تازہ ترین

وزیراعظم قومی اسمبلی سے اعتماد کاووٹ لیںگے ، پی ٹی آئی کا متفقہ فیصلہ

اسلام آباد (آئی این پی) وفاقی وزراءفواد چوہدری ،شفقت محمود،اسد عمر اور معاون خصوصی شہباز گل نے کہاہے پی ٹی آئی نے متفقہ فیصلہ کیاہے کہ وزیراعظم عمران خان قومی اسمبلی سے اعتماد کاووٹ لیںگے ، وزیراعظم کاکہناہے کہ میں وزیر اعظم تب ہوں جب مجھے ایوان کا اعتماد حاصل ہے، میں ایوان کو ایک بار پھر اپنی رائے کے اظہار کا موقع دیتا ہوں اس کے لئے ہم آئینی طریقہ کار اختیار کرینگے، علی حیدر گیلانی کی حرکتیں قوم کے سامنے ہیں ۔ جس طرح کی سیاست پیپلز پارٹی نے کی وہ کسی سے پوشیدہ نہیں ۔ الیکشن کمیشن کو اپنی ذمہ داری ادا کرنی چاہیے، آج کا دن پاکستان کی جمہوریت کے لئے افسوس ناک ہے ۔ جمہوریت کے علمبرداروں نے جمہوری قدروں کا قتل کیا۔بدھ کو وفاقی وزراءفواد چوہدری ،شفقت محمود،اسد عمر اور معاون خصوصی شہباز گل کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ علی حیدر گیلانی کی حرکتیں قوم کے سامنے ہیں ۔ جس طرح کی سیاست پیپلز پارٹی نے کی وہ کسی سے پوشیدہ نہیں ۔ الیکشن کمیشن کو اپنی ذمہ داری ادا کرنی چاہیے ۔ ہم نے الیکشن کمیشن سے ٹیکنالوجی کا سہارا لے کر شفاف انتخابات کو یقینی بنانے کا کہا یہاں لاکھوں بیلٹ پیپر پرنٹ نہیں کرنے تھے لیکن یہ بھی نہیں کیا گیا ۔ شاہ محمود نے کہا عمران خان نے حق اور باطل کی لڑائی شروع کی ہے ۔ سیاسی کلچر کو تبدیل کرنے کے لئے ہر سطح پر کوشش کی ۔ قوم دیکھ رہی ہے یہ لڑائی جاری ہے اور جاری رہے گی ۔ ظاہری طور پر یزیدی قوتوں کو کامیابی دکھائی دے سکتی ہے لیکن آخر کار فتح حق اور سچ کی ہو گی ۔ ضمیر کے سوداگروں کو ناکامی ہو گی ۔ آج کا دن پاکستان کی جمہوریت کے لئے افسوس ناک ہے ۔ جمہوریت کے علمبرداروں نے جمہوری قدروں کا قتل کیا ۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ عمران خان اور پی ٹی آئی نے متفقہ فیصلہ کیا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان اس ایوان سے اعتماد کا ووٹ لیں گے ۔ واضح ہو جائے گا کہ کون کہاں کھڑا ہے ۔ جو عمران خان کے ساتھ ہے وہ ایک طرف اور جنہیں اپوزیشن کا نظریہ پسند آگیا ہے وہ اپوزیشن کی صفوں میں شامل ہو جائیں ۔ ہم اپنے نظریہ پرکھڑے ہیں ۔ پی ٹی آئی کے کارکنوں کو اعتماد ہونا چاہیے کہ ہم اپوزیشن کا مقابلہ کرینگے ۔ یہ لوگ مقاصد اور بچاﺅ کی سیاست کرتے ہیں ۔ ہم اس سیاست کو دفن کرکے دم لیں گے ۔ سندھ کے دو ارکان اسمبلی نے کہا کہ ہم تحریک انصاف کے امیدوار کو ووٹ نہیں دیں گے تو باقیوں میں بھی یہ جرات ہونی چاہیے کہ کہہ سکیں کہ ہم نے نوٹ کو ووٹ دینا ہے ضمیر کو نہیں ۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ میں وزیر اعظم تب ہوں جب مجھے ایوان کا اعتماد حاصل ہے میں ایوان کو ایک بار پھر اپنی رائے کے اظہار کا موقع دیتا ہوں اس کے لئے ہم آئینی طریقہ کار اختیار کرینگے ۔ اس موقع پر وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ہم الیکشن کمیشن گئے اور کہا کہ بیلٹ پیپر میں کوئی ایسا طریقہ کار رکھا جائے کہ اگر بعد میں کوئی شکایت ہو تو اس کو دوبارہ دیکھا جا سکے ۔ انہوں نے کہا کہ ایوان سے اعتماد کا ووٹ اوپن ہو گا پتا چل جائے گا کون حق کے ساتھ ہے ، کس کا ضمیر بول رہا ہے اور پیسہ کس کا بول رہا ہے ۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*