تازہ ترین

اپوزیشن لاوارث قرار ، معیشت کا پہیہ چل پڑا ہے ، وزیر اطلاعات

اسلام آباد (این این آئی) وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز نے اپوزیشن کو لاوارث قرار دیتے ہوئے کہاہے کہ معیشت کا پہیہ چل پڑا ہے ،اپوزیشن اس کو اپنی موت سمجھ رہی ہے، وزیراعظم کے اعتماد کے ووٹ اور سینیٹ چیئرمین کے انتخاب میں انہیں ہزیمت کا سامنا کرنا پڑا،استعفوں اور لانگ مارچ پر ان میں اختلافات سامنے آئے،ن لیگ نے پیپلز پارٹی کی پیٹھ میں چھرا گھونپا اور پیپلز پارٹی نے فضل الرحمان کی پیٹھ میں چھرا گھونپا جبکہ وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے (ن)لیگی رہنما میاں جاوید لطیف کے بیان پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ نوازشریف اور الطاف حسین کی ٹریننگ ایک ہی کوکھ سے ہوئی ہے ،ہم کسی کو غداری کا سرٹیفکیٹ نہیں دے رہے، جاوید لطیف کی اپنی کوئی سوچ نہیں،جاوید لطیف شطرنج کا مہرہ ہے، جو الطاف حسین بننا چاہ رہے ہیں وہ انجام سے واقف رہیں،مریم کو لندن جانے نہیں دیں گے، پہلے ابو بچاو¿ مہم تھی اب مجھے لندن جانے دو ہے،لانگ مارچ کرکے میثاق جمہوریت کی بھی مخالف کریں گے، انتخابی اصلاحات اور قانون سازی کے معاملے پر اپوزیشن کے ساتھ بیٹھنے کےلئے تیار ہیں ،کیسز پر مذاکرات نہیں ہونگے ، ہم آپ کو جیل نہیں بھیجنا چاہتے ، آپ پیسے واپس کریں پھر جہاں چاہیں رہیں ۔وفاقی وزیر اطلاعات سینیٹر شبلی فراز اور وفاقی وزیر فواد چوہدری نے اتوار پی آئی ڈی میں پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے ۔وفاقی وزیر اطلاعات نے کہاکہ کرونا وبا کی شدت ایک بار پھر بڑھ رہی ہے ،3ہزار سے زائد کیسز ریکارڈ کئے جارہے ہیں،وبا کی گزشتہ لہر میں حکومت کی حکمت عملی بہت کامیاب رہی۔ انہوںنے کہاکہ وزیراعظم نے کہا تھا جانوں اور روزگار دونوں کو بچانا ہے، وبا کے بعد ہماری معیشیت دوبارہ چل پڑی ہے۔انہوںنے کہاکہ وزیراعظم نے کہا ہے وبا کے دوران احتیاطی تدابیر اختیار کی جائیں، دنیا بھر میں اس وبا کا دوبارہ زور اٹھا ہے،پاکستان میں ویکسینیشن کا عمل جاری ہے۔ وزیر اطلاعات نے کہاکہ ہیلتھ ورکرز کے بعد بزرگ شہریوں کو اب ویکسین لگائی جارہی ہے، پنجاب میں ویکسینیشن کی بہترین مہم چل رہی ہے۔ انہوںنے کہاکہ امید ہے باقی صوبے بھی پنجاب کی تقلید کریں گے، لوگوں کو تکلیف دیے بنا ان کی ویکسینیشن کررہے ہیں، ملک میں استحکام آچکا ہے، کاروبار چلنا شروع ہوگئے ہیں، انشاءاللہ معیشت اور صحت منظم طریقے سے چلیں گے۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ یہ کٹھن مرحلہ ہے عوام سے احتیاط کی گزارش ہے،شہریوں سے درخواست ہے ماسک کا استعمال کریں۔ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات شبلی فراز نے اپوزیشن کو لاوارث قرار دےتے ہوئے کہاکہ اپوزیشن کا پہلا فیز مکمل طور پر ناکام ہوا، وزیراعظم کے اعتماد کے ووٹ اور سینیٹ چیئرمین کے انتخاب میں انہیں ہزیمت کا سامنا کرنا پڑا، انہوںنے کہاکہ معیشت کا پہیہ چل پڑا اپوزیشن اس کو اپنی موت سمجھ رہی ہے۔ اس موقع پر وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے مسلم لیگ (ن) کے رہنما میاں جاوید لطیف کے بیان کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہاکہ جاوید لطیف کے بیان پر تحریک انصاف احتجاج کررہی ہے۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ پاکستان کھپے پاکستان زندہ باد نعرہ ہر پاکستانی کا ہے، جاوید لطیف کے بیان سے ہر پاکستانی کا دل دکھا ہے، نوازشریف اور الطاف حسین کی ٹریننگ ایک ہی کوکھ سے ہوئی۔