیو کا لنک آپ کے سہولت کے لیے موجود ہے-
https://www.youtube.com/watchv=YzPUaWKpzdA
آپریشن تھیٹر اور وینٹی لیٹر کی حفاظت:
وہ تمام عملہ جو آپ کی مدد کے لیے آپریشن تھیٹر میں موجود ہو گا سب کے ساتھ مل کر تمام مراحل کے بارے میں تفصیل سے بات کی جائے تاکہ سب لوگوں کو آپ کے پلان کا علم ہو اور ٹیم کے تمام ممبرز کے لیے کام مختص ہوں تاکہ سب اپنا اپنا کردار ادا کر سکیں- اور مریض کو آپریشن تھیٹر میں لانے سے پہلے اس بات کا از سرِ نو یقین کر لیا جائے کہ تمام درکار دوائیاں اور اور آلات دستیاب اور استعمال کے لیے تیار ہیں-
1- وہ تمام عملہ جو کرونا وائرس کے مریض کو طبی امداد فراہم کر رہا ہو انہیں اپنا موبائل فون اور دیگر ذاتی اشیاءکو پہلے سے محفوظ کر دینا چاہیے تاکہ بھول کر بھی ان کو چھونے کا احتمال نہ رہے-
2- تمام وینٹی لیٹرز پر “ہیپا فلٹر” (HEPA) کی تنصیب لازمی ہے ورنہ کرونا وائرس مشین کے اندر زندہ رہ کر بعد میں آنے والے مریضوں میں م±نتقل ہو سکتا ہے- ہیپا فلٹر ایسے ذرات جو ۰.۳ ماہیکرون سے بڑے ہوں ا±ن کو ۹۹.۷ فی صد تک روکنے کی صلاحیت رکھتے ہیں- اس لیے اس فلٹر کی موجودگی وینٹی لیٹر کی حفاظت کے لیے ناگزیر ہے-
3- کرونا کے مریض کو جب بھی سانس کی نالی ڈالنا مقصود ہو تو یہ عمل ایسے آپریشن تھیٹر یا ہسپتال کے کمرہ میں کیا جانا لازم ہے جہاں پر ہوا کا نصب نظام “نیگیٹو پریشر “ والا ہو- اس طرح جو بھی جراثیم ہوا میں داخل ہوں وہ ا±س کمرے سے باہر نہیں جا سکتے اور دوسرے کمروں میں موجود عملہ اور مریض محفوظ رہیں گے- یہی ا±صول ایل ایم اے کے استعمال پر بھی لاگو ہو گا-
4- اگر آپریشن تھیٹر میں نیگیٹو پریشر والا ہوا کا نظام دستیاب نہ ہو تو ا±س صورت میں سانس کی نالی ڈالنے کے بعد آپریشن تھیٹر کا دروازہ پندرہ منٹ تک بند رکھا جائے تا کہ ہوا میں موجود مرئی اور غیر مرئی چھینٹے ختم ہو جائیں- یہی حفاظتی تدابیر سرجری کے اختتام پر سانس کی نالی کے نکالنے کے بعد بھی اِختیار کی جانی لازم ہیں- اور جیسے کہ پہلے ذکر کیا تھا یہی ا±صول ایل ایم اے پر بھی لاگو ہوتا ہے- دوسری جانب ایسے ہسپتال کے کمرے جہاں ہوا کی تبدیلی کا نظام موجود نہ ہوں وہاں ایسے مریض ہسپتال کے عملہ اور آلات کے لیے اور بھی خطرناک ہو سکتے ہیں- اس لیے کرونا وائرس کے شکار مریضوں کو مخصوص کمروں میں ہی رکھنا چاہیے-
5- آپریشن تھیٹر میں تمام وہ آلات جو اس سرجری میں استعمال نہیں ہونے ان کو کمرے سے باہر رکھ دیا جائے- اور اگر کسی وجہ سے ایسا ممکن نہیں تو ا±ن کو پلاسٹک سے ڈھانپ دینا ضروری ہے- کرونا کا وائرس دھاتی سطح پر ۳-۴ گھنٹے اور کاغذ، گتہ اور لکڑی وغیرہ چوبیس گھنٹے تک زندہ رہ سکتا ہے- اس لیے مریض کے آپریشن تھیٹر سے جانے کے بعد ہر چیز کو نہایت احتیاط سے جراثیم ک±ش سپرے اور وائپس سے صاف کرنا عملے کے تحفظ کے لیے لازم ہے-
6- اس وائرس کے پھیلاو¿ کے امکانات کو کم سے کم کرنے کے لیے مریض کو سرجری کے بعد ا±س وقت تک آپریشن تھیٹر میں ہی رکھا جائے جب تک وہ اپنے کمرے میں جانے کے قابل نہ ہو جائے- اس طرح کم لوگوں کا مریض سے سامنا ہو گا اور پھیلاو¿ کا امکان کم سے کم رہے گا- دورانِ ٹرانسپورٹ مریض کے م±نہ پر عام سرجیکل ماسک ہر وقت موجود رہنا چاہیے اور اگر آکسیجن کی ضرورت پڑنے کا امکان ہو تو مریض کو سانس کی نالی کے ساتھ ہی ا±س کے کمرے تک لے جا کر وہاں پر تمام حفاظتی تدابیر کے ساتھ سانس کی نالی نکالی جائے-
7- سرجری کے دوران ایک مددگار ہر وقت آپریشن تھیٹر کے باہر موجود رہنا چاہیے تا کہ وہ کسی بھی سازوسامان کی ضرورت کو پورا کرسکے-
8- سرجری کے بعد تمام عملہ حفاظتی لباس اور دوسرے آلات احتیاط سے ا±تار کر ضائع کریں تا کہ کسی بھی طرح کے پھیلاو¿ کا امکان کم سے کم ہو-
یہ چند احتیاطی تدابیر ہیں جن پر عمل کرنے سے عملہ اور دوسرے مریض اس م±تعدی مرض سے محفوظ رہ سکتے ہیں- کیونکہ حفاظتی انتظام ہی ایک ایسا ہتھیار ہے جو اس وقت دستیاب ہے- ہر ہسپتال کی انتظامیہ اور ڈاکٹروں کو ہر قسم کی صورتحال سے نپٹنے کے لیے پہلے سے منصوبہ بندی کر لینی چاہیے تاکہ وقت آنے پر بلا تامّل فوراً سب لوگ صورتحال کو آسانی سے سنبھال سکیں-
/٭٭٭٭٭٭

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*