تازہ ترین

اسٹاک مارکیٹ میں بدترین مندی ،سرمایہ کاروں کو 3کھرب50ارب92کروڑ36لاکھ روپے کا نقصان

Stock

کراچی (کامرس ڈیسک)پاکستان اسٹاک ایکس چینج میںبدھ کو بدترین کاروباری مندی ریکارڈکی گئی اور کرونا وائرس کے معاشی نقصانات کے پیش نظر سرمایہ کاروں کی جانب سے مارکیٹ سے سرمایہ نکالنے کا زبردست دباو¿ دیکھنے میں آیا اس کے علاوہ اسٹیٹ بینک کی جانب سے توقعات کے برعکس شرح سود میں صرف0.75فیصد کمی کی وجہ سے بھی سرمایہ کاروں کو مایوسی کا سامنا کرنا پڑا جب کہ موڈیز نے پاکستانی معاشی ترقی کے تخمینے میں کمی کردی ہے جس کے باعث 8روز میں5 ویں مرتبہ اسٹاک مارکیٹ کریش کرگئی اور ایک بار پھر کاورباری سرگرمیاں 45منٹ کے لئے روکنی پڑی تاہم وقفے کے بعد بھی شدید مندی کا رجحان برقرار رہا جس کے نتیجے میںکے ایس ای100انڈیکس32ہزاراور31ہزار کی نفسیاتی حدوں سے بھی ہاتھ دھو بیٹھا اور انڈیکس6.75فیصد گرتے ہوئے 2ہزار200پوائنٹس کی کمی سے30416.05پوائنٹس کی نچلی سطح پر آگیا اسی طرح کے ایس ای30انڈیکس1071.95پوائنٹس کی کمی سے 13249.13پوائنٹس اور کے ایس ای آل شیئرز انڈیکس1279.91پوائنٹس کی کمی سے21968.43پوائنٹس پر بند ہوا۔گزشتہ روزشدید مندی کے باعث363کمپنیوں کے حصص کا کاروبار ہوا جن میں سے 336کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں کمی ریکارڈ کی گئی اور صرف 20کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں اضافہ ہوا اور 7کی قیمتوں میں استحکام رہا.بیشتر کمپنیوں کے حصص کی قیمتیں گرنے کے باعث سرمایہ کاروں کو 3کھرب50ارب92کروڑ36لاکھ روپے کا نقصان اٹھانا پڑا جس کے سبب مارکیٹ کی سرمایہ کاری مالیت بھی62کھرب33ارب31کروڑ68لاکھ روپے سے گھٹ کر58کھرب82ارب39کروڑ32لاکھ روپے ہوگئی ۔کاروباری حجم بھی18کروڑ66لاکھ54ہزار شیئرز رہا جو منگل کے مقابلے میں22.35فیصدکم رہا ۔گزشتہ روزقیمتوں میں اتارچڑھاو¿ کے حساب سے سیپ ہائرٹیکس کے حصص کی قیمت 59.62روپے کے اضافے سے868.99روپے اورای ایف یو انشورنس کے حصص کی قیمت13.02روپے اضافے سے193.96روپے ہوگئی۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*