فواد چودھری نے کہاکہ یہ سیاسی لوگ ہیں نہ ہی اس کا سیاسی وژن ہے۔ انہوںنے کہاکہ جاوید لطیف صاحب اس نعمت پر اللہ کا شکر ادا کریں۔ فواد چوہدری نے کہاکہ الیکشن میں ہار جیت ہوتی رہتی ہے، ہم کسی کو غداری کا سرٹیفکیٹ نہیں دے رہے، جاوید لطیف کی اپنی کوئی سوچ نہیں،جاوید لطیف شطرنج کا مہرہ ہے۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ جو الطاف حسین بننا چاہ رہے ہیں وہ انجام سے واقف رہیں، الطاف حسین بھی واپس نہیں آرہا آپ بھی نہیں آرہے۔ انہوںنے واضح کیا کہ مریم کو لندن جانے نہیں دیں گے،پہلے ابو بچاو¿ مہم تھی اب مجھے لندن جانے دو ہے۔ وفاقی وزیر نے مسلم لیگ (ن)پرتنقید کرتے ہوئے کہاکہ ان کی انقلابی سوچ یہی ہے پیسے ہمارے پاس رہنے دو، یا آپ پاکستان کے پیسے واپس کریں یا جیل کاٹیں، جاوید لطیف سے جو کروایا گیا وہ افسوسناک ہے ،پوری پاکستان کو اس پر غصہ ہے،۔ انہوںنے کہاکہ سینیٹ انتخابات کےلئے الیکٹورل ریفارمز کی کوشش کرتے رہے، ہم نے ان کے چارٹر آف ڈیموکریسی کے مطابق اوپن بیلٹنگ کی کوشش کی، الیکشن کمیشن نے اپنا کردار ادا نہیں کیا، وزیراعظم نے کہا ایسے لگتا ہے بکرا منڈی لگی ہوئی ہے، الیکشن کمیشن ٹیکنالوجی استعمال کرکے اس پریکٹس کو ختم کرسکتی تھی، الیکشن کمیشن نے ہماری بات سنی مگر عمل نہیں کیا۔ فواد چوہدری نے کہاکہ میثاق جمہوریت میں ہے ہم مینڈیٹ کا احترام کریں گے، لانگ مارچ کرکے یہ میثاق جمہوریت کی بھی مخالف کریں گے۔ انہوںنے کہاکہ وزیراعلیٰ سندھ پیسے لے کر کہتے ہیں میں وفاق کو جوابدہ نہیں، میثاق جمہوریت میں صرف لوٹ مار والی شقوں پر انہوں نے عملدرآمد کیا، زرداری صاحب نے چاروں صوبوں کی جماعت کو صرف سندھ کی جماعت بنا دیا، بینظیر اور بھٹو کے وژن کو انہوں نے ختم کردیا، اس وقت ملک میں وفاق کی واحد جماعت تحریک انصاف ہے، انہوںنے کہاکہ یہ ہمارے ساتھ بیٹھیں اصلاحات پر بات کرتے ہیں، مستقبل کے انتخابات کو شفاف بنانے پر بات کرتے ہیں، اپوزیشن کے کیسز پر مزاکرات نہیں ہوسکتے۔ انہوںنے کہاکہ ہم آپ کو جیل بھیجنا نہیں چاہتے، آپ پیسے واپس کردیں پھر جہاں چاہیں رہیں۔ فواد چوہدری نے کہاکہ بلاول اور مریم کا پاکستان میں سیاست کا کوئی تجربہ نہیں، سینئر قیادت آگے آئے ۔ وزیر اطلاعات نے کہاکہ پی ڈی ایم میں پھوٹ پڑ چکی ہے، عبدالغفور حیدری کے ووٹ دیکھیں مولانا کو دیگر اپوزیشن جماعتوں نے مسترد کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ان کے استعفوں کے معاملے پر مختلف بیانات ہیں، ان کے تابوت میں آخری کیل ٹھونک دی گئی ہے۔ وزیر اطلاعات نے کہاکہ پی ڈی ایم ایسا اکٹھ ہے جس کا کوئی جوڑ نہیں،استعفوں اور لانگ مارچ پر ان میں اختلافات سامنے آئے۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ ن لیگ نے پیپلز پارٹی کی پیٹھ میں چھرا گھونپا اور پیپلز پارٹی نے فضل الرحمان کی پیٹھ میں چھرا گھونپا۔ ایک سوال پر وزیر اطلاعات نے کہاکہ صحافی بھی فرنٹ لائن ورکرز ہیں، صحافیوں کو ویکسینیشن کے لیے وزیر صحت سے بات کی ہے۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ ویکسین کی جو اگلی کھیپ آئے گی اس میں تیزی سے ویکسینیشن لگائی جائے گی۔ فواد چوہدری نے کہاکہ وزیراعظم ہمیشہ احتساب کا نعرہ لگاتے ہیں۔ ایک سوال پر فواد چوہدری نے کہاکہ مصدق ملک اور مصطفی نواز کھوکھر نے سی سی ٹی وی کی وائرنگ نکال دی، مصدق ملک اور مصطفی نواز کو 54 ہزار روپے کا بل بھیج رہے ہیں۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*